محاسن

اقبال دیوان

محاسن

اقبال دیوان

MORE BY اقبال دیوان

    ۱

    اپنی پیدائش کی منتظر بیٹی کا نام محاسن رکھنے کا فیصلہ اس کے ابّو نے قاہرہ کے ائیرپورٹ پر کیا۔خاتون امیگریشن کلرک جس نے ان کا جلدی میں گم کردہ پاسپورٹ پبلک ایڈریس سسٹم سے کام لے کر تندہی سے تلاش کرکے دیا ، اس نیک دل ، انسان دوست بی بی کا نام محاسن تھا ۔ یہ نام ایک چھوٹی سے نیم پلیٹ کی صورت میں اس کے بمشکل چھپائے گئے سینے پر آویزاں تھا۔

    جمیل سیٹھ کو معلوم تھا کہ ان کی بیوی حاملہ ہے اور الٹرا ساؤنڈ کی رپورٹو ں کی مناسبت سے اب ان کے ہاں تیسری اولاد ایک بیٹی کی صورت میں پیدا ہوگی۔

    پاسپورٹ کی بازیابی کے بعد بھی وہ اپنی اس مصری مہرباں کو ٹھیک اسی جگہ پر جہاں نام کی وہ چھوٹی سی پلیٹ آویزاں تھی بغور دیکھتے رہے۔ ان کی نظر کی اس غیر مہذب پیوند کاری کو جب عمر کی تفاوت کے باوجود اس افسر نے نوٹ کیا تو وہ مہرباں معصومہ کچھ ہراساں سی ہوگئی ۔ اس سے پہلے کہ وہ کچھ کہتی جمیل سیٹھ بھی اس کی سراسیمگی بھانپ گئے اور اسے جتلانے لگے کہ اس کا نام اتنا اچھا ہے کہ وہ اپنی ولادت کی منتظر بیٹی کا نام بھی محاسن رکھنا چاہتے ہیں اور اب تو اس کی مہربانیوں کی وجہ سے یہ نام اور بھی بامعنی ہوچلا ہے ۔تب اس مہربان نے بتایا کہ محاسن کا لفظ احسان، خوبی اور اوصاف کے معنی میں استعمال ہوتا ہے۔ ہماری عربی بڑی جامع اور وسیع المعانی زبان ہے ۔جس پر جمیل سیٹھ نے لاریب( بلاشبہ) کہہ کر اپنی راہ لی۔

    یوں محاسن کا یہ نام جمیل سیٹھ کی زندگی میں ایرپورٹ پر کیے جانے والے حسن سلوک کے حوالے سے اسمی بامسمی بن کر ایسا وابستہ ہوا کہ اپنی چاروں اولادوں میں وہ ہی اپنی باپ کا جگر گوشہ بن پائی۔ اپنی عمر کے بیسویں برس میں اس کی امی کا انتقال ہوگیا۔وہ اس موت کا ذمہ دار اپنی بڑی بھابی کو گردانتی ہے ۔اسی نے انجکشن لگاتے وقت ڈاکٹر کو یہ نہ بتایا تھا کہ اس کی امی شدید ڈایابیٹک ہیں، کچھ دواؤں سے انہیں شدید ری ایکشن ہونے کاا حتمال تھا۔

    دو سال تک تو جمیل سیٹھ بھی اس اپنی بیوی کی دفاتِ حسرت آیات سے کچھ پریشاں پریشاں رہے۔ دو بیٹوں کی شادی تو انہوں نے اپنی رفیقِ حیات کی موجودگی میں ہی کردی تھی۔مسئلہ محاسن اور ارمغان کی شادی کا تھا۔ ولید تو اپنی ماں کی موت کا غم بھلانے اور اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لیے امریکہ چلا گیا اور وہیں کسی نیپالی دوشیزہ کے دامن سے ایسا وابستہ ہوا کہ بس ولیمے کی تقریب پر ہی اسے پاکستان لایا۔

    محاسن کے لیے اس کی منجھلی بھابی کے قریبی رشتہ داروں میں سے ایک لڑکے عنادل کا رشتہ آیا۔ وہ باہر کا ایم بی اے تھا۔ گھرانہ اس کے منجھلے بھائی کا بھی دیکھا بھالا اور انتہائی آسودہ حال تھا ۔محاسن کو رشتے پر کچھ اعتراضات تھے ایک اعتراض تو یہ تھا کہ کہ لڑکے میں کچھ کچھ نسوانیت جھلکتی تھی۔ جس پر بھابھیوں نے اسے سمجھایاکہ ایسے لڑکے طبیعتاًبہت ہی ڈوسائل اور گھر گرہستی کو نبھانے والے ہوتے ہیں۔محاسن کو اس کا نام عنادل ، بھی بہت زنانہ لگا۔ وہ دونوں مل کر یک زبان ہو کر کہنے لگیں وہ اسے شادی کے بعد رستم، سہراب مصباح الحق یا سردار طور خان محسود پکارلے تو نام بھی مردانہ ہوجائے گا۔

    محاسن کا ایک مسئلہ یہ بھی تھا کہ باپ کی خدمت، ماں کی مفارقت ان کی تربیت کا بھرم اور اپنی ہی طبیعت کی بلند پروازی اسے اس بات سے روکتی رہی کہ وہ اپنے لیے خود ہی ڈھونڈ ڈھانڈ کرکسی لڑکے سے شادی کرلے۔اس وجہ سے اس نے بھی زیادہ مین میخ اس رشتے میں نہ نکالی یوں بھی وہ ایک بہت سمجھوتہ ساز لڑکی تھی۔۔ یوں باپ اور بڑی بھابھی کے سمجھانے پر جلد ہی مان گئی ۔

    لڑکے کا اپنا گھر بھی قریب ہی خیابان ہلال پر واقع تھا۔ اس کے گھر کے دیگر افراد بھی قریب ہی ایک بنگلے میں رہتے تھے۔ سامنے والی سڑک یعنی خیابان بادبان پر جمیل سیٹھ کا اپنا گھر تھا۔ ہزار گز سے کچھ بڑے سے پلاٹ میں پانچ پانچ سو گز کے دو بنگلے ایک راہدادری سے جڑے تھے ۔بڑا بھائی اپنی فیملی کے ساتھ ایک بنگلے میں تو دوسرے میں جمیل سیٹھ مقیم تھے منجھلے بھائی کا گھر بھی پچھلی گلی میں تھا عنادل کسی ملٹی نیشنل ادارے میں ڈپٹی کوالٹی کنٹرول منیجر تھا۔صبح اپنے دفتر جاتے وقت وہ محاسن کو والد صاحب کے ہاں اتار دیتا تھا۔وہ وہاں کچھ دیر رہتی پھر ابو کے ساتھ ہی ان کے آفس آجاتی اور شام کو انہیں کے ساتھ واپس آجاتی تھی ۔رات اس کی آمد کے وقت وہ تیار ہوتی کہ تاکہ وہ اپنے گھر لوٹ جائے۔

    اس دوران دو واقعات ایسے ہوئے جن سے محاسن کی زندگی میں بھونچال سا آگیا۔

    پہلا واقعہ یہ تھا کہ اس کے والد کے دوست بہار الدین جن کا تعلق افغانستان کے غلزئی قبیلے کے تھا۔ وہاں وہ غدر مچنے کی وجہ سے اپنے دو بھائیوں کے ساتھ پشاور آگئے تھے۔ پشاور میں روڈ کنسٹرکشن کی ٹھیکیداری کا بڑا کاروبار تھا ۔ ان کی اکلوتی اولاد ، ایک بیٹی بس فروزاں ہی تھی ، محاسن کی ہم عمر ۔ وہ اپنی اہلیہ اور فروزاں کے ساتھ کراچی آئے ۔وہ جمیل سیٹھ کے ہاں قیام پذیر تھے۔ جمیل سیٹھ اور بہار الدین، دونوں دوستوں کا خیال تھا کہ چھٹیوں پر آیا ہوا محاسن کا چھوٹا بھائی دلید اس حسن خوابیدہ فروزاں کو دیکھ لے تو دونوں کی بات پکی ہوجائے ۔ ولید کو اس منصوبے سے دور امریکہ میں اپنی ہم مکتب نیپال کی رشمی پانڈے کچھ ایسی من بھائی کہ کم از کم شادی کے معاملہ میں اس نے ڈیورینڈ لائن ( افغانستان اور پاکستان کی 2,640 کلومیٹر سرحد جسے باقاعدہ طور پر سن 1893 میں افغان امیر عبد الرحٗمن اور برطانوی راج نے تشکیل دیا) کراس کرنے کا کوئی خیال ظاہر نہ کیا ۔

    فروازں کی آمد کے تیسرے دن ہی وہ رشمی پانڈے کے والدین سے بات پکی کرنے کٹھمنڈو چل پڑا ۔اس کی روانگی کے دو دن بعد احمد علی ایک دن سندھ کے شہر نواب شاہ کے سفر پر کسی سے ملنے جانے کے لیے اپنی اہلیہ کے ساتھ نکلے۔ راستے میں کار کو حادثہ پیش آیا جس میں ڈرائیور اور وہ دونوں میاں بیوی جاں بحق ہوگئے۔

    محاسن نے اس جانکاہ حادثے سے سنبھلنے میں فروزاں کی بہت دل جوئی کی۔ وہ خود چونکہ اپنے میاں کے ساتھ رہتی تھی لہذا اس نے یہ مناسب نہ سمجھا کہ وہ فروزاں کو اپنے گھر پر لے آئے ۔ آپ تو جانتے ہی ہیں کہ عورتوں کی ایک بڑی اکثریت تو خود کو جواں بکریوں سے بھی اپنے شوہروں کے معاملے میں غیر محفوظ تصور کرتی ہے۔

    ا اس نے بہر حال یہ ہی بہتر جانا کہ فروزاں اس کے والد کے ساتھ ہی ان کے گھر پر رہے ۔ ویسے بھی اس نے اپنا غم غلط کرنے کے لیے یہیں پر ایک نجی یونیورسٹی میں داخلہ لے لیا تھا ۔فروزاں لڑکیوں کے ہاسٹل میں منتقل ہونا چاہتی تھی مگر نہ محاسن مانی نہ ہی جمیل سیٹھ۔

    فروزاں کے والدین کے انتقال کے ٹھیک تین ماہ بعد جمیل سیٹھ نے سب سے پہلے محاسن پر ہی پر یہ پہاڑ توڑا کہ انہوں نے فروزاں کی مرضی سے اس شادی کرلی ہے۔ وہ اس بات سے بہت رنجیدہ ہوئی۔اس کا خیال تھا کہ باپ بھلے سے شادی کرتا مگر کسی پختہ عمر کی خاتون کے ساتھ۔جوان سال عورت توجہ کی بہت طالب ہوتی ہے ۔ یہ توجہ نہ مل پائے تو اس میں بہت بگاڑ پیدا ہوتا ہے۔فروزاں دل سے بہت رنجور اور حالات سے بہت مجبور ہے لہذا وہ اگر ایک ذمہ دارانہ رویہ اختیار نہیں کرتی تو اس جمے جمائے خاندان میں بہت سی دراڑیں پڑ جائیں گی۔

    ایسا نہ ہوا۔ فروزاں اس کی توقعات سے بڑھ کر ذمہ دار طبیعت اور گھریلو رجحانات کی مالک نکلی ۔ وہ جلد ہی حاملہ بھی ہوگئی ۔جلد بازی کے اس احساس تحفظ اور غلغلہ مچاتی سمند کی لہروں جیسا جھاگ اڑاتی جوانی کے علاوہ محاسن کو کوئی اس میں اور عیب نہ دکھائی دیا۔

    اپنے ماں بننے کی اطلاع فروزاں ہی نے سب سے پہلے محاسن کو دی۔ اس کا دل جیتنے کے لیے ساتھ ہی بہت آہستگی سے کہا وہ محاسن میں تین رشتوں کا امتزاج دیکھتی ہے یعنی ایک سمجھ دار ساس، ایک ذمہ دار بیٹی اور ایک پیار کرنے والی دوست کا ۔ اس بات کو سن کر محاسن نے بغیر بتائے دکھوں کی ماری تنکوں کی کشتی پر تیرتی فروزاں کی یہ وضاحت سن کر چھوٹی موٹی رنجش کے آخری کانٹوں کو بھی دل ہی دل میں جلا کر راکھ کرلیا۔ محاسن نے اسے گلے لگا کر جب معاف کیا تو بن ماں کی یہ دونوں یتیم لڑکیاں گلے لگ کر بہت دیر تک روئیں۔

    جمیل سیٹھ کا فروزاں سے شادی کے بعد بھی بطور بیٹی کے محاسن سے تعلقات میں کوئی اتار چڑھاؤ نہ آیا تھا وہ اس کو پہلے کی طرح ہی چاہتے تھے ۔فروزاں کو بھی اس لگاؤ سے کبھی کوئی گلہ نہ ہوا لہذا یہ بات بھی اس کو جلد معاف کردینے میں معاون ثابت ہوئی۔

    کچھ دن تک تو خاندان کے لوگوں میں اس شادی پر چہ مگوئیاں ہوتی رہیں مگر جمیل سیٹھ چونکہ مالدار تھے ، خاندان والوں اور رشتہ داروں سے حسن سلوک سے پیش آتےتھے اس لیے تعلقات ان سے بھی جلد ہی نارمل ہوگئے۔۔سیٹھ جمیل کی اس شادی سے منجھلا بیٹا منیب البتہ کچھ ناراض ہوا اس ناراضگی کی تہہ میں شادی سے زیادہ اس کی بیوی کی ناعاقبت اندیشی اور خود منیب کا اپنا حرص شامل تھا۔ اس کا بہت دنوں سے ارادہ تھا کہ اس کے والد اپنے کاروبار کا کچھ حصہ راولپنڈی منتقل کر کے اسے اس کا تنہا حقدار قرار دے دیں ۔ جمیل سیٹھ اس کی پنڈی منتقلی کے حق میں نہ تھے ۔ وہ ذہین تھا کاروباری سمجھ بھی بہت تھی اس کی مدد سے وہ کاروبار میں پھیلاؤ کے خواہشمند تھے ۔ جب انہون نے منیب کی بات نہ مانی تو وہ اس شادی کو بہانہ بنا کر ناراض ہو ا ۔گھر کی چابیاں محاسن کے حوالے کرکے وہ اپنے حصے کی دولت سمیٹ کر اپنی بیوی کے ساتھ راولپنڈی شفٹ ہوگیا۔بڑے بھائی وقاص نے بھی باپ کی اس شادی والی حرکت پر کچھ دن تک تو ناراضگی نبھائی مگر محاسن کے سمجھانے پر مان گیا۔ وہ باپ کے کاروبار میں شریک تھا۔

    دوسرا واقعہ کچھ عجیب تھا۔ اس کے اثرات اس کے وجود میں سانپ کے کاٹنے کی مانند ظاہر ہوئے ۔یہ سانپ مگر کچھ ایسا تھا کہ اس کا فاسفولی فیز A2 این زائم (enzyme) جو زہر کو زہریلا بناتا ہے بدن میں داخل ہوکر کے عصابی نظام کو مفلوج کرتا ہے اور بر وقت علاج نہ ہونے کی صورت میں بدن میں خون کے سرخ خلیوں کو ناکارہ بنا کر موت کا بہانہ بنتا ہے۔ یہ فاسفولی فیز اے ٹو این زائم اس کے وجود میں سب کی نگاہوں سے بچ کر بہت آہستگی سے سرائیت کرگیا۔ اس سانپ نے محاسن کو مزے لے لے کر مگر تھوڑی تھوڑی مقدار میں رہ رہ کر کاٹا۔ دھیمے دھیمے ، غیر محسوس طریقے پر۔

    محاسن کو عنادل سے اپنی ذات میں جسمانی عدم دل چسپی سے گلہ تو بہت تھا مگر وہ خود کو یہ سمجھا کر چپ ہوگئی کہ شاید کچھ مرد ایسے ہی ہوتے ہوں۔ نئی عورت سے تعلقات بنانے میں دیر آشنا ہوں۔ بہت ممکن ہے کہ کسی رات وہ اس کی جلوہ سامانیوں کی تاب نہ لاکر اس ٹوٹ پڑے اور یہ تعلقات عام میاں بیوی والے عورت مرد کے تعلقات کا روپ دھار لیں۔محاسن ہر رات اسے رجھانے کے لیے خوب بنتی سنورتی۔ خواب گاہ میں طرح طرح کی خوشبو اور روشنی کا اہتمام کرتی۔ شادی سے پہلے وہ ایک ہفتے کے لیے اپنا سامان لینے اپنی خالہ کے پاس لندن گئی تھی اور وہاں سے اپنی کسی دوست کے ساتھ میلان (اٹلی) اور پیرس کا چکر بھی لگا کر آئی تھی جہاں سے اس نے نائیٹیوں اور من کو برمانے والی لانجرے (lingerie۔ عورتوں کے زیر جامے ) کا وافر اسٹاک جمع کیا تھا ۔ عنادل میاں ان سب شرارتوں کے باوجود جانے کسی مٹی گارے کے بنے تھے کہ ان پر جھاگ جیسی ،بدن کا جلد ساتھ چھوڑنے والی ان ترغیبات کا کوئی خاص اثر نہ ہوا ۔ وہ تقریباً ہر رات ہی سندرتا کی اس مورت کو بے اعتنائی سے دیکھتے ۔ بستر میں ہی کمپنی کے لیپ ٹاپ پر کاروباری ای میل بھیجتے بھیجتے سوجاتے گو ڈی وی ڈی پلئیر پر طرح طرح کے لبھاؤنے مناظر آہوں اور سسکیوں کی شور مچاتی بارات کی مانند گزرتے رہتے مگر مجال ہے کہ عنادل کے جسم و جان میں اس بات سے کوئی تحریک ہوتی ہو ۔

    کچھ دیر بعد ہی بچے کی طرح مادر شکم میں سمٹ کر سورہنے والے بچے عنادل پر شبِ ناآسودہ کی ماری محاسن دزدیدہ نگاہ ڈال کر نیم جاں ہوکر اپنے بستر سے اٹھتی۔ اس کا لیپ ٹاپ بستر سے نیچے رکھ کر ٹی وی کو دیگر بتیوں کے ساتھ گل کرکے کمرے میں سے باہر چلی جاتی۔ خواب گاہ کا دروازہ آہستگی سے بھیڑ کر وہ باہر لاؤنج میں رکھے لیزی بوائے پر پیر پھیلا کر دراز ہوکر وہ کبھی خود پر تو کبھی کتاب کے حروف پر نگاہ ڈالتی۔ دونوں میں اسے جب کوئی ربط محسوس نہ ہوتا تو وہ گیسٹ روم کے غسل خانے میں عریاں ہو کر وہ اپنے سراپے کو دیر تک تکتی رہتی تو اسے مختلف کتابوں اور عورتوں کے انگریزی رسائل سے اچکا ہوا یہ خیال دامن گیر ہوجاتا کہ کہیں اس میں عنادل کی جنسی عدم دل چسپی کی وجہ یہ تو نہیں کہ وہ نامرد یا ہم جنس پرست ہے۔

    یہ شک ایک ایسا مردہ گوشت تھا جسے اس کے اندر کی عورت ایک مادہ ہائنا (لکڑ بگھا) کی مانند کھینچ کھانچ کر اپنے ہی یقین کی بھوک مٹانے کے لیے کسی نتیجہ خیز مقام تک لے آ تی ۔خیالات کے اس بہاؤ میں اسے کہیں فروزاں دمکتی مسکراتی دکھائی دیتی جو ہر صبح اسے پہلے سے زیادہ جگ مگاتی اور آسودہ دکھائی دیتی تھی۔اس کے وجود سے ایسی روشنی پھوٹ رہی ہوتی جو مرد عورت کی سہولت آشنا لذت بھری قربت سے جنم لیتی ہے۔ایسا کئی دفعہ ہوتا تھا۔ عنادل کی بے توجہی اور فروزاں کی آسودگی اسے ہر رات انگاروں پر سلاتی۔

    محاسن بہت حسین نہ تھی، پر دیدہ زیب بہت تھی۔ چہرے پر بھرے بھرے ہونٹ بہت رقبہ تو نہ گھیرتے تھے مگر پھر بھی اپنے اس افقی اختصار کے باوجود اسے ایک اسکول گرل والی معصومیت ضرور عطا کرتے تھے۔ صاف شفاف جلد والے چہرے پر ان لبوں کے کونے پرایک نمایاں تل تھا جو بوسے کے بے تاب طلب گار کے لیے نقطہء آغاز بن سکتا تھا مگر عنادل نے ان ہونٹوں کو اگر مجبوری میں کبھی چوما بھی تو بالکل اس طرح جس طرح کوئی چائے یا کافی کے کپ کی گرم کناری پر ہونٹ رکھ کر جلدی سے علیحدہ ہوجائے۔

    اس کے ان کے ہونٹوں کے پیچھے چھپے اجلے بے داغ ہونٹ بہت ترتیب سے جمے تھے۔سوچ لیں کہ وہ امریکہ کی میرین کا ایک ایسا چاک و چوبند دستہ تھے جو الاسکا کی برفانی میدانوں میں اس کے ہونٹوں کے گلابی وادی میں سفید کیمو فلاج یونی فارم پہنے ڈیوٹی دینے کے لیے ہمہ وقت ایستادہ رہتے تھے۔ناک اس نے اپنی امی کے منع کرنے کے باوجود سولہویں سالگرہ سے تین دن پہلے ہی چھدوائی تھی جو جب ذرا زخم ہوجانے کی وجہ سے پک گئی تو اسے بہت ساری ڈانٹ اور مائیسین بھی کئی دن تک کھانی پڑی ۔ناک ٹھیک ہوگئی تو اس نے مستقل طور پر اس میں راجھستانی نتھنی، لونگ اور کوکے بہت شوق سے پہننا شروع کردیا ۔اس مخصوص قسم کے زیور سے اس کی ناک جو معمول سے ذرا زیادہ ہی ستواں تھی اس کا چبھاؤ چھپ جاتا تھا۔

    محاسن کے بال کمر تک لمبے اورچمکیلے تھے اور وہ انہیں کبھی کھول لیتی تو ایک سیاہ آبدار چادر کی طرح پردہ تان لیتے تھے۔ان کی کوئی لٹ جب آوارگی کرتی ہوئی چہرے پر بکھرتی تو ایسا لگتا تھا کہ کسی مشہور سیکورٹی ایجنسی کا کوئی گارڈ مفت کی ڈیوٹی دینے کے لیے مالکان کی طرف سے تعینات کردیا گیا ہو۔ قد دراز تھا، عام لڑکیوں سے ذرا نکلتا ہوا اور جامہ زیبی بھی قیامت تھی۔اس کی آنکھوں میں ذہانت کے بجرے کسی ساکت جھیل پربے مقصد تیرتے دکھائی دیتے۔ نگاہ بھر کے کسی کو دیکھنے کی عادت اس میں پہلے بھی کبھی نہ تھی ۔ ماں نے اسے بہت اوائل عمری میں سمجھادیا تھا کہ یہ انگریز لوگ کسی کو آنکھ بھر کر نہیں دیکھتے ۔ ان کے ہاں کسی کو گھور کر دیکھنا بد تہذیبی میں شمار ہوتا ہے ۔ اس طرح ٹکٹکی جما کر دوسروں کو دیکھنے سے سامنے والے کو حرص اور شک کا شائبہ گزرتا ہے۔ یوں نگاہوں کے کونے سے دوسروں کو دیکھنا ایک عادت سی بن گئی۔ وہ اپنی نظر ہٹابھی لیتی تھی تو اس کی نگاہوں میں ایک ایسا سحر تھا کہ مطلوب نگاہ بہت دیر تک تڑپتا رہتا۔ جلد کی تازگی اور قدرتی چمک کی وجہ سے میک اپ کا استعمال بھی وہ کم ہی کرتی تھی۔ عنادل پر اس حسن کے ان بیش بہا جلووں کا وہی اثر ہوتا جو صحرائے الصحرا کے علاقوں پر مشتمل ماریطانیہ، مالی، تیونس اور نائیجر کے ممالک کے صحراؤں پر کبھی کبھار کی بارش کا ہوتا ہے۔ بے آب و گیا، اپنی ہی آگ میں جھلستے ہوئے ،بے لطف اور بے آرام، لق و دق ریگستان۔

    سچ پوچھو تو اس شک کی ابتدا شادی کے اولین ایام میں ہی پڑگئی تھی۔ نکاح کی رات ایک تو عنادل نے بارات لانے میں اتنی دیر کردی کہ محاسن کی رخصتی کہیں صبح چار بجے جاکر ممکن ہوئی۔کمرے میں آتے آتے وہ بھی بہت بور ہوچکی تھی اور عنادل بھی جمائیاں لے رہا تھا۔ اسے گلے لگا کر پانچ منٹ میں ہی سوگیا۔ ولیمے والی رات کا معاملہ اور بھی عجب تھا۔ وہ ابھی پارلر میں ہی تھی کہ اطلاع آئی کہ عنادل کی طبیعت اچانک خراب ہوگئی ہے اور اسے ہسپتال لے جایا گیا ہے۔یہ اطلاع عنادل کی سب سے چھوٹی بہن فارہہ لے کر آئی تھی۔سب گھر والوں کی ہدایت تھی کہ عنادل خود ہی پنڈال میں دو تین گھنٹوں میں آجائے گا۔ اسے ڈرپ لگی ہے۔عنادل آیا تو سہی مگر رات کو وہ چپ چاپ منھ لپیٹ کر ہی سورہا۔اس کے بعد چھ ماہ تک ایسے کئی اہتمام ہوئے۔ کسی دعوت سے واپسی پر تو کبھی یوں ہی لبھاؤ اور ترغیب کے لیے مگر محاسن باکرہ کی باکرہ ہی رہی۔

    وہ اکثر تاسف کرتی کہ اس کے والد عنادل کی بجائے اپنے جنرل منیجرفرحان سے کردیتے تو اچھا ہوتا۔ کیا ہوا اگر وہ اس سے عمر میں پورے پندرہ برس بڑا تھا۔ فرحان کو ایک اطلاع کے بموجب اس کی بیوی نے چھوڑ دیا تھا مگر اس کی معلومات کے حساب سے اس سارے بگاڑ کی ذمہ دار خود اس کی بیوی تھی۔ اسے اپنا کوئی پرانا کلاس فیلو بہت پسند تھا مگر مذہبی دشواریوں کی وجہ سے یہ شادی نہ ہوپائی ۔ بعد میں جب وہ ایک دوسرے سے چھپ چھپ کر ملنے لگے تو اس وجہ سے یہ شادی ٹوٹ گئی ۔

    فرحان بہت ہینڈ سم تو نہ تھا ۔ خوش لباس، شریں گفتار اور کیئرنگ بہت تھا ذوق جمالیات بہت اچھا تھا مگر بقول وقاص کے اس کی ذہانت اوسط درجے کی تھی ۔ سچ پوچھو تو ذہانت کے معاملے میں وقاص خود بھی ایپل کمپیوٹرز اور آئی فون اور آئی پیڈ کے مالک اسٹیو جاب جیسا نہ تھا۔ تنہائی اور میاں کی عدم توجہی کی ماری محاسن اور فرحان کے درمیان دفتری معاملات کو نپٹاتے نپٹاتے دونوں میں ایک چپ چاپ سی انڈر اسٹینڈنگ پیدا ہوگئی تھی جو بتدریج ایک لگاؤ کی صورت اختیار کرتی جارہی تھی ۔

    اس تعلق کے حوالے سے نہ تو دفتر میں کوئی افواہ سازی کا بازار گرم ہوا نہ ہی اس کے والد جمیل سیٹھ نے اسے اس بارے میں کوئی تنبیہہ کی۔ اس سلیقے اور راز داری میں جہاں محاسن کی اپنی پھونک پھونک کر قدم بڑھانے والی احتیاط پسند طبیعت کا بہت کچھ دخل تھا تووہیں اس کا وہ بہت کچھ کریڈٹ فرحان کی سمجھ داری ، دھیمے پن احترام سے آراستہ لگاؤ اور رکھ رکھاؤ کو بھی دیتی تھی۔ابتدا میں جب یہ سلسلہ چلا تو محاسن کو یہ خیال آتا رہا کہ فرحان کی اس احتیاط کے بندھن میں شاید کمپنی کی ملازمت کو بھی دخل ہو۔وہ ان کی کمپنی میں انتظامی سطح پر ایک ذمہ دار ترین عہدے پر فائز تھا۔ بعد میں اسے لگا کہ اس اہتمام میں کچھ اس کی طبیعت کا اپنا فطری میلان بھی شامل ہے۔

    اس کے ابو نے ہی اسے بتایا کہ فرحان کے ابو مرکزی حکومت میں افسر تھے، ریٹائرمینٹ کے بعد وہ اسی کمپنی میں ملازم ہوگئے تھے ۔ان کی تین اولادیں تھیں عندلیب، رفاقت اور فرحان۔ بہنیں بڑی تھیں ،دونوں بیاہ کر ملک سے باہر جا بسی تھیں۔ان کے اچانک انتقال سے کچھ دن پہلے ہی فرحان بہنوں کی مدد سے باہر سے پڑھ کر آیا تھا ۔پہلے تو ادھر ادھر کہیں نوکری کرتا رہا بعد میں وہ ان کی کمپنی میں آن کر ملازم ہوگیا ۔اس بات کو اب پندرہ برس ہوتے تھے۔

    اس کے پیار کے طور اطوار کے یہ من بھاؤنے انداز اسے بہت عرصے پہلے دیکھی گئی وائلڈ لائف کی ایک فلم کے چند مناظر کی یاد دلاتے رہے۔منگولیا میں سردی کے ایام میں Demoiselle Crane جنہیں بھارت میں سارس اور کونج کہا جاتا ہے پاکستان اور بھارت کا رخ کرتے ہیں۔ہندوستان کی ریاست راجھستان میں ایک قصبے کانام'کی شن 'ہے ۔ اس قصبے میں کبھی کسی کسان نے سرسوں کی ایک بوری کے بیج ان سارسوں کو ڈال دیے تھے ۔اب ہر سال موسم گرما میں دس ہزار سارسوں کا ایک جھنڈ اس جگہ باقاعدگی سے اپنا دانہ چگنے پہنچتا ہے۔ محاسن نے سوچا کہ اس نے بھی سرسوں کے بیج کی ایک بوری فرحان کے سامنے ڈال دی ہے۔ وہ بھی اپنی میلان طبع اور اس کی سہولت سے یہاں دانہ کھانے ضرور آئے گا۔

    ایک دن بات چیت کے دوران اس ہمت کرکے اپنے اور عنادل کے ساتھ درپیش معاملے کو اپنی ایک قریبی سہیلی کا کیس بنا کر جب فرحان کے ساتھ اس پر موضوع پر تفصیلی گفتگو کی تو فرحان کو کچھ حیرت بھی ہوئی مگر وہ اس یہ سمجھا نے میں کامیاب ہوگیا کہ اس کی سہیلی کا میاں ممکن ہے ہم جنس پرست یعنی (Gay) ہو اور اس طرح کے مردوں کو عورتوں میں کوئی جنسی دل چسپی نہیں ہوتی۔اپنی اس سہیلی کو وہ تجویز دے کہ وہ اپنے میاں کا بدن اس کی بے توجہی کے دوران چپ چاپ دیکھے ممکن ہے اسے کچھ ایسی علامات دکھائی دے جائیں جس سے یہ ظاہر ہو کہ یہ بدن کسی اور کے تصرف میں رہتاہے۔یہ راز زیادہ دن تک چھپ نہیں سکتا۔ وہ کوشش کرکے اسے رنگے ہاتھوں پکڑے مگر شور مچائے بغیر چپ چاپ طلاق لے لے۔

    ایک ہفتے کے لیے وہ اپنے والد کی تجویز پر سنگاپور گئی۔ جانا تو اس کے بھائی وقاص کو تھا مگر اس کے بیٹے کا ان عین انہی دنوں اچانک ہرنیا کا آپریشن ہونے کا مسئلہ اٹھ کھڑا ہوا۔ یوں اسے فرحان کے ساتھ جانا پڑا۔ ۔ وہاں کوئی کاروباری کانفرنس تھی ۔ یوں بھی اس کے والد کی مرضی تھی کہ فرحان سے تربیت پاکر وہ ان کے بزنس میں شامل ہوجائے۔دوبئی سے ان کی فلائٹ میں سیٹ بزنس کلاس میں بک تھی ۔ جہاز جب فضاوں میں بلند ہوا تو وہ نہ جانے کب دوران پرواز نیند کی ماری اس کی بانہوں میں سمٹ کر سو گئی ۔دفتر سے وہاں سیدھے ائیر پورٹ آئے ہوئے فرحان کو شیو کرنے کا موقع نہ ملا تھا۔ ہلکے ہلکے اسٹبل جب اسے اپنے گالوں کو سہلاتے ہوئے محسوس ہوئے تو وہ بھی سوچی سمجھی غفلت کا بہانہ بنا کر آنکھیں موندے اسکے سینے پر سر رکھے سانسوں کی مالا جپتی یہ سوچتی رہی کہ عنادل کے چکنے لوشنوں کے پالے لمس میں اور اس مردانہ کھردرے پن میں لذت کا کتنا جاں لیوا فرق ہے۔

    کانفرنس والے انہیں ایک دن سنگا پور کے بوٹانیکل گارڈنز لے گئے جن کا شمار دنیا کے بہترین پک نک اسپاٹس میں ہوتا تھا۔وہاں گھومتے گھومتے گروپ سے کٹ کروہ درختوں کے ایک جھنڈ میں پہنچ گئے جہاں ایک جھیل میں کنول کھلے تھے۔ایک پتھر پر بیٹھی محاسن کا پیر پھسلا تو وہ تقریباً پانی میں گلے گلے تک ڈوب گئی، فرحان نے اسے نکالا اور خشک کرتے کرتے اسے کئی دفعہ چوما۔ بوسوں کا یہ ذائقہ تو یقیناًبہت ہی لذت آگیں تھا مگر اس کہیں زیادہ دل خوش کن اس کا وہ جملہ تھا کہ قدرت نے آپ کے ہونٹوں کے کونے پر یہ تل اس لیے سجایا ہے کہ بھولے بھٹکے مسافر اپنا سفر جاری رکھ سکیں۔وہاں سنگاپور میں قیام کے دوران فرحان نے اسے کئی دفعہ دیر تک چوما مگر بات بوس کنار تک ہی رکی رہی۔

    نہ جانے کیوں محاسن نے مواقع کی اس بھر مار میں بھی اسے خود ہی اپنے دل میں متعین حدود کو پھلانگنے کی اجازت نہ دی۔

    کانفرنس سے واپسی پر محاسن کے میاں عنادل کو کمپنی میں ترقی پر نئی جھمجھماتی کار ملی تو ایک ڈاریؤر بھی رکھ لیا گیا۔ عجب بدتمیز سا ملازم تھا۔ بے حد تنومند، غصیلا اور تحکم آمیز رویوں کا مالک ، عنادل سے تو یوں بات کرتا تھا جیسے وہ اس کا ملازم ہو۔

    محاسن کو وہ پہلے دن سے ہی نہ بھایا۔کئی مرتبہ اس کی بدتمیزیوں سے اور گھر کے دیگر ملازمین سے روز روز کے جھگڑوں سے عاجز آن کر محاسن نے اسے نوکری سے فارغ کرنے کا بھی کہا مگر عنادل کا کہنا تھا کہ یہ اس کے باس کے گاؤں کا ہے۔ان ہی کی فرمائش پر اسے نوکری دی گئی ہے ، تنخواہ بھی کمپنی دیتی ہے لہذا اس کا اسے نوکری سے نکالنے پر کوئی اختیار نہ تھا۔

    اس دوران ڈرائیور کو عنادل نے ایک دو کمروں کا پورا سوئیٹ اپنے ہی بنگلے کے آؤٹ ہاؤس میں دے دیا۔ دفتر سے اب وہ جلد آجاتا تھا۔ آنے کے کچھ دیر بعد جب محاسن یا تو اپنے ابو کے گھر ہوتی یا کسی اور دوست یارشتہ دار سے ملاقات کے لیے گئی ہوتی وہ ڈرائیور کے ساتھ بیٹھ کر کہیں چلا جاتا۔ وہ دونوں واپس لوٹتے تو محاسن عنادل اس کا انتظار کیے بغیر یا تو لاؤنج میں یا اوپر اب اپنے نئے آباد کیے ہوئے بیڈ روم میں سوچکی ہوتی۔گیٹ کھلنے اور کمرے میں کھٹ پٹ سے اندازہ ہوجاتا کہ میاں عنادل گھر واپس آگئے ہیں۔

    چھٹی والے دنوں میں عنادل کی حالت ماہی بے آب کی سی ہوتی۔ ڈرائیور ان دنوں میں کہیں اپنے علاقے کے لوگوں سے ملنے جلنے چلا جاتا۔

    اس ڈرایؤر کے آجانے سے محاسن کو ایک نسوانی ادراک نے یہ سمجھایا کہ جب شکسپئر کے مشہور ڈرامے ہیملیٹ میں ایک کردار مارسیلس کی زبانی یہ کہتا ہے کہ "Something is rotten in the state of Denmark,"

    تو یقیناً اس مملکت میں کچھ ایسی خراب باتیں ہورہی ہیں جنہیں کسی طرح بھی در گزر نہیں کیا جا سکتا۔ وہ سوچتی رہی کہ اس کی زندگی میں عنادل نے یہ کیا بگاڑ اپنا لیا ہے کہ اس سے مفر ممکن نہیں۔ وہ اسی شش و پنج میں مبتلائے عذاب ہوکرنہ چاہتے ہوئے بھی فرحان کے قریب ہوتی چلی گئی۔

    باپ کی، فروزاں کی اس کے تینوں بھائیوں کی اپنی دنیا تھی جس میں اس کا عمل دخل بہت کم تھا۔ فرحان اسے بہت فراوانی سے دستیاب تھا۔اس دوستی میں اب خاصا اعتماد اور بے تکلفی آچکی تھی۔یہ لگاوٹ وہ عنادل سے انتقام کے طور پر بھی بڑی دل جوئی سے نبھاتی تھی۔

    فرحان پی۔ ای ۔سی ۔ایچ۔ ایس سوسائٹی کے ایک پرانے بنگلے میں ایک عدد چوکیدارکے ساتھ رہتا تھا۔اس بنگلے میں کئی پرانے درخت تھے۔ جس چھوٹی سی شاہراہ پر یہ واقع تھا وہاں ہر طرف ہی پرانے درخت تھے ۔ شہر کے کئی معتبر لوگ وہیں رہائش پذیر تھے ۔ یہ ایک پرانی طرز کا بنگلہ تھا۔اس کے ابو نے اپنی ملازمت کے دنوں میں اسے بنوایا تھا ۔فرحان کو یہ ورثے میں مل گیا تھا۔ پرانا ہونے کے بوجود اس نے اسے بہت عمدگی سے مین ٹین کیا تھا۔ صبح ایک ماسی اور جمعدار اس کی صفائی اس کی موجودگی میں کرکے چلے جاتے اور پھر یہ گھر اس کی آمد تک بند رہتا۔ بوڑھا چوکیداربابا غلام رسول ان کے ہاں پچھلے پینتیس برسوں سے ملازم تھا۔

    اسے ہندوستانی موسیقی،اردو شاعر کا بہت شستہ ذوق تھا۔ بالخصوص اس نے مصطفے زیدی اور داغ کو تو گھوٹ کر پی رکھا تھا۔مصطفے زیدی کی زندگی اور شاعری پر بھی ا س کی بہت اسٹڈی تھی۔ جاپانی اور ہسپانوی ادب کا بھی وہ دیوانہ تھا ۔جن دنوں ان دونوں کا پیار پروان چڑھ رہا تھا وہ جاپانی ادیب ہاروکی مراکامی کا بہت شدت سے مطالعہ کررہا تھا اور اسے اکثر وہ اس کیا یہ قول

    Pain is inevitable. Suffering is optional.148 (درد تو ناگزیر ہے مگر آزار اپنے اختیار کی بات ہے)

    یہ اس کی کتاب

    What I Talk About When I Talk About Running کا مشہور جملہ تھا۔ محاسن اسے اپنی زندگی پر فٹ کرنے کی کوشش کرتی تو وہ اس پر ایسے ہی فٹ ہوتا تھا جیسے مشہور اداکارہ پریانکا چوپڑہ کے بدن پر اس کے پسندیدہ فیشن ڈیزائنر ریتو کمار کے بلاؤز اور ہالٹرز چسپاں ہوجاتے تھے۔

    فرحان کو کھانا پکانے کا بھی بہت شوق تھا۔بالخصوص عربی کھانے اور شوشی وہ بہت اہتمام سے اس کی آمد پر اس کی مرضی سے تیار کرکے اپنے ہاتھوں سے کھلاتا تھا۔

    گھر کے لاؤنج میں لکڑی کے ایک تختے پر پیتل کے الفاظ میں جڑی ہوئی یہ عبارت کم بخت نے کہاں سے لا کر لگائی ہوئی تھی کہ" All my guests give me happiness, some by coming, some by going "( میرے سبھی مہمان میرے لیے مسرت کا باعث بنتے ہیں، کچھ اپنے آنے سے، کچھ اپنے چلے جانے سے)شراب ضرور پیتا تھا مگر ایک رکھ رکھاؤ کے ساتھ۔اسی نے محاسن کو سگریٹ، شراب اور بدن کے ذائقوں سے آشنا کیا۔فرحان کے ہاں کوئی عجلت، ضد یا بے توجہی نہ تھی۔ باتیں کرتا تو دل چاہتا کہ گھنٹوں بیٹھے سنتے رہو۔وہ اکثر سوچتی کے ایسی کیا بات تھی کہ اتنے اچھے اور سمجھدار مرد کو بھی ایک عورت نے چھوڑ دیا۔ اس کے بارے میں وہ سوچتی تو اسے اپنی ماں کی یہ بات بھی بہت یاد آتی کہ ہزار عورتوں میں سے ایک عورت کو اپنے خوابوں کا شہزادہ ملتا ہے باقی تو ساری زندگی بھر جھک مارتی ہیں۔

    محاسن کے شکوک عنادل کے بارے میں چند دن سے اپنے عروج پر تھے۔ اسے چوکیدار نے بتایا کہ ایک چھوٹی سی لوہے کی الماری جو الماری کم اور تجوری زیادہ لگتی ہے وہ ڈرایؤر کے کمرے میں عنادل صاحب نے رکھودی ہے ۔ ڈرائیور اور صاحب شام کو جاتے وقت اس الماری کو کھول کر اس میں سے کچھ چیزیں اپنے ایک چھوٹے بیگ میں رکھتے ہیں۔ گاڑی میں بیٹھ کر اس کے بعد روانہ ہوجاتے ہیں۔ ڈرائیور چرس بھی بہت پیتا ہے۔اس کا ماتھا اس وقت بھی ٹھنکا جب وہ ایک دن عنادل کی غیر موجودگی میں اپنی لانجرے نکالنے اپنے پرانے بیڈ روم گئی۔ اس کا ارادہ تھا کہ وہ یہ لانجرے وہ اپنی کچھ دوستوں کو بطور تحائف دے ڈالے۔ ان کی اب اس کی ازدواجی زندگی میں کوئی افادیت باقی نہیں رہی اس میں نے جب اپنے وارڈ روب کا جائزہ لیا تو اسے وہاں ایک غدر مچا ہوا دکھائی دیا۔ کچھ سامان تو اب بھی بن کھلے ہی اسکے وارڈ روب میں رکھا تھا۔ اسے مگر اس بات پر بڑی حیرت ہوئی کہ اس کے اس سامان کے بکس تو اپنی جگہ موجود تھے مگر دو تین نائٹیاں ان میں سے غائب تھیں۔ ایک نائیٹی جو اس نے بہت دن ہوئے کسی رات پہنی تھی وہ عنادل کے باتھ روم میں موجود تو تھی مگر اس کا ایک اسٹریپ ہک کے پاس سے ٹوٹا تھا۔

    وہ سوچ میں پڑگئی کہ کیا اس غلیظ تعلق میں اس کا میاں نسوانی رول ادا کرتا ہے اور یہ لباس پہن کر وہ اپنے سی۔ ڈی ہونے کا مزہ لیتا ہے۔سی ۔ڈی یعنی کراس ڈریسر (Cross Dresser) وہ مرد اور عورتیں ہوتے ہیں جنہیں جنس مخالف کے لباس اور لوازمات اپنے بدن پر سجا کر ایک عجیب سی جنسی لذت اور احساس تکمیل محسوس ہوتا ہے۔ یہ سب کچھ سوچ کر اسے عنادل سے بہت کراہت محسوس ہوئی۔

    اب اسے مزید صرف ایک ثبوت درکار تھا ۔ وہ تھا ان ثبوتوں کو اس کے منھ کے سامنے رکھ کر عنادل کا سامنا۔ وہ کسی فیصلے پر پہنچنے سے پہلے اسے ایک موقع صفائی کا دینا چاہتی تھی ۔ جو کچھ اس نے اپنے کمرے میں دیکھا اس سے وہ بہت ٹوٹی،اپنے کمرے میں آن کر روئی بھی بہت۔انتقام کی آگ بھی اس کے اندر ہی اندر سلگنے لگی۔

    اس انکشاف کی کڑواہٹ میں وہ پورا ایک ہفتہ لتھڑی رہی۔ اسے کبھی اپنے آپ سے تو کبھی عنادل سے گھن سی آنے لگی اور وہ سوچنے لگی کہ کیا اس میں کوئی ایسی کمی ہے کہ اس کا میاں اس کی جانب شب اول سے ہی مائل نہ ہوا ،تب اسے فرحان کی وہ بات یاد آگئی کہ اس کی سہیلی کا میاں ممکن ہے ہم جنس پرست یعنی (Gay) ہو اور اس طرح کے مردوں کو عورتوں میں کوئی جنسی دل چسپی نہیں ہوتی۔اب اسے یہ باور کرنے میں کوئی دشواری نہ تھی کہ عنادل بھی مکمل طور پر Gay ہے وہ ایک باٹم یعنی مفعول ہے اور وہ حرام زادہ ڈرائیور اس کا فاعل یعنی ٹاپ۔وہ ایک عجب کرب میں یہ سوچ سوچ کر مبتلا رہی کہ کیا کوئی اعلٰی خاندان کا فرد جس کی تعلیم باہر کی ہو اور جس کا گھرانہ بھی بہت معقول اور معاشرے میں شریف اور باوقار ہو وہ اپنے سے بے حدکم تر حیثیت کے ملازم کے ساتھ جنسی تعلق کی ان رزیل ذلتوں کی کھائی میں گر سکتا ہے۔اسے قرآن کریم کی سورۃ التین کی چوتھی اور پانچویں آیت یاد آگئی جس میں اللہ سبحانہ تعالیٰ فرماتے ہیں کہ" ہم نے انسان کو خوب سے خوب تر حالت میں پیدا کیا مگر ان میں کچھ ایسے بھی ہیں جو پستیوں کی گہرائی میں جا گرتے ہیں"۔انسانی تعلق بالخصوص کسی ازدواجی تعلق میں کوئی بریک پوائنٹ یا کوئی ٹپنگ پوائنٹ اگر ہوتا تو عنادل اور محاسن کے تعلق میں یہی انکشاف ، یہ نقطہء ادراک وہ آخری تنکا تھا جس نے اونٹ کی کمر توڑ دی۔

    ۲

    کڑواہٹ اور بے لطفی کہ ان ہی ایام میں ایک ایسی دعوت آگئی جس میں نہ جانا اس کے اختیار کی بات نہ تھی ۔اس دعوت میں جانے کا اس کا کوئی موڈ نہ تھا ، مگر بڑی بھابھی کی ضد کے آگے اسے مجبوراً ہتھیار ڈالنے پڑے اس نے محاسن کے اپنے اور فروزاں کے لیے ااپنی ہی کسی دوست کے بیوٹی پارلر پر اس سے پوچھے بغیر ٹائم تک لے لیا۔ دعوت کا معاملہ یہ تھا کہ اس کی بڑی بھابھی کی سب سے چھوٹی بہن عارفہ کی شادی تھی۔اس شادی میں اس کے نہ جانے پر خاندان میں بہت خرابیاں ہوتیں۔

    اس کی امی نے مرتے وقت اسے وصیت کی تھی کہ اس خاندان میں وہ ہی ان کی اصل وارث ہے جو بھی ہوجائے وہ خاندان کو سینت، سنبھال کر رکھے گی،اسے بکھرنے نہیں دے گی۔کاش اس کی امی ان دنوں اس کی روح جس عذاب میں مبتلا تھی اس کا کوئی ادراک رکھتیں اور دنیا سے وقت رخصت اس کے ناتواں کندھوں پر یہ بار گراں نہ ڈالتیں۔

    وہ اپنی بھابھی اور فروزاں کے ساتھ پارلر تیار ہونے گئی تھی۔وہاں اس کی تیاری اور حسن کو دیکھ کر کسی لڑکی نے جملہ کسا کہ " محاسن لگتا ہے آج کی رات تو ع غالبؔ کے اڑیں گے پُرزے تو فروزاں نے بھی اس کی جانب سے جواب دیا کہ " ہماری محاسن بھی کم نہیں ع جلا کر راکھ نہ کردوں تو داغ نام نہیں "۔ان کی اس جملہ بازی اور پنڈال میں پہنچنے میں تاخیر کو مدنظر رکھتے ہوئے اس کی بھابھی نے کہا " لڑکیو بند کرو یہ انتاکشری اور جلدی سے ہال میں پہنچو کیوں کہ بارات اب بس گھر سے نکلنے والی ہے " ۔اس پر محاسن نے آہستہ سے ناک میں روبی کی نتھنی پہنتے ہوئے کہا " بھابھی یہ شاعری والی چیز کو بیت بازی کہتے ہیں انتاکشری تو گانوں کی ہوتی ہے " ۔

    اس رات محاسن نے فلاور موٹفس کے بارڈر والی را سلک کی گہرے مرون رنگ کی سا ڑھی گردن کے پیچھے اور کمر پر باندھی ہوئی ڈوریوں والے چھوٹے چھوٹے سے بلاؤز کے ساتھ پہنی تھی، کمر میں سونے کی کردھانی،مانگ میں راجھستانی کندن ٹیکا اور گلے میں نورتن کا موتیوں والا ہار اس سجاوٹ کو اور بھی تکمیل کے انتہائی دل فریب مقام تک ہاتھ تھام کر لے آئے تھے ۔ چلتے وقت فروزاں نے کار میں اس سے مذاق کیا کہ " کہیں ایسا نہ ہو بھول میں دولہا ، دلہن کی جگہ اسے کار میں بٹھا کر لے جائے" ۔ جس پر محاسن نے زمانے بھرکے دکھ اپنی آواز میں سمیٹ کر کہا " ایسی ہماری قسمت کہاں، ہمارا دولہا ہی ہمیں برت لے تو بھی بہت ہے" ۔ اس جملے پر فروزاں نے بہت آہستہ سے کہا :" I feel your pain.Should I talk to your Dad about this ?!"۔(مجھے تمہارے دکھ کا ادراک ہے۔کہو تو میں اس کا تذکرہ تمہارے والد سے کروں) جس پر محاسن نے بہت آہستہ سے کہا " Not till I ask you to tell him my sorrows"( نہیں، اس وقت تک نہیں جب تک میں خود تمہیں اپنے دکھ انہیں بیان کرنے کا کہوں)۔

    بارات کے آنے سے پہلے ہی اسے عنادل کا ایس ایم ایس آگیا کہ وہ کمپنی کی کسی میٹنگ میں اپنے باس کی مصروفیت کی وجہ سے اس کی نمائندگی کرنے لاہور جارہا ہے۔ کل وہ دفتر سے سیدھے گھر آئے گا۔ وہ سب کو بتادے کہ اس کا انتظار نہ کیا جائے محاسن کا دل چاہا کہ اس کی اس بہانے بازی پر وہ فون کرکے اسے بے نقط کی سنائے اور جتلادے کہ وہ اپنے یار کے ساتھ غلاظت کے کس دھندے میں مصروف ہوگا۔ایک عجب نفرت اور انتقام کے جذبے نے اس میں اس پیغام کو پڑھ کر سر اٹھایا مگر اس نے تہیہ کیا کہ وہ اپنی اس کیفیت کا راز کسی پر کھلنے نہیں دے گی کم از کم ان مہمانوں میں۔

    شادی میں بہت لوگ آئے تھے اور فرحان بھی اس کے والد کے ساتھ آیا۔ سیاہ پن اسٹرائپڈ سوٹ اور سفید قمیص پر سرخ بو ٹائی لگائے ہوئے۔ہاتھ میں نکاراگوا کا بنا ہواLa Aroma de Cuba Mi Amor دھیمے دھیمے جلتا ہوا قیمتی سگار۔ جس کی خوشبو وہاں فضاؤں میں بکھرے بہت سے پرفیومزپر حاوی ہوگئی تھی۔ ۔فروزاں نے اسے راستے ہی میں بتایا تھا کہ جمیل سیٹھ نے کہا ہے کہ جب بارات آجائے تو وہ انہیں فون کردے۔ان سے دیر تک نہیں بیٹھا جاتا وہ فرحان کے ساتھ آجائیں گے۔ اسے بھی وقاص اور رضوانہ کی جانب سے دعوت ہے۔اسے لگا کہ اس تقریب میں کہیں سے ہالی ووڈ کا اداکار جارج کلونی بھولے بھٹکے آگیا ہے۔ وہ اسے بہت اچھا لگتا تھا۔ اس کی دو فلمیں . 'From Dusk Till Dawn' اور . 'Confessions of a Dangerous Mind اس نے کئی کئی مرتبہ دیکھی تھیں ۔

    نکاح کی اس دعوت میں اگر بہت سے مردوں اور عورتوں نے محاسن کو دیکھا اور ا س کے حسن، سجاوٹ اور طرح داری کی سب ہی نے داد دی تو کچھ ایسی عورتیں بھی تھیں۔ا جنہیں اپنے میاں ،فرحان کے مقابلے میں ایسے ہی لگے جیسا قیمتی کھادی سلک کی موجودگی میں کفن کا کورا لٹھا لگتا ہے۔

    اس کے ابو تو وہاں لوگوں سے ملنے جلنے میں لگ گئے۔ فرحان البتہ ایک کونے میں شامیانے کی طرف پشت کرکے تنہا بیٹھا رہا۔ محاسن کو جانے کیوں یہ گمان گزرا کہ اس کی نگاہیں اسے بے صبری سے تلاش کررہی ہیں۔ دھیمے دھیمے اپنے اندر ہی اندر سلگنے کی جو عادت محاسن کو پڑگئی تھی اس کا اس نے پورا مزہ لیا اور وہ جان بوجھ کر اسے نظر انداز کرکے عورتوں کے جھرمٹ میں گھسی رہی ۔ان ہی جھرمٹوں کے درمیاں سے اسے کبھی دوسری لڑکیوں کے شانوں کے اوپر سے تو ان کی بانہوں کے خلاوؤں سے سب کی نگاہوں سے بچ کر اسے تکتی رہی۔ اسے یہ بھی معلوم ہوگیا کہ فرحان نے نہ صرف دیکھ لیا ہے بلکہ تصدیق کے طور پر اس نے اس کے بڑے بھائی وقاص اور اس کی بڑی بھابھی رضوانہ سے پوچھ بھی لیا ہے کہ "محاسن اور عنادل نہیں آئے کیا۔ دونوں دکھائی نہیں دے رہے "جس پر رضوانہ نے اسے بتایا کہ محاسن تو آئی ہوئی ہے کہیں لڑکیوں سے ہنسی ٹھٹھول میں لگی ہوگی مگر عنادل شاید نہ آئے۔ وہ لاہور گیا ہوا ہے ۔محاسن کو اپنی بھابھی کی اس راز افشانی پر کچھ بے لطفی بھی محسوس ہوئی ۔اچھا تھا موصوف اسے تلاش کرتے۔کچھ بے چین ہوتے۔

    کھانے کا اعلان ہوا تو بے تاب روحیں ماحضر تناول کرنے کے لیے ٹوٹ پڑیں، ۔ محاسن نے البتہ تصاویر کھنچواتے ہوئے اسے اسٹیج پر دیکھا اور اسے لگا کہ شاید فرحان نے یک فلائنگ کس بھی اس کی جانب بلند کیا جس پر محاسن نے جھوٹ موٹ کی دور ہی سے اسے آنکھیں بھی دکھائیں اور ٹھینگا بھی۔رضوانہ بھابھی گھسیٹ کر اس کے ابو کو ان کے انکار کے باوجود کھانے کی میز پر لے گئی اور محاسن کی ڈیوٹی لگائی کہ وہ خود بھی کھالے اور جمیل انکل کے کھانے کا بھی خیال رکھے۔ اس کے ابو تو کھانے کو دوران کسی سے گفتگو میں مصروف ہوگئے مگر جب محاسن کسی دور کی ٹیبل پر کھانا لینے گئی تو اسے اپنی پشت پر سرگوشی کے انداز میں یہ جملہ سنائی دیا

    "کیا آج یہاں دو شادیاں ہیں؟"۔ یہ فرحان تھا

    "غور سے دیکھئے شادی بھی ایک ہے اور دلہن بھی ایک ہے "محاسن نے اپنی بڑی بڑی نگاہوں کو اس پر مرکوز کرتے ہوئے کہا۔ اسے لگا کہ دونوں کی نگاہیں ایک دوسرے پر پسندیدگی سے جم کر رہ گئی ہیں ۔وہ کچھ ہڑ بڑائی بھی کہ کہیں یہ سب کچھ کوئی سن نہ لے ،دیکھ نہ لے مگر انبوہ آوارگاں تو پیٹ کا ایندھن پلیٹوں میں جمع کرنے میں یوں مصروف تھا ۔ دور تک انہیں کوئی دیکھنے اور سننے والا دکھائی نہ دیا جس سے اس کی جان میں جان آئی

    " شادی بھلے سے ایک ہو دلہنیں دو ہیں "فرحان نے اس کی طرف اپنی پلیٹ بڑھاتے ہوئے کہا۔ محاسن نے اس حرکت کو تقریباً نظر انداز کرتے ہوئے چوکے بغیر ا س کے پسندیدہ شاعر مصطفےٰ زیدی کی نظم کا ایک مصرعہ پڑھ ڈالا

    وہ کہے گی اپنی باتوں سے اور کس کس پر جال ڈالے ہیں

    " جس کا جواب اسے بھی اس ہی نظم کے دوسرے مصرعے کی صورت میں مل گیا کہع عشق میں اے مبصرین کرام، یہی ٹیکنیک کام آتی ہے اور یہ ہی لے کر ڈوب جاتی ہے۔(مصطفٰے زیدی کی نظم فرہاد ۔۔کوہ ندا)

    " تو آج حضرت کا ڈوبنے کا موڈ ہے؟"۔ محاسن نے اس کی پلیٹ میں تھوڑی سی بریانی اور ایک کباب رکھتے ہوئے کہا۔

    "اکیلے نہیں " وہ بھی کب باز رہنے والا تھا۔

    "ڈھونڈ لیجئے مسٹر جارج کلونی یا مسٹر وی ٹو کورلونی( امریکن فلم گاڈ فاد ر میں مارلن برانڈو کے کردار کا نام)آج تو یہاں بہت شکار ہے"محاسن نے بریانی کا ایک چھوٹا سا نوالہ منھ میں رکھتے ہوئے کہا۔

    "شیر بھوکا مرجاتا ہے مگر گھاس نہیں کھاتا۔"اس نے پسندیدگی کی ایک اور بھرپور نگاہ ڈالتے ہوئے جب یہ جملہ کہا تو محاسن کی بے اختیار ہنسی کچھ اس انداز میں چھوٹی کہ بریانی کے کئی دانے سیدھے اس کی قمیص اور کوٹ پر چپک گئے۔وہ اس بات سے بہت ہی خفت محسوس کرنے لگی اور معافی مانگی تو اس نے کہا کہ نہیں اس کا جرمانہ دینا ہوگا۔

    " Any laundary of your choice sir"( آپ کی پسند کی کوئی بھی لانڈری) محاسن نے پیشکش کی۔

    No washing of dirty linen in public. My place tonight and a few drinks ,lot of music and some heart to heart talk. I know you have been very distressed lately ( ہم اپنے گندے کپڑے سب کے سامنے نہیں دھوتے۔آپ میرے ہاں آئیں گی۔ابھی اور اس وقت، کچھ پینا پلانا،بہت سا میوزک، کچھ دل سے دل کی بات۔ مجھے علم ہے کہ آپ کچھ دنوں سے بہت رنجور ہیں )

    آپ کو میرے بارے میں اتنا سوچنے کی اجازت کس نے دی ہے؟ محاسن نے اس کے مشاہدے کا توڑ کرنے کے لیے ایک عجب جارحانہ انداز اختیار کیا۔

    اس سے پہلے کہ وہ کوئی جواب دیتا اس کا بھائی وقاص وہاں آگیا اور فرحان کو اپنے ابو کے پاس کسی سے ملانے لے گیا۔مرد کا دھندہ پانی بھی دعوتوں میں چلتا رہتا ہے ۔ اس دوران ایک دو اور خواتین آگئیں اور محاسن ان سے بات چیت میں لگ گئی۔ جب اس کی نگاہ تیزی سے اپنی جانب واپس آتے ہوئے فرحان پر پڑی تو وہ ان سے علیحدہ ہوکر خود بھی اس کی طرف چلنے لگی۔ اس نے محاسن کو تقریباً حکم دیتے ہوئے کہا کہ وہ کار لے کر دروازے پر آرہا ہے ۔ وہ بھی اپنے ابو کے ساتھ بہانہ کرکے بیٹھ جائے وہ اس کے ابو کو گھر پر اتار کر اسے اپنے گھر لے جائے گا ۔ اس معلوم ہے آج رات اس کا میاں عنادل شہر سے باہر گیا ہے لہذا اسے تردد کرنے کی کوئی ضرورت نہیں۔

    محاسن کو وہاں سے رخصت کی اجازت ملنے میں بہت رکاوٹ کا سامنا کرنا پڑا۔عنادل کی غیر موجودگی کی وجہ سے اس کے پاس یوں دلہن کی رخصتی سے پہلے جلد چلے جانا اس کی بھابھی کو بھی کچھ اچھا نہ لگا۔ وہ تو خیر ہو فروزاں کی جس نے انہیں سمجھایا کہ عنادل سے ناچاقی کی وجہ سے محاسن کا سب کو چھوڑ کر یوں چلے جانا موڈ کی خرابی اور گھر اکیلا ہونے کی وجہ سے ہے۔

    جب وہ کار میں پچھلی سیٹ پر بیٹھی تو اس نے نوٹ کیا کہ فرحان نے رئیر ویو مرر کا رخ اس کے چہرے پر مرکوز کردیا تھا۔اسے بہت الجھن ہوئی کہ وہ سارا راستہ اس کی پچھلے کئی دنوں سے طاری اداسی کا اور عنادل کے نہ آنے سے اس پر مرتب ہونے والے اثرات کا جائزہ لیتا رہے گا۔شادی کے مقام سے ابو کے گھر تک وہ بہت خاموشی سے کار کی کھڑکی سے باہر دیکھتی رہی۔اس کا ارادہ تھا کہ وہ اپنے ابو کے ساتھ ان ہی کے گھر اتر جائے گی اور انہیں عنادل سے تعلق ختم کرنے کے بارے میں اپنی رائے سے آگاہ کرے گی مگر پھر اس نے یہ سوچ کر کہ یہ فریضہ وہ فروزاں کو ہی انجام دینے دے تو بہتر ہوگا۔ فروزاں کو جمیل سیٹھ کے موڈز اور موقع کی مناسبت کا شریک حیات ہونے کی وجہ سے اس سے بہتر اندازہ رہتا ہے۔

    ابو کاگھر آیا تو ان کے اترتے وقت اس نے کمال چالاکی سے انہیں باور کرایا کہ وہ محاس کو جاتے جاتے اس کے گھر اتار دے گا۔ اک بارگی محاسن کے دل میں آئی کہ وہ بھی اپنے ابو کے ساتھ کار سے اتر جائے مگر جب فرحان اگلی سیٹ کا دروازہ کھول کر اس کے لیے منتظر کھڑا رہا تو وہ یہ سوچ کر بھی کہ اس نے اتنی ضد اور اشتیاق سے اس کو ساتھ لے جانے کی ضد کی ہے لہذا وہ کچھ دیر اس کے پاس بیٹھ کر واپس آجائے گی ۔ اس سے بات چیت کرکے ممکن ہے اس کے دل کا بوجھ ہلکا ہوجائے اور وہ عنادل کے بارے میں کسی درست فیصلہ پر پہنچ جائے۔ کچھ دور جاکر گلی کے موڑ پر فرحان کا اشارہ پاکر وہ پچھلی سیٹ سے اتری اور وہ چپ چاپ ڈرایؤر سیٹ کے برابر اپنی ساڑھی احتیاط سے سمیٹ کر بیٹھنے لگی۔ دروازہ بھی خود ہی بند کرنے کی کوشش کی تو فرحان نے اس کی ساڑھی کا پلو جو باہر لٹک رہا تھا ایک چاؤ سے تھام کر اس کی گود میں رکھ دیا ۔۔

    دوران سفر سارا راستہ فرحان اس کے ہاتھ تھامے اس کی انگلیوں سے کھیلتا رہا اور وہ یہ سوچتی رہی کہ آج رات اگر اسے عنادل دیکھ لیتا تو کیا وہ اپنی پرانی روش ترک کرکے اس سے ٹوٹ کر پیار کرتا۔اسے یاد آیا کہ وہ اپنی شب عروسی کو بھی کچھ کم حسین نہیں لگ رہی تھی اور اس کے بعد بھی ایسی کئی راتیں آئیں جس میں اس کا حسن اور سجاوٹ دیکھ کر تو کچھ پہاڑ بھی اپنی جگہ سے سرک کر اس پر والہانہ انداز میں جھک جاتے۔اسے گہری گہری سوچ میں ڈوبا دیکھ کر ایک آدھ مرتبہ فرحان نے پوچھا بھی مگر وہ طرح دے گئی اور کہنے لگی کہ " اسے سن ساٹھ کی دہائی کی ایک فلم بہو بیگم کی وہ غزل ع دنیا کرے سوال تو ہم کیا جواب دیں ۔۔مشکل ہو عرض حال تو ہم کیا جواب دیں۔اس نے اپنی کار روک کر اپنے ایم پی پلئیر پر کہیں سے ڈھونڈ کر لگا دی۔"

    غزل ختم ہوئی تو محاسن نے بہت دبے لفظوں میں اس سے پوچھا کہ "اس کا یوں رات کو فرحان کے گھر اکیلے آنا ٹھیک ہے؟"

    "اکیلی تو وہ کئی دفعہ آئی ہے اس لیے اس کا اعتراض وقت پر ہے تنہا آنے پر نہیں"۔ فرحان نے اس پر اپنی نگاہیں مرکوز کرتے ہوئے کہا۔

    " چوکیداربابا غلام رسول کیا سوچے گا؟ "محاسن نے ہلکے سے اپنے خدشے کا اظہار کیا۔

    "ڈونٹ وری سائیڈ والی کھڑکی پر بلائنڈ لگا ہے۔ وہ کار کچن کے دروازے سے لگا دے گا اور چوکیداربابا غلام رسول کو وہ لان کے دوسری طرف رکھی پانی کی مشین چلانے بھیج دے گا۔ وہ خاموشی سے کار سے اتر کر کچن کے راستے گھر کے اندر چلی جائے۔واپسی پر بھی یہی انتظام کرلیں گے"۔ فرحان نے اسے تسلی دی۔

    "لگتا ہے یہ سب کچھ مجھے وہاں دیکھ کر ٹھان لیا تھا تم نے فرحان؟! "محاسن نے اسے جتلایا۔

    "ایکزیٹ لی۔" اس نے بھی شرارت سے جواب دیا۔

    کار کے بنگلے کا دروازہ کھلتے ہی دو عدد بڑے سے کتے جن میں ایک تو ڈوبر مین تھا اور دوسرا ایک روٹ وائلر کار کی جانب لپکے۔ یزی برونو، ایزی ڈُوبی " فرحان نے انہیں پیار کرتے ہوئے آہستہ سے کہا " مائی ڈیئر کریو ٹیک یور اسٹیشنز وی آر ریڈی فار ٹیک آف"۔۔۔۔اس کا یہ حکم سنتے ہی دونوں کتے دو مختلف سمتوں میں چل پڑے۔اس دوران ایک ہلکی سی بھونکنے کی آواز محاسن نے گھر کے اندر بھی سنی۔

    دروازہ کھول کرجب وہ داخل ہوئی تو اس کا استقبال ایک کتیا نے کیا۔قریب تھا کہ وہ چیخ پڑتی فرحان بھی اندر آگیا اور کہنے لگا "او مائی برگنڈی بے بی ( فرانس کے علاقے برگین ڈی کے علاقے کی شراب کے نام سے منسوب ایک رنگ جو گہرا سرخ مگر قدرے سیاہی مائل ہوتا ہے ) ۔بے بی یو ٹیک یور اسٹیشن۔کوئیک۔ وی ہیو گیسٹ۔ آئی ڈڈ مس یو"۔ وہ کچھ دیر اور کبھی فرحان تو کبھی محاسن کے گرد سونگھ کر چکر لگاتی رہی اور پھر خاموشی سے دم ہلاتی ہوئی غائب ہوگئی۔

    گھر کے اندر ایک دھواں دھواں سی خوشبو چار سو پھیلی تھی محاسن کو پتہ تھا کہ یہ خوشبو اعلیٰ قسم کے بخور کو جلانے سے سارے ماحول پر چھاجاتی ہے ۔اس نے پوچھا کہ اس نے ان تین کتوں کو یہ کیوں کہا کہ " مائی ڈیئر کریو ٹیک یور اسٹیشنز وی آر ریڈی فار ٹیک آف( میرے ساتھیو اپنی جگہ پر تشریفرکھو اب ہم پرواز کرنے والے ہیں) یہ تو’’ کپتان جہاز کو فضا میں بلند کرتے ہوئے اپنے کیبن کریو کو کہتا ہے۔"

    اس نے بتایا کہ ڈُوبی جو چھ ماہ کا روٹ وائلر ہے وہ تو بابا غلام رسول کے پاس جاکر بیٹھ جائے گا۔ رات بھر ایک خونخوار کیفیت اس پر طاری رہے گی اور وہ اس کا معاون بن کر چوکیداری کرے گا۔ برونو جو ڈوبر مین ہے لان کے ساتھ چھجے پر جا بیٹھے گا۔ اس سے بچ کر کسی کا اندر آنا ناممکن ہے۔ برگنڈی جو مادہ ڈوبرمین پنشر ہے وہ گھر کے مین دروازے کی کھڑکی پر جاکر بیٹھ جائے گی۔

    محاسن کو لگا کہ فرحان کی ساری زندگی میں ایک ترتیب اور سلیقہ ہے کیا ہی اچھا ہوتا اگر وہ ہمت کرکے اپنے ابو کو اس سے شادی پر رضامند کرلیتی۔اس کی امی اگر زندہ ہوتیں تو وہ عنادل کا رشتہ ہرگز منظور نہ کرتیں۔ یہ رشتہ اس کی منجھلی بھابھی نے جانے کہاں سے ڈھونڈ کر نکالا تھا۔ وہ کم بخت خود تو کہیں دفعہ ہوگئی مگر اس کی زندگی کو روگ لگا گئی۔

    جب وہ خواب گاہ میں داخل ہوئی تو اس نے دیکھا کہ اس سفید کمرے میں ہر شے سفید رنگ کی تھی۔ فرنیچر، تصویوروں کے البم حتی کے میوزک سسٹم اور اسپیکر بھی سفید تھے جن کے اجلے پن کو گرے رنگ کے بارڈرز نے کمرے کے باقی ماحول سے ذرا جدا کردیا تھا۔ کمرے میں اس رنگ کی کثرت کی وجہ سے ایک کشادگی اور ٹہراؤ کا احساس ہوتاتھا، اسے ایک ایسا بستر دکھائی دیا جس پر ایک قیمتی کھیس جس کا مجموعی تاثر نیلا اور سرخ آتا تھا۔ بچھا تھا۔ اس پر ایک بہت ہی نفیس سا کمفر ٹر بھی ایک سلیقے سے تہہ کیا رکھا تھا۔ بستر کے عین سامنے فرحان کی اسی سوٹ میں ایک قد آدم تصویر تھی اور بستر کے عین اوپر لٹکی دھیمی روشنیوں کے دو خوبصورت شیشے پر گہرے جامنی اور نیلے نیلے رنگ کے گلوبز کے درمیان سفید تختی جس کا بارڈر سنہرا تھا سیاہ حروف میں لکھا تھا

    "Wear cute pyjamas to your bed...You never know who

    you'll meet in your dreams"

    ( بستر میں اپنے شب خوابی کا نفیس لباس پہن کر سویا کریں کیا خبر خوابوں میں آپ کی ملاقات کس سے ہوجائے)

    اس عبارت کو پڑھ کر محاسن مسکرانے لگی۔

    کمرے میں آن کر ا فرحان نے ایک ایسا سوئچ آن کیا جس کی وجہ سے میز پر رکھا ایک چوکور فریم اندر سے روشن ہوکرگھومنے لگا۔اس میں چاروں طرف اس کی امی کی تصویریں لگی تھیں۔ وہ یقیناًکوئی مہارانی لگتی تھیں ، جے پور کی مہارانی گیاتری دیوی جیسی سنجیدہ، حسین اور بنی سنوری۔ ابو اور بہنوں کی تصویریں راہ داری میں جو لاؤنج سے اس کے کمرے تک آتی تھی اس میں دونوں دیواروں پر آویزاں تھیں۔اسی دوران اس نے سوئچ بند کر کے اوپر کا بکس ہٹایا تو محاسن کی آنکھیں حیرت سے کھلی کی کھلی رہ گئیں۔اب جو چھوٹا بکس آہستہ آہستہ گھوم رہا تھا اس میں محاسن کی چار تصویریں لگی تھیں۔ ایک تصویر میں وہ دنیا و مافیا سے بے خبر اپنے دفتر میں بیٹھی کام کر رہی تھی۔بال کھل کر کچھ چہرے پر بکھرے ہوئے تھے۔دوپٹہ بھی پھسل کر کاندھے سے بانہوں تک آگیا تھا۔گورے سڈول عریاں بازو جو حضرت وارث شاہ کو بھی ہیر کا سراپا دوبارہ بیان کرنے پر اکساتے وہ بھی بہت اچھے لگ رہے تھے ۔سیاہ رنگ کے دوپٹے نے ان بازوؤں پر پھسل کر بلاوجہ ہی ایک دربان کا فریضہ سنبھال لیا تھا۔

    اسے یہ خیال ہوا کہ یہ تصویر اس سے چھپ کر اتاری گئی ہے مگرجس میز پر وہ جھکی ہوئی تھی وہ فرحان کے کمرے کی تھی۔دوسری تصویر بوٹانکل گارڈن کی تیسری چانگی ایرپورٹ کی ایک بڑی سی کاسمیٹکس کی دکان میں کھینچی گئی تھی جہاں وہ ہ اپنے لیے میک اپ دیکھ رہی تھی وہ ایک شوکیس پر بے دھیانی میں یوں جھکی ہوئی تھی کہ اس کے سیاہ ٹاپ کو جس کے کشادہ گلے سے جس کی وجہ سے پہنتے وقت اسے ہر وقت کچھ نہ کچھ شکایت رہتی تھی۔ گلے کی اس کشادگی کی وجہ سے اس کے تندرست گورے سینے کا بڑا حصہ باہر کی جانب امڈ پڑا تھا اس کا پینڈینٹ دونوں کی گولائی کی وجہ سے پیدا شدہ دباؤ سے بنی ہوئی ایک لکیر کے درمیان بری طرح جکڑا ہوا تھا ۔اس تصویر میں وہاں دکان میں نسب جا بجا مختلف آئینوں میں اس کے جلوے نے اس تصویر کو ایک گروپ کمپوزیشن کا روپ دے دیا تھا۔ یہ بھی بہت خوب صورت تصویر تھی۔ گردو پیش کے ماحول سے اہل انجمن سے بے نیار اپنی آگ میں جلتی کسی شمع کی تصویر۔چوتھی سنگاپور کے ہوٹل کی لابی کی تھی ۔ریسپشن ڈیسک کی جانب پشت کیے وہ چھت کی جانب دیکھ رہی تھی۔ ان میں سے کوئی بھی تصویر اس نے واپسی پر نہ تو کبھی اسے دکھائی تھی نہ ان کا کوئی تذکرہ وہ کبھی اپنی زبان پر کبھی لایا تھا۔

    "تو جناب نے مجھے مکمل طور پر بدنام کرنے کا ارادہ کیا ہوا ہے؟" محاسن نے اپنا رخ اس فریم سے بدل کر احتجاج اور مدھم سی ناراضگی کو اپنے لہجے میں سمیٹتے ہوئے اس کی جانب دیکھتے ہوئے کہا۔

    "نہ اس دل میں کوئی آپ کے علاوہ آتا جاتا ہے نہ اس کمرے میں کوئی آپ کے علاوہ آنے کی جسارت کرسکتا ہے۔" اس نے یقین دلایا۔

    مجھے دیکھنے دو کہیں ایسا تو نہیں اایک اور چھوٹا بکس اس فریم میں موجود ہو۔ محاسن نے جائزہ لینے کے لیے جب جھکی تو فرحان کو ساون کی راتوں کے دو تندرست چاند بلاؤز کے سرخ و سیاہ شب میں جھمکتے دکھائی دیے۔

    "نو انر بکس ۔۔شیور"( کوئی اندرونی خانہ تو نہیں) محاسن نے شرارت اور بے یقینی سے پوچھا۔

    " اگر کبھی ہوگا تو اس میں صرف آپ ہی کی نیوڈز ہوں گی فرحان نے بھی اسی شوخی اور اعتماد سے جواب دیا۔

    "آگ لگا دوں دی گی تمہارے اس گھر کو اگر ایسا کبھی کیا تو"۔ محاسن نے اس کی اس شوخی کا لطف لیتے ہوئے دھمکی بھرے لہجے میں چیتاونی (وارننگ ) دی۔

    "پھر تو لوگوں کو یہ کن سیپٹ (تخئیل) با آسانی سمجھ میں آجائے گا کہ ع اس گھر کو آگ لگ گئی گھر کے چراغ سے" فرحان نے سرگوشی کی

    "یو آر اے کلر مسٹر فرحان مسٹر وی ٹو کورلونی" محاسن نے اس کے جواب سے محظوظ ہوتے ہوئے کہا تو اس نے آگے بڑھ کر اسے بانہوں میں تھام لیا ۔ پہلے اس کا ٹیکہ ہٹا کر اس کی پیشانی چومی پھر اپنی زبان کی نوک سے اس کی نتھنی کے نیچے اس کی ناک کو چھیڑنے لگا تو اسے اپنے ہونٹوں کی اوندھی محراب پر عجب سی گدگدی محسوس ہوئی اور وہ کھلکھلا کر ہنسنے لگی اور "چھوڑو مجھے " کہہ کر بانہوں سے اسے پرے دھکیلنے لگی۔

    اس کی اس درخواست پر فرحان بہت آہستگی سے یہ کہتے ہوئے علیحدہ ہوگیا کہ " Let me fix up few things for you while you listen to a medley of a thumri " ( میں جب تک آپ کے لیے کچھ چیزوں کا بندوبست کروں تب تک آپ ایک ٹھمری کے ذخیرے سے لطف اندوز ہوں)

    اس نے جب اپنے میوزک پلئیر کو آن کیا تو سب سے پہلے استاد عبدالکریم خانصاحب کی آواز

    میں راگ بھیرویں کی مشہور ٹھمری ع باجو بند کھل کھل جائے بخور کی خوشبو کی ہم رکاب ہوکر ماحول میں دھیمے دھیمے لہراتی فضا میں گونجنے لگی۔شاید وقت کی مناسبت سے یہ ٹھمری ذرا جلد بج پڑی تھی۔جب تک وہ لوٹ کر آتا ٹھمری گانے والوں میں ریتا گنگولی کی باری آچکی تھی۔وہی ایک ٹھمری ،وہی ایک جادو۔

    اس دوران اس نے اپنے گھر کے مردوں کا موازنہ فرحان سے کیا ۔ اس کے والد خالصتاً کاروباری مرد تھے ۔ مہزب اور اوسط تعلیم کے حامل ۔بڑے دو بھائیوں میں بھی اسے کبھی کوئی ایسی بات نہ دکھائی دی جو انہیں اس قبیل کے دوسرے مردوں سے ممتاز کرتی۔ ولید تو جلد ہی امریکہ چلا گیا تھا۔ یہاں وہ کرکٹ کا دیوانہ تھا ۔وہ سوچنے لگی کہ دولت ان کے گھرانے میں فروانی سے موجود ہے مگر وہ بات وہی وصف جسے کلاس کہتے ہیں ان کے ہاں سرے سے مفقود ہے۔ اس کے ہاں کے مرد دولت کا ڈھیر دیکھ کر خوش تو ہوسکتے ہیں مگر اس کے برتنے اور اس کا صحیح استعمال کا انہیں کوئی ادراک نہیں۔اپنے دونوں بھائیوں اور باپ کے گھر میں اسے آرام اور سہولت کہ جملہ لوازمات تو موجود تھے مگر ذوق اور جمالیات نام کی کوئی چیز انہیں دور سے چھو کر بھی نہ گزری تھی ۔ اسے اس حوالے سے اپنے گھرانے میں ایک عجیب سے اجاڑ اور بے لطفی کا احساس ہوا۔

    اس کا اپنے میاں عنادل کو موسیقی کا بہت شوق تھا، سمفنیز اور آپیراز اور بیلٹ کا وہ دیوانہ تھا، کتابیں بھی پڑھتا تھا مگر کرائم فکشن، آؤٹ ڈور کا بھی شوقین تھا مگر اس کی ساری پک نکس اپنے دوستوں کے ساتھ ہوتیں جن میں شاید ہی کوئی عورت دکھائی دیتی ۔ایک دفعہ البتہ اس نے کمرے کی کھڑکی سے کار میں کچھ عورتیں دیکھی تھیں جو اسے اتنی ہی غیر معمولی لگیں جتنے اس کے مرد دوست تھے جو یا تو بہت نسوانیت بھرے ہوتے یا بہت رف، گھناؤنے اور تنو مند۔ سر شام پک نک پر روانہ ہوتے اس قافلے کو اس نے اپنے وارڈ روب والے انکشاف کے بعد اپنے کمرے کی کی کھڑکی سے دیکھا تھا ۔ چونکہ وہ جلد ہی کسی نتیجے پر پہنچنے والی تھی لہذا اس نے اس قافلے میں عنادل کی شمولیت اور ان کے ساتھ روانگی یکسر کو نظرانداز کیا مگر اسے لگا کہ یہ جو چار چھ عورتیں بھی ایک کار میں موجود تھیں وہ بھی ہم جنس پرستوں کا ہی ممکن ہے کوئی ٹولہ ہو۔بہت پہلے اس نے کسی سے سنا تھا کہ اب یہاں بڑے شہروں میں بھی اس طرح کے سب گروپس وجود پذیر ہوگئے ہیں۔

    اپنے خیالات کے سمندر میں ریتا گنگولی کی گائی ہوئی اس ٹھمری کے تنکے کے سہارے بہتی محاسن نے کمرے میں ایک ٹرے اٹھائے فرحان کو داخل ہوتا دیکھا۔ اس کی ساڑھی کی رنگ کی ٹی شرٹ اور گرے رنگ کی سویٹ پینٹ پہنے ہوئے وہ اپنی عمر سے کئی برس کم دکھائی دے رہا تھا۔ اپنا سوٹ اس نے اتار دیا تھا۔اس نے کبھی اسے اس طرح کے لباس میں یوں اپنے مسکیولر بدن کا اظہار کرتے ہوئے نہ دیکھا تھا۔ وہ اسے بہت اچھا لگا۔مردانگی کا ایک پیکر، اس پر مکمل توجہ کی بارش برساتا ہوا ایک آوارہ بادل جو اس کی زندگی کے سلگتے صحرا میں جانے کہاں سے اتنے لدے پھندے مون سون سے اس کے وجود میں لذتوں اور پیار کی روئیدگی پیدا کرنے چلا آیا تھا۔

    وہ ٹرے جو اس نے دونوں ہاتھوں میں تھامی تھی اس ٹرے میں دو تین پیالیوں میں تو مختلف خشک میوہ جات تھے۔کیلی فورنیا کے بڑے سالٹڈ بادام، بھونے ہوئے کاجو، لبا لب بھرے پستہء خنداں: ایک طشتری میں تین چار تازہ تیار کی ہوئیں شوشی رائس کیوبز اور مہکتا ہو ا سی ویڈ جس سلاد جسے ہلکے چاول کے سرکے ،سویا ساس اور سرسوں کے بیجوں سے تڑکا دیا گیا تھا ۔ساتھ ہی برف کی چھوٹی سی چمکتی بالٹی اور ایک جگمگاتا چھوٹا سا چمٹا بھی رکھا تھا۔ دو عدد جام بھی خالی رکھے تھے ۔ اس ساتھ کی میز پر جمانے کے بعد وہ اٹھا اور ایک شیلف کھول کر اس نے ہی بیکی کی جاپانی سنتوری وہسکی نکالی جس کی عمر اس کے لیبل پر نمایاں طور پر اکیس برس درج تھی۔اسے یاد آیا کہ یہ وہسکی اسی کا بھائی ٹوکیو سے واپسی پر لایا تھا اور اسی نے ایک تھیلی میں ڈال کر محاسن کو فرحان کو دینے کے لیے کہا تھا۔ دفتر آتے ہوئے اس نے تھیلی کو کھول کر دیکھا۔وہ اس بات کو نوٹ کرکے مسکرائی کہ وہسکی کے ڈبے کا رنگ بھی اس کی ساڑھی اور فرحان کی ٹی شرٹ سے بڑی حد تک ملتا جلتا تھا۔

    گلاس میں وہسکی ڈال کر جب جام ٹکر ا کر ٹوسٹ کرنے کی باری آئی تو اسی نے کہا "ٹو نائٹ یور بیوٹی ونز دی ہرٹ" جس پر محاسن نے بھی گردن جھکا کر بہت شرماتے ہوئے کہا کہ " ٹو نائٹ فو ر دی نیور اینڈنگ لو"۔پہلا گھونٹ پی کر اس کی طبیعت میں جولانی آئی تو محاسن نے بہت آہستگی سے اپنے کرسٹن لوبوٹن کے سینڈل اتار کر پیر صوفے کے سامنے فٹ ریسٹ پر رکھ دیے۔وہ کچھ دیر ان پیروں سے کھیلتا رہا، کبھی انگوٹھے کے ساتھ والی انگلی میں پڑے چھلے کو آہستہ آہستہ گھماتا اور کبھی اس کے تلووں کا نرم نرم دباؤ سے مساج کرتا ۔

    اس دوران جب اس نے دونوں کے لیے دوسرا جام بھرا تو وہ سفید فٹ ریسٹ جس پر اس نے پیر جمائے ہوئے تھے اسے ایک سلیقے سے پرے کرکے اس کے قدموں میں آن کر بیٹھ گیا۔جس پر محاسن نے اسے حکم دیا :

    "جاؤ اپنی جگہ پر سامنے جاکر بیٹھ جاؤ"

    "وہاں اکیلا بیٹھ کر میں کیا کروں؟"

    "بس مجھے دیکھو۔وہ مجھے کبھی نظر بھر کے نہیں دیکھتا۔"

    "وہ کون؟"

    "عنادل۔"

    "میں تو تمہیں اس وقت بھی چار سو اپنے اردگرد دیکھتا ہوں جب تم مجھ سے دور، اپنے گھر ہوتی ہو۔"

    "فی الحال تو میں موجود ہوں،بس مجھے جی بھر کے دیکھو۔"

    "اتنی دور سے؟"

    "ہمارے پیار میں فاصلوں کی بہت اہمیت ہے۔"

    "فاصلے تو تم سے عنادل نے برتے ہیں اور تم اس کی سزا مجھے دے رہی ہو۔"

    "دیکھو مجھے مینٹلی ہراساں مت کرو۔ میں آج بہت ویک ہوں۔"

    اپنا جام تھامے ،لطف کے سنگھاسن (تخت) پر مہارانی بنی،حسن دل فریب کے جس کا رنگ روپہلا اور روپ رسیلا تھا ایسا لگ رہا تھا جیسے کوئی چنگاری ہنس کے دھیمے دھیمے اپنی آگ سے شوق نظارہ میں اچھل رہی ہو۔فرحان کو پتہ ہی نہ چل پارہا تھا۔وہ ہلکی ہلکی مستی بھری نگاہ اس پر ڈالتا رہا۔اس نے سوچا کہ یہ چنگاری دل پر کب گرتی ہے اور کب چپ چاپ رخصت ہوتی ہے یہ دنیا کو کیا پتہ

    ۔ تھوڑی دیر بعد اس نے نوٹ کیے کہ پسینے کے کچھ شریر قطرے محاسن کے بھرے بھرے پیار کے پاکٹ ایڈیشن جیسے ہونٹوں کے اوپر اور ٹھوڑی پر ویسے ہی جمع ہوگئے ہیں جیسے جام کی بیرونی سطح پر ایئر کنڈیشنڈ اور شراب میں تیرتی برف کی کیوبز کی وجہ سے آبی بخارات موتیوں کی صورت میں جمع ہوگئے تھے۔اس نے ہاتھ بڑھا کر میوزک سسٹم اس لیے آف کردیا کہ اسے لگا کہ محاسن کی ہلکی ہلکی' اوں ' ' اوں ' ا س میں دب رہی تھی۔ یہ 'اوں' 'اوں ' اسے ایک ایسی عورت کی ماحو ل کی پیدا کردہ اچانک میسر آئی اس خود لذتی کا پر لطف احتجاج محسوس ہوئے ۔ یہ وہ عورت تھی جو برسوں سے محبت اور اپنائے جانے کی ناآسودہ خواہش جو مجبوری حالات کی وجہ سے کھل کر رو بھی نہ پائی ہو ۔۔۔ ورنہ کیا بات تھی جس بات نے اسے رونے نہ دیا۔وہ انہیںآوازوں کے تعاقب میں بہت خاموشی سے اپنی جگہ سے اٹھا اور اس کے قدموں میں اس کے پہلو پر سر رکھ کر بیٹھ گیا۔فٹ ریسٹ پر اس کے پاؤں کی درمیانہ انگلی میں پھنسے چھلّے کو اتارنے کی کوشش کرنے لگا۔

    محاسن نے تیسری جام کی فرمائش کی تو اس نے یہ کہہ کر اسے رد کردیا کہ " Too much, too soon in drinks never works well with the beginners"(بہت جلد ، بہت زیادہ نئے پینے والوں کے حق میں مفید نہیں ہوتے)۔

    " I am a desert. A scorching desert of love when it comes to being satiated"( جب بات سیراب ہونے کی ہو تو میں صحرا ہوں، پیار جھلستا صحرا)

    آپ کی کچھ تصویریں لے لوں؟ فرحان نے اجازت مانگی

    نیوڈز؟ محاسن نے پوچھا

    یور ٹیک ( جو آپ کا دل چاہے) فرحان نے جواب دیا۔

    "ایک شرط پر کہ ہر تصویر مجھے دو گے میں فیصلہ کروں گی کہ کون سی تم رکھو گے۔ آپ کا ڈیجیٹل کیمرہ میں اپنے ساتھ لے جاؤں گی"۔

    " You indeed are an oasis of consciousness when it comes to self-control "(آپ یقیناًخود آگہی کا ایک نخلستان ہیں جب خود اختیاری کا معاملہ ہو تو) فرحان نے اسے جتلایا۔

    آئی ایم ریڈی بے بی۔ محاسن نے اسے اجازت دی

    چند تصویروں کو بعد جو اس نے مختلف انداز میں اپنے کیمرے میں محفوظ کیں تو کسی پروفیشنل ماڈل کی طرح پوز بناتے ہوئے جب اپنے پیر وں کو پھیلا کر انگڑائی کی محراب بنائی تو فرحان کو لگا کہ اس کا کیمرہ ، دل نگاہیں سبھی سلگ اٹھے ہیں۔اپنے بلاؤز کی آستین کی ڈوری کھولنے کے لیے ہاتھ بلند کیے تو فرحان نے اسے کہا "فریز "اور پیچھے جاکر اسے گردن پر اور کانوں پر بہت بوسے لیے کانوں کی لو کو ہونٹوں میں دبا کر جب وہ اپنے ہونٹ کاندھے پر لایا تو ڈوری کچھ تو محاسن نے کھول دی تھی کچھ دانتوں نے کھول دی وہ بے نیازی سے کھل کر آدھی کمر کی جانب تو آدھی سامنے کے رخ پر ڈھلک گئی۔ اس کی اطالوی کومیٹ برا کی کلیئر اسٹریپ کو ہٹا کر فرحان نے چومناشروع کیا تو اس کی سابقہ "اوں اوں" اب ایک " اوہو" اور ہلکے سے سرگوشی کے انداز میں کہے گئے الفاظ "مائی فرو بے بی" میں بدل گئے تھے۔اسے ہوش اس وقت آیا جب فرحان کے دانت اس کے شانے پر بری طرح پیوست ہوگئے تھے۔وہ ایک تڑپ سے علیحدہ ہوئی تو ساڑھی کا پلو اور بلاؤز کی ڈوری اور برا کی اسٹریپ سب پھسل کر اس کے بازو کے درمیان اس طرح آگئے کہ سینے کا کچھ حصہ ڈھلکے بلاؤز سے باہر جھانکنے لگا۔اس حالت میں فرحان نے اس کے کئی شاٹس کیمرے میں محفوظ کیے۔

    وہ اپنی برا کو پھر سے اپنے شانے پرچڑھاکر، بلاؤز کی ڈوری کو باندھ کر اور پلو کو کاندھے پر چن کر آئینے کے سامنے کھڑی ہوکر، اپنی نتھ ،ٹیکا اور کردھانی اتار کر میز پر خود کو آئینے میں دیکھنے لگی تو فرحان نے اپنا آدھا جام اس کے ہونٹوں کے قریب کردیا اور وارفتگی سے اسے چومنے لگا ۔قربتوں اور بوسوں کا یہ سلسلہ ایک سلیقے سے، اس کی پیہم سپردگی اور تعاون سے اس کے کانوں اور گردن سے پھیلتا پھیلتا شانوں سے نیچے اترتا ہوا اس ایک لمحے میں کچھ ایسا دراز ہوا کہ اسے یہ معلوم ہی نہ چلا کہ حلق سے شراب اور بدن سے کپڑے کب اترے۔ اب وہ یاد کرے تو صرف اتنا یاد پڑتا ہے کہ جس وقت دونو ں بدن مکمل برہنگی کے پیرائے میں پہلی دفعہ ایک ہورہے تھے میز پر رکھے میوزک سسٹم پر ع تم آئے تو آیا مجھے یاد گلی میں آج چاند نکلا جانے کتنے دنوں کے بعد آج چاند نکلا والا گیت بج رہا تھا۔اسے لگا کہ اس رات برسوں سے اس کے ترسے ہوئے دل اور بدن بھی رفاقت کی اس فروانی اور سہولت میں اس کے رقیب بن گئے اور دونوں نے فرحان کو خود سے پرے کرنے میں اس کا کوئی ذرہ بھر بھی ساتھ نہ دیا۔

    صبح جب وہ اٹھی تو بستر سے فرحان غائب تھا۔اسے ساتھ کے کمرے سے دھم دھم کی آواز آرہی تھی۔ صوفے پر اس کے لیے ململ کا ایک دھلا ہوا کرتا رکھا تھا۔ وہ ایک تولیہ اپنے بدن پر لپیٹ کر جب ساتھ کے کمرے میں گئی تو فرحان ٹریڈ مل پر دوڑ رہا تھا۔ اس کا بدن پسینے سے شرابور اور سینے پیٹ اور بازو کے مسلز نمایاں تھے۔وہ ایک پیکر مردانگی لگ رہا تھا۔

    رسمی حال احوال اور مسکراہٹوں کے تبادلے کے بعد وہ غسل کرنے چلی گئی۔شاور کی گرم دھار جب محاسن کے بدن پر پڑی تو وہ دو متضاد خیالات کے کناروں پر کے درمیاں ایک ایسی کشتی کی مانند ڈولنے لگی جسے اس کے ملاح نے بیچ منجھدار میں چھوڑ دیا ہو۔

    ایک خیال تو اس وقت یہ غالب تھا کہ یہ سب کچھ غلط ہوا۔فرحان کو یہ سب کچھ نہیں کرنا تھا۔اس میں وہ خود کو بھی برابر کا دوش دے رہی تھی۔ جس وقت یہ سب کچھ ہوا ،وہ بدستور عنادل کی بیوی تھی ۔ہمیشہ کی اعلیٰ اخلاقی اقدار میں یقین رکھنے والی محاسن کو لگا کہ اس نے امانت میں بہت بڑی خیانت کی ہے ۔ دوسرا خیال تھا کہ یہ سب کچھ ٹھیک ہوا ہے یہ اس نے خود کو ایک جذبہء انتقام کے ہاتھوں مجبور ہوکر فرحان کے حوالے کیا ہے ۔ وہ بھی محبت اور جسمانی جذبات کی تسکین کی متلاشی تھی ۔وہ اپنے ابو سے بات کرکے فرحان سے شادی کرلے گی۔ یہ سب اسی کا تھا۔ اس نے وقت سے پہلے اگر اس کے بدن پر اپنا تسلط جتلایا ہے تو کیا برا کیا ہے ۔ بعد میں بھی تو یہی سب کچھ ہونا تھا۔

    ۔عنادل نے اسے بڑے ظالمانہ طریقے سے انتہائی بھونڈے غیر فطری انداز میں نظر انداز بھی کیا ہے۔ اسے اپنی خواہشات جو کسی طرح بھی قابل قبول نہیں تھیں ان خوہشات کی تکمیل میں اسے دھوکا بھی دیا ہے۔

    اسی دوران اسے غسل خانے کے دروازے پر ایک دستک سنائی دی اس کے ساتھ اسے فرحان کی آواز سنائی بھی دی ۔ اس نے بات سننے کے لیے شاور بند کیا تو دروازہ بھی کھل گیا ہڑبڑاہٹ میں اس نے اپنا رخ دیوار کی جانب کیا تو فرحان نے شرارتی لہجے میں کہا کہ وہ کرتہ صوفے پر ہی چھوڑ آئی تھی۔اس نے سراپا سامنے سے چھپانے کے لیے جب دیوار کا رخ کیا تو فرحان کو لگا کہ فرانس کے مشہور میوزیم لورے میں محبت اور حسن کی دیوی افروڈائٹ کا وہ مجسمہ جسے رومن وینس ڈی میلو کے نام سے یاد کرتے ہیں ایک ادا سے اپنے دور سے آئے ہوئے مدّاح سے شرما کر رخ بدل کر دوسری جانب ہوگیا ہے عین اسی لمحے اس نے دیکھا کہ محاسن کی کمر پر اور کاندھوں پر رات کی وحشتوں کے نشان موجود تھے ایسا ہی ایک بڑا سا نشان اسے اپنے بازو پر دکھائی دیا جو محاسن کی وارفتگی کی حسین نشانی تھی۔ ٹریڈ مل پر دوڑتے ہوئے اس نے کئی دفعہ اس نشان کو خود ہی چوم لیا تھا۔

    محاسن نے یہ نشان اس کے بازو پر اس وقت ثبت کیا تھا جب وہ گہری نیند سو رہا تھا۔ وہ جب درد کی شدت سے تڑپ کر بیدار ہوا تو محاسن اس پر جھکی ہوئی تھی۔ اسے لگا کہ وہ نیند کے عالم میں اسے بہت دیر تک تکتی رہی ۔ ان کے سر کے عین اوپر دو میں سے صرف روشنی کا ایک گلوب جل رہا تھا۔ ڈمر سے اس کی لائٹ بھی محاسن نے مدھم کردی تھی۔جیسا عموماً رات کی فلائیٹ میں کچھ بے خواب مسافر اپنی نشست پر کتاب پڑھنے یا کمپیوٹر پر کام کرنے کے لیے روشن کرلیتے ہیں تاکہ ہم سفر کی نیند مخل نہ ہو۔

    ناشتے کی میز پر محاسن آئی تو کمر پر باندھے ہوئے ایک تولیے پر گیلے گیلے کرتے سے فرحان کو بے باکی اور اپنی قبولیت کی ایک منھ بولتی تصویر سامنے بیٹھی دکھائی دی۔ محاسن البتہ بہت چپ چپ اور کھوئی کھوئی تھی۔ ناشتے کے بعد اس نے اعلان کیا کہ وہ گھر جانا چاہتی ہے۔ وہ دفتر جانے سے پہلے اسے گھر چھوڑدے بالکل اسی انداز میں جیسے وہ یہاں چھپتی چھپاتی آئی تھی۔

    ۳

    ناشتے کی میز پر محاسن آئی تو کمر پر باندھے ہوئے ایک تولیے پر گیلے گیلے کرتے سے فرحان کو بے باکی اور اپنی قبولیت کی ایک منھ بولتی تصویر سامنے بیٹھی دکھائی دی۔ محاسن البتہ بہت چپ چپ اور کھوئی کھوئی تھی۔ ناشتے کے بعد اس نے اعلان کیا کہ وہ گھر جانا چاہتی ہے۔ وہ دفتر جانے سے پہلے اسے گھر چھوڑدے بالکل اسی انداز میں جیسے وہ یہاں چھپتی چھپاتی آئی تھی۔

    گھر آن کر وہ سوگئی۔ تین گھنٹے بعد اٹھ کر جب وہ غسل کررہی تھی عنادل کمرے میں آیا اور سیدھا باتھ روم کا دروازہ کھول کر اسے بہت انہماک سے دیکھنے لگا۔ محاسن نے سوچا کل رات سے اب تک کے یہ عجیب لمحات ہیں۔اس کی عریانگی دو مردوں کی نگاہوں میں کھب کر رہ گئی تھی ۔ وہ ہاتھ پھیلائے جب اسے سمیٹنے کو آگے بڑھا تو محاسن نے انتہائی غصے سے اسے جھڑکا کہ" ڈونٹ یو ڈئیر"۔ وہ اس کی اس جھڑکی سے ڈر کر انہیں قدموں سے واپس پیچھے ہٹ گیا ۔کہنے لگا کہ اس کا باس آیا ۔محاسن کو اس نے درخواست کی کہ وہ تیار ہوکر نیچے ڈرائنگ روم میں آجائے ۔محاسن نے نیچے آکر خانساماں کو اس کے لیے چائے لانے کا کہا۔ باس بھی عنادل کا ہم عمر تھا۔کچھ دیر بعد وہ دونوں رخصت ہوگئےمحاسن اس شش و پنج میں مبتلا رہی کہ وہ عنادل سے اپنی شادی ختم کرنے کے بارے میں براہ راست اپنے بھائی بھابھی سے بات کرے یا فروزاں کو پہلے اعتماد میں لے۔ وہ اپنے ابو کے گھر گئی تو خلاف توقع وہ گھر پر تھے ۔ آج ان کے اینجائنا میں کچھ شدت تھی۔ فروزاں اور اس کا بھائی کچھ ہی دیر پہلے انہیں دل کے ڈاکٹر کو دکھا کر انہیں لائے تھے۔محاسن نے مناسب نہ سمجھا کہ وہ اس موقعے پر اپنا روگ بیان کرنے بیٹھ جائے۔

    جب اس کے ابو سوگئے تو فروزاں نے اس سے پوچھا کہ " وہ رات کہاں تھی۔ اس کے ابو نے اعلی الصبح اسے فون کرنے کو کہا تو اس کے فون پر گھنٹیاں تو بج رہی تھیں پر جواب نہیں مل رہا تھا۔کیا وہ رات فرحان کے ساتھ تھی؟!" ۔ اس لمحے محاسن کو خیال آیا کہ رات سے اس نے فرحان کے ساتھ کار میں بیٹھتے ہی اپنا فون سائلنٹ پر کرکے پرس میں رکھ دیا تھا اور اب تک اس کی خبر نہ لی تھی۔

    اس نے بہانہ تراشا کہ چونکہ عنادل نہیں آیا تھا لہذا وہ پی پلا کر فون کا رنگر سائلنٹ پر رکھ کر سوگئی تھی۔ عنادل کے معاملے میں وہ اب کسی فیصلے پر پہنچنا چاہتی ہے۔فرحان والی بات پر اس نے کوئی ردعمل ظاہر نہ کیا ۔ ممکن تھا کہ کسی قسم کی کوئی وضاحت اس باب میں فروزاں کے شک کو مزید تقویت بخشتی۔ اپنے والد کی طبیعت کا پوچھتے ہوئے جب اس کے علم میں یہ بات لائی گئی کہ ڈاکٹر نے انہیں ماحول کی تبدیلی کا کہا ہے تاکہ وہ بزنس کے جھمیلوں سے دور کہیں باہر چلے جائیں۔ دو دن اس فیصلے میں لگے کہ وہ اپنی سالی کے گھر ایبر ڈین، اسکاٹ لینڈ چلے جائیں۔فروزاں بھی کبھی ملک سے باہر نہیں گئی تھی۔ جب ان کے روانہ ہونے کا دن آیا تو اس کے ابو نے اچانک ضد کی کہ محاسن بھی ساتھ چلے۔

    دو دن سے محاسن نے فرحان سے نہ تو ملاقات کی نہ اس کے فون کا جواب دیا۔ جس دن اس کی روانگی تھی۔ فرحان شہر سے باہر گیا ہوا تھا۔یوں بھی محاسن اسے اپنی روانگی کے بارے میں کچھ بتانے کے حق میں نہ تھی۔ اس کو اس بات سے یک گونہ راحت سی مل رہی تھی کہ اس رات کی حرکت پر اگر وہ کچھ فکر مند رہے، تو اچھا ہے۔اسے واپسی پر کمپنی کے دفتر میں پتہ چلا کہ اسکاٹ لینڈ کے عازمین میں محاسن بھی شامل ہے۔ روانگی کے اس پروگرام کی پیشگی اطلاع محاسن کی جانب سے نہ ملنے کا اسے کچھ ملال ہوا۔

    محاسن نے اس حوالے سے عنادل سے بھی کچھ بات نہ کی جب وہ صبح سویرے کی فلائیٹ پر روانہ ہونے کے لیے اپنا سامان اپنے بیڈ روم میں پیک کر رہی تھی ۔عنادل رات کو ڈرائیور کے ساتھ واپس آیا تو وہ بغیر دستک کمرے میں چلی آئی ۔ خیال تھا کہ وہ اپنے اس سامان کے بارے میں اس سے سوال جواب کرے گی ۔ عنادل نے قمیص اتاری ہوئی تھی اور پشت پر ناخنوں کے کھرچنے کے تازہ نشان تھے۔ عنادل سے اس نے جب ان کے بارے میں پوچھا تو وہ چپ ہوگیا ۔ ایک خفت اور خوف جو ہر مجرم کے چہرے پر رنگے ہاتھوں پکڑے جانے کے وقت ہوتا ہے،وہ اس کے چہرے پر بھی عیاں تھا۔ محاسن جو تقریباً عنادل کے برابر قد کی تھی بہت آہستگی سے اس کے قریب گئی اور صرف ایک جملہ کہا کہ " So you faggot , you dirty bastard , you are with him"( گالی! غلیظ حرامزادے تو تم اس کے زیر تصرف ہو) اس کے ساتھ ہی زناٹے سے اس نے کس کر ایک چانٹا اس کے منھ پر رسید کیا۔ اس نے وہ تمام بکس جو اس کے سامان سے خالی تھے ایک کرکے اس پر پھینکے اور ہر اس حرکت پر صرف ایک جملہ کہا کہ " You dirty bastard . You wore all these for him. Shame on you! I am leaving you" ( حرام زادے۔ یہ سب کچھ تم نے اس کے لیے پہنا ۔ میں تمہیں چھوڑ کر جارہی ہوں)۔

    اس نے اپنی خالہ سے ایبر ڈین، اسکاٹ لینڈ میں جب عنادل کے حوالے سے بات کی تو ان کا مشورہ تھا کہ وہ وقاص کو اعتماد میں لے کر خلع کی درخواست عدالت میں دائر کرے لیکن اگر عنادل کو اسے طلاق دینے میں کوئی اعتراض نہ ہو تو اس بات پر خاموش علیحدگی ایک بہتر فیصلہ ہوگا۔

    فروزاں اور اس کے ابو تو وہاں اسکاٹ لینڈ ہی میں قیام پذیر رہے مگر اس کے ابو نے محاسن کو یہ کہہ کر جلد ہی واپس پاکستان بھجوادیا کہ وہ فرحان کے ساتھ گوانگ زو میں جو صنعتی نمائش منقعد ہورہی ہے اس کا دورہ کرکے دیکھ لے کہ وہاں سے قدرتی آفات کے حوالے سے جو اب ملک میں کثرت سے آنے لگیں جس میں زلزلہ، اور طوفان کے بعد کی تباہ کاریاں شامل ہیں وہاں ان آفات کی تباہ کاریوں کے اثرات زائل کرنے کے لیے امپورٹ کی خاطر کون سی مشینری منافع بخش ثابت ہوگی۔اس نمائش میں انہیں اور فرحان کو جانا تھا۔اس سلسلے میں سب لوگوں سے بات چیت ہوچکی ہے مگر اب ان کی نمائندگی وہ کرے گی۔گوانگ زو تک مختلف فلائٹیں جاتی ہیں مگر وہ خود ایک دفعہ ہانگ کانگ سے انٹر سٹی ٹرین میں سوار ہو کر گئے تھے۔زمینی سفر طویل ہے یہی کوئی پندرہ گھنٹے کا مگر بہت پر لطف محسوس ہوتا ہے ان کی ٹرین سروس بھی بہت عمدہ ہے۔

    چین کے سفر پر روانہ ہونے سے ہفتہ بھر پہلے فرحان نے اسے اپنی مادہ کتیا برگنڈی جو ڈوبر مین پنشر تھی تحفے میں دے دی۔ وہ محاسن کو بہت پسند تھی۔ وہ بتانے لگا کہ اس کتیا پر برونو اور ڈُوبی گھر کے دونوں نر کتوں میں اب کھینچا تانی ہونے لگی ہے۔اس کے دو تین دوست بھی برگنڈی اس سے مانگتے ہیں ۔ اس نے محاسن کو بتایا کہ چونکہ ایک ہفتہ کا عرصہ ایسا ہے کہ وہ اس کی عادات کے بارے میں اسے سمجھانے میں کامیاب رہے گا۔نیا کتا جب گھر میں آتا ہے تو اسے ایڈجیسٹ کرنے میں کیا کچھ کرنا پڑتا ہے ۔ محاسن کا خیال تھا کہ عنادل کو اس پر اعتراض ہوگا مگر اس ایک ہفتے میں وہ گھر پر بہت ہی کم آیا وہ بھی اس کی غیر موجودگی میں۔برگنڈی بھی اس ایک ہفتے میں اس گھر اور محاسن سے خاصی مانوس ہوگئی

    اس سفر میں وہ فرحان کے بہت قریب آگئی۔ عنادل سے طلاق لینے کا مشورہ اس نے بھی دیا۔ اس کی جنسی عادات کے حوالے سے فرحان کو یقین تھا کہ یہ بہت پختہ عادات ہیں۔ ان میں کسی طور تبدیلی ممکن نہیں بلکہ وقت کے ساتھ اس میں اور بھی خرابیاں آئیں گی۔ اس حوالے سے ان میں شادی کے عہد و پیماں بھی ہوئے۔واپسی میں انہوں نے شنگھائی کی سیر بھی کی ۔محاسن کو لگا کہ اس نے ایک مرد کے حوالے سے جو بھی خواب دیکھے تھے ان کی واحد تعبیر اسے فرحان کے وجود میں دکھائی دی۔

    جب وہ واپس آئی تو بھائی وقاص کا رویہ محاسن کے بارے میں خاصا جارحانہ تھا ۔بھابھی بھی سیدھے منھ اس سے بات نہیں کررہی تھیں۔وہ حیران تھی کہ اچانک یہ سب کیوں ہوا۔ فرحان بھی وقاص کے رویے سے بہت نالاں تھا۔ وقاص اس کی بات بات پر تحقیر کرتا تھا۔ چین سے واپسی کے پانچویں دن اسے فروزاں نے فون کیا کہ وہ فوراً ایبرڈین پہنچے اس کے ابو کی طبیعت بہت مضمحل ہے ۔وہ ان کے صحت کے حوالے سے خاصی پریشان ہے۔

    چلنے سے پہلے اس نے عنادل سے طلاق کے بارے میں بات کی۔ اس نے طلاق کے باب میں اس کے سامنے دو شرائط رکھیں۔ایک تو وہ تمام زیورات جو عنادل کی طرف کے ہیں ۔ یہ ا ن کے خاندانی زیورات ہیں یہ سب اس کی پر نانی اور پر دادی سے انہیں کے گھرانے میں موجود رہے ہیں وہ واپس کردے گی بشمول ان کے جوائنٹ اکاونٹ میں موجود رقم کے ۔

    محاسن کو لگا یہ بہت گھاٹے کا سودا ہے ۔جوائینٹ اکاونٹ میں کوئی دو کروڑ روپے موجود تھے۔ جس میں کچھ رقم اس کی اپنی بھی تھی۔ ۔دوسرے وہ اس کی نجی زندگی کے بارے میں حلف لے کر یہ اقرار کرے کہ چاہے کچھ بھی ہوجائے و ہ انہیں کہیں بھی ،کبھی بھی ،کسی پر ظاہر نہیں کرے گی۔ اس خاموشی کے عوض وہ اپنا وہ گھر جس میں وہ دونوں شادی کے بعد سے قیام پذیر ہیں وہ اس کے نام کردے گا۔ محاسن کو ان دونوں شرائط پر کوئی اعتراض نہ تھا۔اس وجہ سے اسے طلاق اور خیابان ہلال والا گھر دونوں بغیر کسی بد مزگی کے اور اطمینان سے مل گئے۔

    ایبرڈین سے واپس آتے ہی اس کی زندگی میں دو بھونچال ایک دم آگئے۔پہلا بھونچال تو یہ آیا کہ اسے فروزاں نے بتایا کہ وہ فرحان کے ساتھ گوانگ زو کے چائنا ہوٹل کے سوئمنگ پول میں بکنی پہنے بوس و کنار میں مصروف تھی ۔ یہ سب وقاص کو ای میل کے ذریعے کمپنی کے ایک ملازم ظہیر محمود نے بھیجی تھیں۔مزید چھان بین پر اکاونٹنٹ نے وقاص بھائی کو سفری اخراجات کی جو فائل دی اس میں گوانگ زو اور شنگھائی میں صرف ایک کمرہ دونوں ہوٹلوں میں لیا گیا تھا اور وہ بھی فرحان کے نام پر۔اس نے یہ کیا نادانی کی۔اس کے ابو کو فون پر یہ سب باتیں بتادی گئی ہیں۔ جس کی وجہ سے وہ دل گرفتہ ہیں۔

    تین دن بعد جمیل سیٹھ کا انتقال ہوگیا۔ اپنی وفات سے پہلے انہوں نے محاسن کو معاف اس لیے کردیا کہ عنادل کے بارے میں وہ گھر کے چوکیدار اور محاسن کی خالہ کی زبانی بہت کچھ جان چکے تھے۔خود فروزاں نے بھی انہیں سب کچھ بتادیا تھا ۔انہیں محاسن کے اس سے طلاق لینے پر کوئی اعتراض نہ تھا۔

    محاسن کو یاد آیا کہ ظہیر محمود انہیں اس ہوٹل میں کئی دفعہ دکھائی دیا تھا۔ اسے فرحان نے کمپنی کی ملازمت سے ایک بڑے گھپلے کی وجہ سے جمیل سیٹھ کو بتا کر نکالا تھا۔وقاص اس فیصلے سے ناخوش تھا۔وہ اسے ایک موقعہ اور دینا چاہتا تھا۔ اسے لگا کہ احمد سلمان نے ہی اپنے سیل فون سے یہ تصاویر کھینچ کر اس کے بھائی کو بھجوائی تھیں۔

    واپسی پر دوسرے جس بھونچال نے اس کا استقبال کیا وہ یہ تھا کہ وقاص بھائی نے شدید بے عزتی کرکے فرحان کو کمپنی کی ملازمت سے فارغ کردیا ہے اس بے عزتی میں یہ طعنہ بھی شامل تھا کہ وہ ایک ملازم کا بیٹا ہے لہذا اس نے ان کی بہن کو ورغلا کر نمک حرامی کا ثبوت دیا ہے۔وہ ملازمت چھوڑ کر ملک سے کہیں باہر چلا گیا ہے۔

    ۳

    چند دن بعد اسے فرحان کی ایک ای میل ملی جس میں جمیل سیٹھ کی وفات پر تعزیتی کلمات کے علاوہ یہ بھی درج تھا کہ " اسے ابوظہبی میں بہت اچھی ملازمت مل گئی ہے۔ کمپنی اس کے دوست کی ہے۔ جو کچھ ہوا وہ اس کی غلطی تھی۔محاسن نے اسے دونوں جگہوں پر بالکل اسی طرح کمرے لینے کو کہا تھا جیسا انہوں نے ہانگ کانگ کے پینی انسویلا ہوٹل میں کیا تھا حالانکہ سالسبری روڈ پر واقع یہ ہوٹل ان دونوں ہوٹلوں سے جہاں انہوں نے گوانگ زو اور شنگھائی میں قیام کیا۔ ان سے وہ ایک مہنگا ہوٹل تھا۔ وہ کچھ بد احتیاط ہوگیا تھا اس کا خیال تھا کہ سفری اخراجات کے بل محاسن جب واپسی پر منظور کردے گی تو وہ یہ فائل اپنے پاس رکھ کر تلف کردے گا۔واپسی پر تیزی سے بدلے ہوئے حالات نے دونوں کو مہلت نہ دی تو یہ بدمزگی ہوئی۔وہ برگینڈی کا خیال رکھے ۔وہ اس کی نشانی ہے۔ زندگی میں ملنا بچھڑنا انسان کے اختیار سے زیادہ حالات کے بہاؤ کی وجہ سے ہوتا ہے۔خط کے آخر میں ایک جان لیوا فقرہ یہ درج تھا کہ" Everything, Everyone, Everywhere.....Ends"۔محاسن اس ای میل کو پڑھ کر بہت دیر تک روتی رہی۔اس نے تہیہ کیا کہ اب وہ کسی سے پیار نہیں کرے گی۔

    اس بات کو اب دو سال ہوتے تھے۔فروزاں سے اس نے اس دوران کئی دفعہ شادی کا کہا وہ اس کی ہم عمر تھی۔ وہ کب تک یہ پہاڑ جیسی زندگی یوں تنہا کاٹے گی۔فروزاں کا جواب تھا کہ "ہم غلزئی ہیں نہ ہمارا دل کسی پر آتا ہے نہ ہمارا بدن ایک کے علاوہ کوئی دوسرا مرد دیکھتا ہے۔"

    وقاص بھائی اور بھابھی اس کے حوالے سے بہت نارمل ہوگئے تھے۔کمپنی میں اس کا خاصا اچھا رول ہوگیا تھا ۔ گوانگ زو اور شنگھائی سے منگوائے ہوئے ڈی واٹرنگ پمپس اور ملبہ ہٹانے والی مشینری امپورٹ کرنے والی ایجنسی کی وہ مالک تھی۔جس میں اس نے فروزاں کو بھی شامل کرلیا تھا۔

    ہفتے اتوار کو وہ ایک دوست کی این جی او کے کام میں مدد کرتی تھی۔سمیرہ اس کی بچپن کی دوست تھی۔شادی کے بعد لاہور چلی گئی تھی۔ وہاں سے طلاق اور ایک بیٹا ساتھ لائی جو اب چودہ برس کا تھا۔ہمیشہ کی مالدار سمیرہ کو ضوریز نام کے نوجوان سے جو ایک بینڈ کا مالک تھا اس سے پیار ہوا تو اس سے شادی کرلی۔ عمر میں اس سے پورے آٹھ برس چھوٹا تھا۔

    ایک دن وہ کسی دعوت کے سلسلے میں سمیرہ کے ہاں وقت سے بہت پہلے گئی تو اسے لگا کہ بیس مینٹ میں بہت شور تھا۔ وہ نیچے جب یہ منظر دیکھنے گئی تو سب بینڈ بجانے والے ایک نوجوا ن شیری جس کا پورا نام شہر یار مرزا تھا۔ اس بے چارے کو ڈانٹ رہے تھے کہ وہ آج گٹار بجاتے وقت لے اور سر کا خیال نہیں رکھ رہا ۔سفید کرتے پاجامے میں اسد امانت علی خان کا یہ ہم شکل وضاحت دے رہا تھا کہ اسے ان کے بینڈ میں شامل ہوئے بمشکل ایک ہفتہ ہوا ہے۔ اسے ان کے تال میل کو سمجھنے کا کچھ وقت ملنا چاہیے۔ یوں بھی وہ انفرادی کارکردگی سے جدا ہوکر پہلی دفعہ کسی بینڈ میں شامل ہوا ہے۔

    وہ اپنا فون اور پرس وہاں لاؤنج میں چھوڑ سمیرہ کے پاس کچن میں گئی توشیری بھی پیچھے پیچھے چائے اور سر درد کی گولی کا مطالبہ لے کر آگیا۔ گولی کے لیے سمیرہ نے جب اپنے بیڈ روم میں محاسن کو بھیجا تو اسے وہاں کچھ دیر ہوگئی۔واپسی پر اس نے شیری کو کہا کہ لگتا ہے" یہ ساز اس کے لیے کچھ نیا ہے۔یہ اس کا اوریجنل گٹار نہیں لگتا؟"

    "ساز بھی پرایا ہے، انداز بھی غیروں جیسا ہے مگر یہ سب کچھ ا پنوں کے لیے ہے۔" شیری نے لہجے میں ایک بے اعتنائی سے مگر اس انداز سے اسے دیکھتے ہوئے

    جس میں اس کے لیے بڑی پسنددیدگی اور اپنائیت تھی جواب دیا ۔ محاسن کو دور کہیں سے لگا کہ یہ سب کچھ فرحان نے اس کی طرف دیکھ کر کہا ہے ۔ وہ بھی اسی کے انداز میں بات کرتا تھا۔ جس میں سننے والے کے لیے اپنا مطلب تلاش کرنے کی واضح رعایت موجود ہوتی تھی۔

    " Interesting Answer" سب سے کیا وہ ایسی ہی باتیں کرتا ہے؟ محاسن نے کھلکھلا کر ہنستے ہوئے جتلایا۔

    "وہم سے نازک اگر کوئی یقین ہو تو وہ ایسی ہی باتیں کرتا ہے۔" شیری کے اس جملے نے محاسن کو بہت شدت سے فرحان کی یاد دلائی تو وہ موضوع بدلنے کے لیے اس سے پوچھ بیٹھی کہ " اس کی بات چیت اور اردو اتنی اچھی کیسے ہے؟"

    وہ بتانے لگا کہ " اس کے ابو ایک ناکام شاعر ہیں۔ اس کی امی کی سر توڑ کوشش کے باوجود ان کا ہر ایک اسکرپٹ نسوانی موضوعات پر ڈرامے پیش کرنے والے ایک چینل نے ہمیشہ بے دردی سے ان کے جذبات کو کرچی کرچی کرتے ہوئے ردی کی ٹوکری کی نذر کردیا ہے۔انچولی۔ فیڈرل بی ایریا کے جس گھر میں وہ رہتا ہے وہاں چوبیس گھنٹوں میں اردو ادب پر اتنی گفتگو ہوتی ہے جتنی انجمن ترقیء اردو کے سالانہ اجلاس میں نہیں ہوتی۔"

    اس کی بات سن کر محاسن نے اپنے پرس سے سگریٹ نکالی اور لائٹر تلاش کرنے کی کوشش کرنے لگی تو شیری نے جیب سے ماچس نکالی اور سگریٹ سلگادی۔ اس کی یہ خود اعتمادی ،محاسن کو اس لیے بھی اچھی لگی کہ یہاں پاکستان میں تو کسی عورت کو سگریٹ پیتادیکھ کر بڑے اچھے اچھے مرد حواس باختہ ہوجاتے ہیں۔

    " وہ سگریٹ پیتا ہے کیا؟ "محاسن نے شہر یار مرزا سے پوچھا

    جواب ملا "نہیں" ۔

    "پھر ماچس کیوں رکھتے ہو؟ "محاسن نے پوچھ لیا۔

    "کچھ لوگ سگریٹ رکھتے ہیں پر ماچس رکھنابھول جاتے ہیں۔۔شیری نے اس کو

    مزید یہ کہہ کر چونکا دیا کہ یہ کسی سے تعارف کا ایک اچھا ذریعہ بھی ہے۔یوں بھی مجھے سڑک پر اگر کوئی حادثہ ہوجائے تو گاڑیوں کو آگ لگانے میں بہت مزہ آتا ہے"۔ محاسن نے سوچا کہ یہ مکالمہ گاڑیوں کو آگ لگانے والی بات کو منہا کر کے کہیں سنا ہے۔ اسے یاد آیا کہ ہندوستانی فلم اجازت میں ویٹنگ روم میں ریکھا یہ جملہ نصیر الدین شاہ کو اس وقت کہتی ہے۔جب وہ سگریٹ منھ میں لگا کر ماچس تلاش کررہا ہوتا ہے اور وہ اسے اپنے پرس سے ماچس نکال کر دیتی ہے۔بطور ایک سابقہ بیوی کے اسے اپنے میاں کی ماچس کھودینے والی عادت کا بخوبی علم ہوتا ہے۔

    اس سے پہلے کہ یہ گفتگو مزید جاری رہتی اسے بیس مینٹ سے کوئی بلانے آگیا ۔ سمیرہ بھی کمرے میں آگئی تھی۔ وہ چپ چاپ اس پر ایک اچٹتی نگاہ ڈال کر سیڑھیاں اتر کر واپس اپنا گٹار بجانے پہنچ گیا۔

    دعوت دل چسپ تھی۔ سمیرہ نے اپنی دو ایک پرانی دوستوں کو بلایا تھا۔ وہ متجسس تھیں کہ کم سن میاں کیسا ہوتا ہے۔ سمیرہ بتانے لگی کہ یہ جو ذرا کم عمر مرد ہوتے ہیں ان کے پیار میں شدت بھی بہت ہوتی ہے۔ عمر کے ایک قوس( Curve )پر آکر جسم بہت تعریف پسند ہوجاتا ہے ۔جسمانی رفاقت سے بہتر کوئی تعریف نہیں یا کوئی نیوڈز بنائے پینٹر ہو کہ فوٹو گرافر مگرفوٹو والا دھندہ ذرا رسکی ہے۔جسم کا ایک معاملہ ایسا ہے کہ جسے عورت بہت سینت سینت کر سجا بنا کر رکھتی ہے وہ فریب محبت کی وجہ سے اسی تاج محل کے روندے جانے پر خوش ہوتی ہے۔

    یہ جو زور آور خان جی جیسے مرد ہوتے ہیں ۔جسمانی رفاقت میں عجلت اور وحشت بھی ہم عمر یا بڑی عمر کے مرد سے زیادہ ہوتی ہے یہ شہ زور توجہ کے بھی بہت طلب گار ہوتے ہیں۔ بڑی عمر کے مرد کا ذکر کرتے ہوئے اس نے قدرے شرارت سے محاسن کی جانب دیکھا ۔ وہ اس کے اکثر رازوں کی شریک تھی۔فرحان سے محاسن کے تعلقات کا بھی اس سے کبھی ذکر ہوا تھا۔" But a young lover or a young husband is a real fun .If you can handle his wild passions"( لیکن ایک جواں سال عاشق یا شوہر بہر حال بڑا پر لطف ہوتا ہے اگر آپ کو اس کے جذبات سے کھیلنا آتا ہو) سمیرہ نے ٹیپ کا بند سنا کر گفتگو کچھ زنانہ موضوعات کی جانب موڑ دیا۔دعوت کے اختتام پر گھر واپس آن کر محاسن نے وہسکی کا ایک پیگ بنایا اور سگریٹ سلگا کر اپنے ڈی وی ڈی پلیئر پر فلم لگادی۔

    رات وہ سونے سے پہلے جب تیسری مرتبہ ایک فلم "بی فو دا سن رائز " دیکھ کر فرحان سے اپنے پیار کاموازنہ کررہی تھی اس کے فون پر میسج ٹون سنائی دی۔یہ فلم وہ دیکھ کر اس فیصلے پر پہنچنے کی کوشش کر رہی تھی کہ اس کے بعد جو فلم بنی " یعنی بی فور دا سین سیٹ" ا چھی تھی یا پہلے والی۔نبیلہ کا خیال تھا کہ دوسری فلم بہت عمدہ تھی۔ اس تقابل کے پیچ و خم میں الجھی محاسن جس وقت دونوں فلموں کی خوبیوں اور کمزوریوں کا موازنہ کررہی تھی اس کے فون پر میسج ٹون سنائی دی۔یہ فلم وہ دیکھ کر اس فیصلے پر پہنچنے کی کوشش کر رہی تھی کہ اس کے بعد جو فلم بنی " یعنی بی فور دا سین سیٹ" ا چھی تھی یا پہلے والی۔نبیلہ کا خیال تھا کہ دوسری فلم بہت عمدہ تھی۔ اس میں عورت کے اس عالمی المیے کہ ہر عورت اجڑتی اپنی پہلی محبت کے ہاتھوں ہی ہے اور ہرجگہ پیار کرنے والوں کے یکساں حالات کا بہت عمدگی سے جائزہ لیا ہے ۔محاسن کا خیال تھا کہ دوسری فلم بہت Predictible " "ہے۔اس میں سنیما بہت کم ہے۔اس میں ریڈیو ڈرامہ کی تو سب خوبیاں کہی جاسکتی ہیں مگر رومانس اور بے ساختگی جو پہلی فلم میں وہ سرے سے اسی سیریز کی دوسری فلم میں مفقود ہے۔ اس کے سین جو کل چار پانچ ہی ہیں وہ غیر ضروری طور پر طویل ہیں ۔

    میسج ٹون پر اسے پہلے گمان ہوا کہ یہ کم بخت سیل کمپنیاں اور ٹیلی مارکیٹنگ کرنے والے بے وقت پیغامات بھیجتے رہتے ہیں۔ وہ فلم کے آخری سین میں خلل نہ آنے دے۔ پہلی فلم کے آخری سین میں یہ دونوں ٹرین پر سوار ہوتے وقت پانچ سال میں دوبارہ ملنے کا وعدہ کرتے کرتے چھ ماہ میں ملنے کا وعدہ کرتے ہیں اسی جگہ اسی اسٹیشن پر آسٹریا کے شہر ویانا میں۔ پہلی دفعہ اس سین کو دیکھ کر وہ بہت روئی تھی ۔کاش فرحان بھی اس سے کوئی ایسا وعدہ کرکے رخصت ہوتا تو کیسا اچھا ہوتا۔اس نے وہ سین روک کر جب میسج کا جائزہ لیا تو نمبر کی جگہ بھیجنے والے کے نام کے آگے وہی جیل بریک لکھا تھا۔ اسے اپنی یہ نمبر محفوظ کرنے والی پیش بندی اچھی لگی۔

    پیغام رومن اردو میں تھا "اجنبی سی ہو مگر غیر نہیں لگتی ہو"

    محاسن نے ایک لمحے کو سوچا کہ یا تو وہ اس نمبر پر کال کرے یا پیغام کو نظرانداز کرے مگر پھر جانے کیوں اس نے حقیقت کا کھوج لگانے کے لیے پوچھ لیا۔۔۔"۔ تو کیسی لگتی ہوں؟"

    "آنچ دیتی ہوئی برسات کی یاد آتی ہے"۔ بغیر کسی توقف کے جواب بھی آگیا۔۔ محاسن نے اس پر پوچھ لیا کہ "مسٹر گٹارسٹ یہ پیغام کیوں دیا تھا۔انچولی میں تو بڑا حسن دل فریب ہے۔ مجھے چھوڑو اور پڑوسیوں کا حق ادا کرو ؟"

    "ایک حسین شام کو دل میرا کھوگیا۔" سامنے سے وضاحت پیش کی گئی۔محاسن کی نگاہیں اسکرین پر منجمد اس منظر پر جمی ہوئی تھیں جس میں ہیروئین سیلین آخری دفعہ ویانا کے اسٹیشن پر ہیرو جیسی کو چوم رہی ہوتی ہے۔ دل اس کا وہیں فرحان کی یادوں میں اور دماغ اس کم بخت شیری کے پیغام میں الجھا تھا ۔اس نے ریموٹ پر پلے کا بٹن دبا کر شرارت کرتے ہوئے پوچھ لیا کہ "شام زیادہ حسین تھی یا میں؟"۔ حالانکہ اسے بخوبی علم تھا کہ وہ سیاہ چوڑی دار پاجامے۔باریک کرنکل جارجٹ کے گہرے نیلے بغیر آستین کے گہرے نیلے کرتے میں، گلے میں سادہ سا سفائر کا نیکلیس پہنے وہ کوئی بہت اہتمام سے وہاں نہیں گئی تھی۔

    "وہ شام آپ کی وجہ سے حسین تھی"۔ جواب بھی جلد ہی آگیا۔ اس نے شیری کو یہ مختصر سا حکم دیا کہ " کال می" اس کا خیال تھا کہ فون آنے میں زیادہ تاخیر نہ ہوگی مگر جب تین منٹ سے زیادہ ہوگئے تو اس نے فلم کو دوبارہ چلا دیا۔ فلم کا ہیرو "جیسی" اب اس بس میں سوار تھا جو اسے ائیر پورٹ جارہی تھی۔ جدائی کے ان لمحات کی اداسی فلم کے اختتام پر آپ کو بری طرح جکڑ لیتی ہے گو اندر سے بھر جانے کا ایک عجیب احساس بھی متوازی طور پر جنم لیتا ہے۔ جب پہلی گھنٹی بجی تو سکرین پر فلم کے کریڈٹس کا ٹائٹل چل رہا تھا۔

    فون پر بھی شیری اتنا ہی دل چسپ اور مہذب تھا جتنا روبرو تھا۔اس نے محاسن کے پوچھنے پر بتایا کہ اس نے ایک جسارت اس سے پوچھے بغیر یہ کی تھی کہ اس کے فون سے اپنے فون پر کال کی تھی جس کی وجہ سے اس کا نمبر وہ حاصل کرنے میں کامیاب ہوگیا تھا۔کیا وہ اسے اپنے سے پیار کرنے کی اجازت دے سکتی ہے۔محاسن نے کہا کہ جب

    اس نے اس کا فون استعمال کرنے کی اجازت طلب نہیں کی تو وہ اس سے پیار کرنے کی اجازت کیوں مانگ رہا ہے۔وہ اس سے عمر میں بڑی ہے۔عشق کے لیے ساری عمر پڑی ہے بہتر ہوگا وہ اس کی عزت کرے اور اپنی تعلیم پر توجہ دے ۔یہ بینڈ باجا بارات امیر لڑکوں کے چونچلے ہیں

    ۔نبیلہ نے اسے بتایا ہے کہ اس کے ابو واٹر بورڈ میں ایک چھوٹے سے افسر ہیں۔وہ پڑھ لکھ لے گا۔اچھی نوکری مل جائے گی تو زندگی میں اسے اپنی ہم عمر اور پسند کی لڑکی بھی مل جائے گی۔اسے پسند نہیں کہ کوئی مرد اسے میسج کرے یا فون پر رابطہ کرکے اس سے عشق جتائے۔ اب اگر اس نے یہ جسارت کی تو وہ یہ سب کچھ اس کے امی ابو کو نبیلہ سے اس کی تفصیلات لے کر بتائے دے گی ۔بعد میں جو کچھ ہو اس کے لیے اسے الزام نہ دیا جائے۔

    فروزاں بھی اب فیز فور میں رہنے چلی گئی تھی۔ پشاور سے اس کی ایک بیوہ پھوپھی

    اس کا چھوٹا بیٹا ،بیٹی اور خالہ خالو بھی ساتھ رہنے آگئے ۔

    اس کا منجھلا بھائی منیب اپنی بیوی کو طلاق دے کر واپس آگیا تھا۔جائداد کے بٹوارے کی بات ہورہی تھی تو منیب نے مطالبہ کیا کہ اس کے ابو کا مکان اسے دے دیا جائے ۔بیوہ کا ترکے میں مکمل حصہ نہیں ہوتا۔ محاسن نے بالآ خر اپنا حصہ چھوڑ دیا اور یوں فروزاں کو اس رقم کے عوض فیز فور ڈیفینس میں ایک گھر خریدنے کا موقعہ مل گیا۔بھلا ہو فرحان کا کہ ابتدائی دنوں میں جب یہ کمپنی رجسٹر ہوئی تو اس نے اسے محاسن کا حصہ ستر فیصد اور فروزاں کا تیس فیصد رکھا۔ بلکہ اسی کے مشورے سے اس کے ابو نے بلڈنگ میں دفتر بھی ایک علیحدہ سوئیٹ میں قائم کرکے بڑی دور اندیشی کا ثبوت دیا۔ محاسن کے دونوں بھایؤں وقاص اور منیب کو یوں اس کاروبار میں دخل اندازی کا موقعہ نہ مل پایا۔فرحان کے بارے میں اس کے بھائی اور بھابی نے جو غیر ذمہ دارانہ رویہ رکھا تھا اور اس کے ابو کو ان کی بیماری کی حالت میں اس کے اور فرحان کے تعلقات بارے میں جن غیر ضروری تفصیلات سے آگاہ کیا تھا اس کے بعد وہ دونوں اس کے دل سے اتر گئے تھے۔ اس نے بھائی بھابھی اور منیب سے ملنا جلنا تو ترک نہ کیا مگر وہ بھی عنادل سے ملا ہوا گھر بیچ کر فیز ٹو کے ایک قدیم سے بنگلے میں منتقل ہوگئی۔

    اس شفٹنگ میں جب وہ خیابان ہلال سے فیز ٹو کے ایک پرانے مگر کچھ چھوٹے سے بنگلے میں منتقل ہورہی تھی۔ اس کی شیری اور طفیل خان نے بہت مدد کی۔ طفیل خان کو اب اس نے این جی او سے ملازمت چھڑواکر اپنے ہاں ملازم رکھ لیا تھا۔ اس شفٹنگ میں نہ تو کوئی بلب ٹوٹا نہ کوئی فریم، نہ ہی چھوٹی سی کوئی چیز ادھر سے ادھر ہوئی۔ رنگ روغن کھڑکیوں دروازوں کی تبدیلی بجلی کا کام اور پلمبنگ کی خدمات سب کے سب میں شہر یار مرزا اور طفیل خان نے اس کی بڑی مدد کی۔گھر اس کے پرانے بنگلے سے چھوٹا ضرور تھا مگر اس کی سجاوٹ اور آرائش میں محاسن کی شخصیت کا پرتو نمایاں تھا۔ بیڈ روم تو اس نے پہلی منزل پر بنالیا البتہ اسٹڈی اس نے گیسٹ روم کے ساتھ ہی بنالی تھی۔جس میں کہیں سے

    شیری اس کے لیے ایک بے حد عمدہ سنگل صوفہ کسی سیل سے خرید لایا جس پر اس نے برگنڈی رنگ کا جرمن کاف لیدر بھی چڑھاوالیا اور ساتھ ہی ایک عمدہ سے سنگل بیڈ بھی رکھ لیا۔

    طفیل خان کو اس نے ایک دن کچن میں جب پستول سے گولیاں نکال کر دراز میں رکھتے دیکھا تو اس نے شیری کو اس کے بارے میں بتایا۔جس پر وہ کہنے لگا کہ یہ "جو خیبر پختون خواہ کے لوگ ہوتے ہیں ان کی دو باتوں کے بغیر گزارا نہیں یعنی ہتھیار اور ایمان"۔ جس پر وہ شوخی سے کہنے لگی " اور تم انچولی والوں کا؟ "

    "ہم ہیں راہی پیار کے ہم سے کچھ نہ بولیے۔" شیری نے بھی ترنت اسی شوخی سے جواب دیا۔

    دفتر سے فارغ ہوکر وہ سیدھی جم جاتی اور پھر کبھی کبھار کسی دعوت میں چلی جاتی مگر پھر بھی شام کو خاصی تنہائی رہتی تھی۔ ایک عورت کے اکیلے دل کی اداسی کو نہ کوئی مرد سمجھ سکتا ہے نہ کوئی عورت۔ اس نے اپنا فون نمبر بھی تبدیل کرلیا تھا کہ اس کا پرانافون چوری ہوگیا تھا اور ای میل اکاؤنٹ ہیک ہوجانے کی وجہ سے اپنا ذاتی ای میل ایڈریس بھی بدل گیا تھا۔ اس کی نسوانی اناّ نے اسے روکے رکھا کہ وہ ان تبدیلیوں کی اطلاع فرحان کو دیتی۔ شیری ایک ذہین اور باسلیقہ نوجوان تھا ۔محاسن کا خیال تھا کہ وہ جلد سمجھ جائے گا کہ سامنے والی بی بی کو اس سے کام لینے میں تو مزا آتا ہے مگر عشق کے کسی سفر پر وہ اس کا ساتھ قبول کرنے پر رضامند نہیں۔ اسے لگا کہ اس سرد مہری کی وجہ سے شیری کی دل چسپی اس میں معدوم ہوجائے گی اور وہ جلد ہی رفو چکر ہوجائے گا۔ پرندے بے برگ درختوں میں گھونسلے کہاں بناتے ہیں۔ مگر ایسا نہ ہوا ۔اس کا ارادہ تھا کہ وہ شیری کو اپنی اگنور لسٹ پر ہی رکھے گی۔ اس دوران نہ تو اس نے کبھی اسے گھر بلایا نہ ہی اس کے فون کا وہ جواب دیتی تھی کبھی کبھار اس کا اگر کوئی ٹیکسٹ میسج اسے اچھا لگتا تو وہ بھی دو تین پیغامات دے کر کچھ دنوں تک ناغہ کرلیتی تھی۔کاروباری مصروفیات کے دوران بھی اسے کئی مرتبہ ایسے مردوں سے سابقہ پڑتا تو جو کاروباری تعلقات کو نجی حیثیت دینا چاہتے تھے۔فرحان چلا گیا تو اس کو کوئی مرد اچھا نہ لگا،سب ہی بے وفا ہوتے ہیں سب ہی اپنے اپنے راز چھپاتے ہیں۔ سب کی انا پیار پر حاوی ہوتی ہے۔ ایسی جنس خود پسند سے کیا پیار کرنا۔ایک دن اسے شیری کا میسج ملا تو اسے لگا کہ اس میں بے تکلفی اور بے ہودگی بہت ہے ۔اس نے فون کرکے اس کو بہت ڈانٹا ۔جس کی وجہ سے وہ کافی دن تک سین سے غائب رہا۔

    وہ بھی سمجھ گئی کہ ایک ڈانٹ کے بعد شیری کے ہوش ٹھکانے آگئے ہیں مگر ایک دن جب وہ جم سے واپس آئی تو اسے اپنے فون پر اس کا یک میسج ملا۔یہ میسج اپنی سادگی کے باوجود دل کو بہت برمانے والا تھا ۔ اس نے لکھا تھا۔" "Wait for the boy that would do anything to be your everything"

    وہ شاور کے دوران اس کے لطف بیاں کا جواب اپنے خوبصورت بدن پر گرتے ہوئے قطروں کی صورت میں تلاش کرتی رہی۔اسے بہت دن پہلے کیٹ ونسلیٹ کی فلم " دی ریڈر " یاد آئی جس کی تیس بتیس سال کی ہیروئن ہنا شمڈٹ( کیٹ ونسلیٹ) بھی اپنی زندگی میں ایک پندرہ سالہ لڑکے مائیکل کو شامل کرکے اس کے بہت قریب آجاتی ہے۔اس نے بہتے پانی کی اس دھار میں اپنی سابقہ احتیاط کو پس پشت ڈالا اور سوچا کہ وہ بھی جائزہ لے کہ یہ محترم شیری آخر اس سے کس قسم کے پیار کے متلاشی ہیں۔

    ایک دن وہی نبیلہ والا سہیلیوں کا گروپ محاسن کے گھر اچانک بنے ہوئے پروگرام کی وجہ سے مدعو تھا۔ محاسن کا خیال تھا کہ طفیل خان جو ایک شام پہلے سے اپنی بہن کے گھر اس کی زچگی کی کسی ایمرجینسی میں گیا تھا وہ واپس آجائے گا۔وہ نہ آیا تو محاسن نے شیری کو بلوالیا۔ ان سہیلوں کی مرضی پینے پلانے کی بھی تھی۔

    یوں تو شراب کا بندوبست عام طورپر نبیلہ کا ہوتا تھا مگر اس کا بوٹ لیگر(شراب فراہم کرنے والا) کئی دنوں سے غائب تھا۔ کھانے اور شراب کا انتظام جب اس نے شیری کو سونپا تو اس نے یہ سب کچھ بڑے احسن طریقے پر سر انجام دیا مچھیروں کی بستی ابراہیم حیدری سے نہ صرف وہ بہت عمدہ جھینگوں کی بریانی اور تلی ہوئی پمفرے بنواکرلایا بلکہ بش مل کی سولہ سالہ قیمتی وہسکی کی چھ بوتلیں بھی وہ کم قیمت پر لے آیا۔یہ شراب شہر میںیوں عام دستیاب نہ تھی۔

    اس شام محاسن نے اولڈ نیوی کا فیروزی رنگ کا شانے پر باندھی گئی ڈوریوں والا ہالٹر اپنی پرانی اسٹریچ سکنی جینز کے ساتھ پہنا تھا۔یہ ہالٹر کچھ پیٹ پر آکر رک گیا تھا جس سے اس کی ناف اور پورا دو انچ پیٹ بھی دکھائی دے رہا تھا۔ورزشوں کا پالا ہوا جواں جسم غسل اورباڈی شاپ کے ونیلا سپائس شمر لوشن کی چمک سے جھلملارہا تھا۔اس نے دیکھا کہ شیری کی نظریں اس پر جمی ہوئی تھیں۔ا

    سے چھیڑنے کے لیے اور طفیل کے بارے میں اس کے ردعمل کا جائزہ لینے کے لیے محاسن نے اسے کہا کہ وہ اسے جب پیار سے دیکھتا ہے تو طفیل خان کو بہت برا لگتا ہے۔ میں تمہیں ایک بات بتادوں یہ تمہارے دوست طفیل خان کی نگاہیں ہر وقت مجھی پر لگی رہتی ہیں۔میں کسی مرد سے بات کروں تو اسے اچھا نہیں لگتا۔ اگر سچ پوچھو تو جو میں نے نوٹ کیا ہے اسے میرا تم سے بھی بات کرنا ناپسند ہے۔ تم جب میرے ہاں آتے ہو تو یہ بہت بے چین ہوجاتا ہے۔ کہیں یہ نہ ہو کہ وہ غصے میں آن کر ایک دن مجھ پر پستول تان لے۔ خیبر پختون خواہ کا جواں مرد ہے ہتھیار ہر وقت اپنے نیفے میں اڑسے رہتا ہے اور ایمان کا مجھے علم نہیں اور تم انچولی والے"ہم ہیں راہی پیار کے ہم سے کچھ نہ بولیے۔" گاتے رہ جاؤگے۔

    شیری نے اس کی یہ بات سن کر کچھ دیر توقف کیا اور کہنے لگا "اگر ایسا ہوا تو ایک بوری اس دن خوشحال خان ایکسپریس کے ڈبے سے ملے گی جس میں گونگے پہلوان استاد طفیل خان کی لاش بند ہوگی۔"

    "ہائے تم بھی اتنے وائلنٹ ہو"۔محاسن نے یہ بات سن کر اسے جتلایا۔

    "صرف تیرے معاملے میں بسنتی"۔ شیری شوخی میں آن کر کہا۔

    محاسن نے اس سے یہ سن کر پوچھا کہ وہ اس سے کیوں پیار کرتا ہے ۔اپنی کسی ہم عمر لڑکی کو چاہے گا تو اس کو زیادہ مزہ آئے گا۔ شہر میں اس کی ہم عمر لڑکیاں آکسیجن کی طرح دستیاب ہیں۔وہ تو اس سے پورے آٹھ سال بڑی ہے۔عین اس وقت محاسن کچن میں اوپر کے شیلف سے خشک میوے کی تھیلیاں اتار رہی تھی اس نے دیکھا کہ شیری کی نگاہیں اس کی صاف شفاف بغلوں پر جمی ہوئی تھیں۔وہ شرما کر ایک طرف یہ کہہ ہوگئی کہ میرا ہاتھ نہیں پہنچ رہا۔شیری نے جب اس کی مدد کے لیے ہاتھ بڑھایا تو اس کے ہاتھ کی پشت محاسن کے برہنہ بازو کو چھوتی ہوئی سامان اتارنے کے لیے بلند ہوئی۔ محاسن کو اس لمس سے ایک عجیب سی گدگدی کا احساس ہوا۔وہ کھلکھلاکر ہنس پڑی۔اس کی اس ہنسی سے شیری کے حوصلوں کو کچھ جلا ملی۔اس نے ایک شعر پڑھا کہ ع

    اس کی باتیں تو، پھول ہوں جیسے

    باقی باتیں، ببول ہوں جیسے

    "تمہارا یہ شعر تمہارے پیار پر میرے اعتراض کا جواب نہیں "۔محاسن نے اسے چھیڑا۔

    "آپ کے اس اعتراض کا جواب میں دعوت کے اختتام پر جب سب چلے جائیں گے میں دوں گا"۔ شیری نے اسے ٹالا۔

    "نہیں ابھی دو،اسی وقت یہیں پر"۔محاسن بچوں کی طرح مچل کر مطالبہ کرنے لگی۔

    "ایک شرط پر کہ اس بے صبری کا جرمانہ آپ نے دینا ہوگا"۔ شیری نے بھی جواب میں ایک مطالبہ داغنے کی سوچی۔

    "منظور مگر یہ جرمانہ شریفانہ ہوگا"۔محاسن نے اپنی شرط اس کے سامنے رکھی۔

    "یہ سب میں آپ کے کان میں آپ کو گلے لگا کر کہوں گا"۔ شیری نے اسے ورغلایا۔

    "Just an innocent hug. Nothing more. Promise me."محاسن نے اجازتیتے ہوئے کہا۔

    شیری نے جب اسے گلے لگانے کے لیے اپنی بانہیں پھیلائیں تو وہ بہت خاموشی سے ان میں سمٹ گئی۔اس کا جواں بدن جو فرحان کے ذائقوں کا آشنا اور اب دوسال سے کچھ اوپر اس کی فرقت کی آگ میں سلگ رہا تھا۔اس کے گلے لگا تو لذتوں نے ایک امنگ بھری انگڑائی لی۔اس آغوش کی کوئی معیاد نہ تھی۔بس پرانی خواہشوں نے ایک ایسا خواب دکھایا تھا کہ سر تو شیری کے کاندھے پر تھا اور یاد فرحان آرہا تھا۔

    یہ جو عورتیں ہوتی ہیں انہیں لمحات رفاقت میں بھی دھوبی کا حساب، ماسی کی تنخواہ،کسی دوست کی کوئی بات، کسی کی آواز اور کوئی بھولی بسری خوشبو بھی انہیں لمحات میں گھیر لیتی ہے۔جس وقت گیٹ کی گھنٹی بجی محاسن کو اتنا یاد ہے اس سے کچھ دیر پہلے اس کی گردن پرشیری کے ہونٹ کئی گرم بوسے چھوڑچکے تھے۔ فرحان کے لمس کا آشنا اس کا بدن شیری کی آغوش میں بھی مزید وحشتوں کا تمنائی تھا۔ وہ جس وقت اس سے یہ پوچھ رہا تھا کہ " وہ وعدہ کرے کہ وہ اس کے دو راز کسی کو بیاں نہیں کرے گی" ۔ اس وقت شیری اس کے کان کی لو کو دانتوں میں دبائے دھیمے دھیمے زبان سے چھیڑ رہا تھا۔ محاسن نے جواب میں ایک ہلکی سی " اہوں" کی تو اس نے سنا کہ وہ کہہ رہا تھا کہ ایک راز تو یہ ہے کہ وہ بہت حسین ہے اور دوسرا راز یہ کہ وہ اسے بہت پسند ہے۔محاسن نے اس کی یہ بات سن کر صرف اتنا کہا " یو آر ویری ویلکم کلر نمبر ٹو"۔

    گیٹ پر نبیلہ گروپ سب کا سب ساتھ ہی آیا تھا۔ ان کے اندر آنے کا اہتمام شہر یار نے کیا، محاسن اپنے غسل خانے کے آئینے میں اپنی گردن اور کان کا جائزہ لے رہی تھی۔ کان کی ایک لو تو دوسری سے زیادہ سرخ تھی مگر اسے ہلکے سے چبائے جانے کا ہلکا سا نشان بھی کان کی لو پر نمایاں طور پر موجود تھا۔ محاسن نے جلدی سے دونوں لووں کو چھپانے کے لیے بڑے سے دو فیروزے کے ٹاپس کان میں پہن لیے،جس کی وجہ سے وہ سہیلویوں کی متجسس نگاہوں کی