خوش ہو اے بخت کہ ہے آج ترے سر سہرا

مرزا غالب

خوش ہو اے بخت کہ ہے آج ترے سر سہرا

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۵۲ء

    خوش ہو اے بخت کہ ہے آج ترے سر سہرا

    باندھ شہزادہ جواں بخت کے سر پر سہرا

    کیا ہی اس چاند سے مکھڑے پہ بھلا لگتا ہے

    ہے ترے حسن دل افروز کا زیور سہرا

    سر پہ چڑھنا تجھے پھبتا ہے پر اے طرف کلاہ

    مجھ کو ڈر ہے کہ نہ چھینے ترا لمبر سہرا

    ناؤ بھر کر ہی پروئے گئے ہوں گے موتی

    ورنہ کیوں لائے ہیں کشتی میں لگا کر سہرا

    سات دریا کے فراہم کیے ہوں گے موتی

    تب بنا ہو گا اس انداز کا گز بھر سہرا

    رخ پہ دولھا کے جو گرمی سے پسینا ٹپکا

    ہے رگ ابر گہر بار سراسر سہرا

    یہ بھی اک بے ادبی تھی کہ قبا سے بڑھ جائے

    رہ گیا آن کے دامن کے برابر سہرا

    جی میں اترائیں نہ موتی کہ ہمیں ہیں اک چیز

    چاہیے پھولوں کا بھی ایک مقرر سہرا

    جب کہ اپنے میں سماویں نہ خوشی کے مارے

    گوندھے پھولوں کا بھلا پھر کوئی کیوں کر سہرا

    رخ روشن کی دمک گوہر غلطاں کی چمک

    کیوں نہ دکھلاوے فروغ مہ و اختر سہرا

    تار ریشم کا نہیں ہے یہ رگ ابر بہار

    لائے گا تاب گراں باری گوہر سہرا

    ہم سخن فہم ہیں غالبؔ کے طرفدار نہیں

    دیکھیں اس سہرے سے کہدے کوئی بڑھ کر سہرا

    مآخذ:

    • کتاب : Deewan-e-Ghalib (Pg. 420)
    • Author : kalidas gupta raza
    • مطبع : Sakar Publishers Private Limited (1988)
    • اشاعت : 1988

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY