کالی داس

جے کرشن چودھری حبیب

کالی داس

جے کرشن چودھری حبیب

MORE BY جے کرشن چودھری حبیب

    جہان علم کو تسلیم ہے وقار ترا

    ادب کے پھولوں سے دامن ہے لالہ زار ترا

    چمن میں یوں تو بہار آتی جاتی رہتی ہے

    مگر سخن کا ہے گلشن سدا بہار ترا

    جمال حسن کی دنیا میں کھو گیا ہے وہ

    پڑھا کلام ہے جس نے بھی ایک بار ترا

    نظر فروز وہ معنی وہ دل کشا الفاظ

    کہ ہے بیاض کا ہر صفحہ زرنگار ترا

    تری نظیر نہیں رفعت تخیل میں

    سخن ہے عرش معلیٰ سے ہمکنار ترا

    طیور و وحشی و انسان و فطرت رنگیں

    ترے کلام میں یکساں ہے سب سے پیار ترا

    کھلا ورق تھا دل انسان کا ترے آگے

    ہے ترجمانیٔ جذبات شاہکار ترا

    نشاط وصل ہے حاصل ترے فسانوں میں

    اسی ترانے سے ہے ساز نغمہ بار ترا

    وہ ترجمانیٔ تہذیب ہند کی تو نے

    کہ یادگار زمانہ ہے روزگار تیرا

    دیا ہے شیکسپئیر کو مقام مغرب نے

    ہے گوشہ گوشۂ عالم میں حق گزار ترا

    شراب حسن لٹائی ہے تو نے خم کے خم

    رہے گا کیف سے سرشار بادہ خوار ترا

    ہے تیرے نغموں کا شیدا حبیبؔ مدت سے

    اسی شراب میں ہے مست بادہ خوار ترا

    مآخذ:

    • کتاب : نغمۂ زندگی (Pg. 102)
    • Author : جے کرشن چودھری حبیب
    • مطبع : جے کرشن چودھری حبیب

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY