اپنے الفاظ و معانی سے نکل آیا ہے

اکرم جاذب

اپنے الفاظ و معانی سے نکل آیا ہے

اکرم جاذب

MORE BY اکرم جاذب

    اپنے الفاظ و معانی سے نکل آیا ہے

    وہ کہانی کی روانی سے نکل آیا ہے

    کھینچ لائی ہے ہمیں چاندنی شب میں خوشبو

    سانپ بھی رات کی رانی سے نکل آیا ہے

    خود کو روپوش کیا کتنے ہی کرداروں میں

    پھر بھی فن کار کہانی سے نکل آیا ہے

    جاگ اٹھی ہے تڑپ دور چلے جانے سے

    راستہ نقل مکانی سے نکل آیا ہے

    پھوٹ بہنے لگے ٹھوکر سے پھپھولے دل کے

    درد احساس کے پانی سے نکل آیا ہے

    تجربے باندھ کے گٹھڑی میں رکھے کاندھوں پر

    اک بڑھاپا بھی جوانی سے نکل آیا ہے

    حکمتیں فکر و تدبر میں رکھی ہیں جاذبؔ

    فلسفہ شعلہ بیانی سے نکل آیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites