اک خواب مسلسل تھا کہ کھلتا ہی نہیں تھا

امت بجاج

اک خواب مسلسل تھا کہ کھلتا ہی نہیں تھا

امت بجاج

MORE BY امت بجاج

    اک خواب مسلسل تھا کہ کھلتا ہی نہیں تھا

    کیا پیڑ تھا جس کا کوئی سایہ ہی نہیں تھا

    وہ درد اٹھا آج کہ دل بیٹھ رہا ہے

    کشتی ہوئی تیار تو دریا ہی نہیں تھا

    ماتھے پر شکن کوئی نہ احساس ندامت

    وہ کٹتے سروں کو کبھی گنتا ہی نہیں تھا

    اب جان پے بن آئی تو احساس ہوا ہے

    جو دیکھ رہے تھے وہ تماشا ہی نہیں تھا

    صدیوں کی وفاؤں پے مسلط رہا ہر دم

    اک لمحۂ انکار جو گزرا ہی نہیں تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites