نالۂ دل میں شب انداز اثر نایاب تھا

مرزا غالب

نالۂ دل میں شب انداز اثر نایاب تھا

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    INTERESTING FACT

    ۱۸۱۶ء

    نالۂ دل میں شب انداز اثر نایاب تھا

    تھا سپند بزم وصل غیر گو بے تاب تھا

    دیکھتے تھے ہم بچشم خود وہ طوفان بلا

    آسمان سفلہ جس میں یک کف سیلاب تھا

    موج سے پیدا ہوئے پیراہن دریا میں خار

    گریہ وحشت بے قرار جلوۂ مہتاب تھا

    جوش تکلیف تماشا محشرستان نگاہ

    فتنۂ خوابیدہ کو آئینہ مشت آب تھا

    بے خبر مت کہہ ہمیں بے درد خود بینی سے پوچھ

    قلزم ذوق نظر میں آئنہ پایاب تھا

    بے دلی ہاے اسدؔ افسردگی آہنگ تر

    یاد ایا مے کہ ذوق صحبت احباب تھا

    مقدم سیلاب سے دل کیا نشاط آہنگ ہے

    خانۂ عاشق مگر ساز صداے آب تھا

    نازش ایام خاکستر نشینی کیا کہوں

    پہلوے اندیشہ وقف بستر سنجاب تھا

    کچھ نہ کی اپنی جنون نارسا نے ورنہ یاں

    ذرہ ذرہ روکش خرشید عالم تاب تھا

    آج کیوں پروا نہیں اپنے اسیروں کی تجھے

    کل تلک تیرا بھی دل مہر و وفا کا باب تھا

    یاد کر وہ دن کہ ہر یک حلقہ تیرے دام کا

    انتظار صید میں اک دیدۂ بے خواب تھا

    میں نے روکا رات غالبؔ کو وگرنہ دیکھتے

    اس کی سیل گریہ میں گردوں کف سیلاب تھا

    مآخذ:

    • Book : Deewan-e-Ghalib (Pg. 159)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY