ماتھے کا جھومر

عبدالقادر

ماتھے کا جھومر

عبدالقادر

MORE BY عبدالقادر

    شہنائی بجاتا ہوا اک ننھا سا مچھر

    پہنچا کسی میدان میں نالے سے نکل کر

    میدان میں کچھ دیر بھٹکتا رہا مچھر

    کچھ کام نہیں تھا تو مٹکتا رہا مچھر

    موصوف نے اک بیل کو بیٹھا ہوا پایا

    تب دل میں سواری کا ذرا شوق سمایا

    آرام سے وہ بیٹھ گیا سینگ کے اوپر

    پھر اپنے خیالات میں گم ہو گیا مچھر

    دو گھنٹے گزر جانے پہ موصوف نے سوچا

    اس بیل کو بے جرم و خطا میں نے دبوچا

    یہ بیل پچک جائے گا سوچا نہیں میں نے

    اب کچلا گیا پیسا گیا میرے بدن سے

    یہ دبتا رہا سرمہ بنا ٹوٹی قیامت

    لیکن کوئی شکوہ نہ کیا واہ شرافت

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites