khuda ki basti

शौकत सिद्दीक़ी

एजुकेशनल बुक हाउस, अलीगढ़
1984 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

تقسیم ہند کے بعد پاکستان میں تشکیل پانے والی شہری سوسائٹی جو نیم سرمایہ دارانہ اور نیم جاگیردارانہ معاشرت کی ترجمان ہے اس کے باطنی حقائق کو نہایت جرات کے ساتھ شوکت صدیقی نے اپنے ناول "خدا کی بستی " میں پیش کیا ہے۔ مذہب اور جمہوریت کو ڈھال بنا کر ہوس پرستی اور دھوکہ دہی کو شعار بنایا جا رہا تھا۔ ایسے پر فریب معاشرے کو آئینہ دکھانے کی بھر پور کوشش کی ہے۔ شوکت صدیقی نے اپنے اس ناول میں انسانی اغراض پر وجود میں آنے والے معاشرے کی تصویر کشی فکشن کے خطوط پر ضرور کی ہے لیکن سماجی اور انسانی نفسیات کا تجزیہ اتنا فنی انداز میں کیا ہے کہ کہانی کو حقیقی زندگی کے بالکل قریب کر دیا ہے۔ اس کے سارے کردار سچائیوں کے ساتھ ماحول کی مناسبت سے اپنے کردار کو فطری بنانے میں کامیاب نظر آتے ہیں ۔ ناول نگار نے انسانی جبلتوں کو ان کے نفسیاتی عمل کے ذریعہ پیش کیا ہے ۔ اس ناول کے مرکزی کردار راجہ اور نوشہ ہیں جن کی عمر چودہ پندرہ برس ہوگی ۔ یہ ناول ایک ایسے معاشرے کی تصویر ہے جو خود غرضی کی انتہا کو پہونچ چکاہے ۔ جہاں انسانی اقدار دم توڑ چکی ہیں ۔ ایک بے حس معاشرہ سلطانہ اور اس کی ماں کی جنسی استحصال کو چپ چاپ دیکھتا رہا ۔ سلمان کی بیوی رخشندہ محض زیورات اور قیمتی ملبوس کے لئے جعفری کے اشارے پر غیر ملکی گاہکوں کو خوش کرتی رہی اور اس کی بے وفائی اور بد چلنی کو ترقی پسندی کا عنوان دیتی ہے ۔ شوکت صدیقی نے اپنے ناول میں سماجی حقیقت نگاری کی روایت کو وسعت دی ہے جس کی تعمیر پریم چند نے کی تھی ۔ ان کا طبقاتی شعور اور انسان دوستی کا تصور ناول میں پریم چند سے آگے کی راہ دکھاتا ہے ۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम