کاش

جے کرشن چودھری حبیب

کاش

جے کرشن چودھری حبیب

MORE BY جے کرشن چودھری حبیب

    کاش نور سحر کی کوئی کرن

    زلف سے کرتی مجھ کو ہم آغوش

    دل میں جل اٹھتی مشعل امید

    دور ہوتی سیاہیٔ غم دوش

    کاش مل جاتا نونہال کوئی

    مجھ کو خوش رہنا جو سکھا دیتا

    تاکہ میں حالت الم میں بھی

    جھومتا گاتا مسکرا دیتا

    کاش کوئی حسین دوشیزہ

    راز معصومیت بتا دیتی

    دل کو دھو کر ہوس کے دھبوں سے

    حسن و الفت سے جگمگا دیتی

    کاش مرد جواں کوئی ملتا

    اور وہ سوز دل عطا کرتا

    جس سے میں موت سے لڑاتا آنکھ

    اور جینے کا حق ادا کرتا

    کاش پیری وہ پر شکوہ ملے

    وقت جس کو شکست دے نہ سکے

    جس کی وہ چتونوں میں عزم شباب

    کم سنی یاد آئے جب وہ ہنسے

    کاش تاروں کا تابناک جمال

    جان و تن میں مرے سما جاتا

    دور ہو جاتی غم کی تاریکی

    جس طرف ہو کے میں گزر جاتا

    مآخذ:

    • کتاب : نغمۂ زندگی (Pg. 94)
    • Author : جے کرشن چودھری حبیب
    • مطبع : جے کرشن چودھری حبیب

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY