منظر لکھنوی کے 10 منتخب شعر

تفریق حسن و عشق کے انداز میں نہ ہو

لفظوں میں فرق ہو مگر آواز میں نہ ہو

منظر لکھنوی

مدتوں بعد کبھی اے نظر آنے والے

عید کا چاند نہ دیکھا تری صورت دیکھی

منظر لکھنوی

گھر کو چھوڑا ہے خدا جانے کہاں جانے کو

اب سمجھ لیجئے ٹوٹا ہوا تارا مجھ کو

منظر لکھنوی

دنیا کو دین دین کو دنیا کریں گے ہم

تیرے بنیں گے ہم تجھے اپنا کریں گے ہم

منظر لکھنوی

مجھے مٹا کے وہ یوں بیٹھے مسکراتے ہیں

کسی سے جیسے کوئی نیک کام ہو جائے

منظر لکھنوی

آپ کی یاد میں روؤں بھی نہ میں راتوں کو

ہوں تو مجبور مگر اتنا بھی مجبور نہیں

منظر لکھنوی

غصہ قاتل کا نہ بڑھتا ہے نہ کم ہوتا ہے

ایک سر ہے کہ وہ ہر روز قلم ہوتا ہے

منظر لکھنوی

ہوئی دیوانگی اس درجہ مشہور جہاں میری

جہاں دو آدمی بھی ہیں چھڑی ہے داستاں میری

منظر لکھنوی

بے خود ایسا کیا خوف شب تنہائی نے

صبح سے شمع جلا دی ترے سودائی نے

منظر لکھنوی

محبت تو ہم نے بھی کی اور بہت کی

مگر حسن کو عشق کرنا نہ آیا

منظر لکھنوی