اشک الم ہے سوزش پنہاں لئے ہوئے

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

اشک الم ہے سوزش پنہاں لئے ہوئے

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

MORE BY کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

    اشک الم ہے سوزش پنہاں لئے ہوئے

    قطرہ ہے اپنے ظرف میں طوفاں لئے ہوئے

    پیدا کریں گے عشق سے ہم خود علاج عشق

    بیٹھے رہیں وہ درد کا درماں لئے ہوئے

    ہے تیری بخششوں کا یقیں بے گماں مگر

    ہم ہیں ملال تنگئ داماں لئے ہوئے

    عشرت کی وادیوں سے گزرتا چلا گیا

    پیہم فریب عمر گریزاں لئے ہوئے

    وہ پیکر حجاب یہاں آئے کس طرح

    ہم ہیں ہجوم حسرت و ارماں لیے ہوئے

    یہ کون آ رہا ہے سر شام اے سحرؔ

    چہرے پہ نور صبح بہاراں لئے ہوئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites