بسوں پر تبسم تو آنکھوں میں پانی

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

بسوں پر تبسم تو آنکھوں میں پانی

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

MORE BY کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

    بسوں پر تبسم تو آنکھوں میں پانی

    یہی ہے یہی دل جلوں کی نشانی

    تری بے رخی اور تری مہربانی

    یہی موت ہے اور یہی زندگانی

    وہی اک فسانہ وہی اک کہانی

    جوانی جوانی جوانی جوانی

    نہ اب وہ مسرت نہ وہ شادمانی

    دریغا جوانی دریغا جوانی

    محبت ہی ہے اصل میں جاودانی

    بڑھاپا بھی فانی جوانی بھی فانی

    عطا کر مجھے وہ مقام محبت

    کرے حسن خود عشق کی پاسبانی

    بتاؤں ہے کیا آنسوؤں کی حقیقت

    جو سمجھو تو سب کچھ نہ سمجھو تو پانی

    زمیں سے تعلق نہ رشتہ فلک سے

    مصیبت ہے گویا بلند آشیانی

    سحرؔ اس جہان بہار خزاں میں

    خوشی دائمی ہے نہ غم جاودانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites