بدلے میں جفاؤں کے وفا کیوں نہیں دیتے

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

بدلے میں جفاؤں کے وفا کیوں نہیں دیتے

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

MORE BY کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

    بدلے میں جفاؤں کے وفا کیوں نہیں دیتے

    تم عشق کے شعلوں کو ہوا کیوں نہیں دیتے

    معدوم اگر ہو تو کہاں ڈھونڈھنے جائیں

    موجود اگر ہو تو پتا کیوں نہیں دیتے

    حیرت ہے کہ اس دور کدورت کے سلاطیں

    ہم اہل محبت کو سزا کیوں نہیں دیتے

    ملتی ہے گناہوں کی سزا حشر میں لیکن

    ناکردہ گناہوں کی جزا کیوں نہیں دیتے

    کب تک اے سحرؔ ضبط کا آزار سہو گے

    جو بات ہے وہ اس کو بتا کیوں نہیں دیتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites