بوئے گل کھینچے نہ گلشن میں گل تر کھینچے

جاوید منظر

بوئے گل کھینچے نہ گلشن میں گل تر کھینچے

جاوید منظر

MORE BY جاوید منظر

    بوئے گل کھینچے نہ گلشن میں گل تر کھینچے

    شوق دیدار ترا ہم کو ہے در در کھینچے

    تو مجھے چاہے مگر میں تجھے چاہوں کیسے

    بات جب ہے مرا دل بھی ترا پیکر کھینچے

    میں کہ منزل کا طلب گار نہ سمتوں کا اسیر

    تو کہ دریا جسے ہر لمحہ سمندر کھینچے

    جبر کے ساتھ عبادت میں مزا کیا ہوگا

    شوق سے لاکھ ہمیں مسجد و منبر کھینچے

    کب رہی تیری تمنا دم رخصت مجھ کو

    کوئی بھی روح کو اس جسم سے باہر کھینچے

    ایک ہی پل میں سمٹ جائے سفر صدیوں کا

    یوں نگاہوں میں قیامت کا وہ منظر کھینچے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites