Mahendra Partap Chand's Photo'

مہندر پرتاپ چاند

1935 | انبالہ, ہندوستان

غزل 16

اشعار 4

آپسی رشتوں کی خوشبو کو کوئی نام نہ دو

اس تقدس کو نہ کاغذ پر اتارا جائے

اسی نے آگ لگائی ہے ساری بستی میں

وہی یہ پوچھ رہا ہے کہ ماجرا کیا ہے

  • شیئر کیجیے

پرائے درد میں ہوتا نہیں شریک کوئی

غموں کے بوجھ کو خود آپ ڈھونا پڑتا ہے

ای- کتاب 8

اے بونڈ آف لو

 

2015

عکس رخ گلبدن

 

2009

انوبھوتیوں کے اندردھنش

 

2013

آزار غم عشق

 

2001

حالی پانی پتی کی غزلیں

 

1989

حرف راز

 

1974

جاتے ہوئے لمحو

 

2013

نشاط قلم

 

2012

 

تصویری شاعری 1

اک لفظ_محبت کے بنے لاکھ فسانے تہمت کے بہانے کبھی شہرت کے بہانے کس کو یہ خبر تھی کہ بکھر جائیں_گے پل میں آنکھوں نے سجا رکھے تھے جو خواب سہانے اک زخم_جدائی ہے کہ ناسور بنا ہے کرتا ہوں تجھے یاد اسی غم کے بہانے اقدار کا فقدان ہوس_ناکی_و_وحشت سب پردے ہٹا رکھے ہیں اب شرم_و_حیا نے فرقت کی شب_کرب کے جاتے ہوئے لمحو کب لوٹ کے آؤ_گے مجھے پھر سے رلانے بھانے لگی جب دل کو ذرا بزم کی رونق تنہائی مری آ گئی پھر مجھ کو منانے وہ گل ہوں جو ٹھہرایا گیا تنگ_بہاراں پامال کیا خود ہی جسے باد_صبا نے شاکر ہوں میں ہر حال میں راضی_بہ_رضا ہوں تسکین کی دولت مجھے بخشی ہے خدا نے آزار_غم_دل کو نہ ہونا تھا شفایاب کچھ کام کیا چاندؔ دوا نے نہ دعا نے

 

مصنفین کے مزید "انبالہ"

  • شہناز رحمن شہناز رحمن
  • صدیق عالم صدیق عالم
  • حیدر بیابانی حیدر بیابانی
  • صادقہ نواب سحر صادقہ نواب سحر
  • معین الدین جینابڑے معین الدین جینابڑے
  • محمد ہاشم خان محمد ہاشم خان
  • عشرت ناہید عشرت ناہید
  • بانو سرتاج بانو سرتاج
  • ناصرہ شرما ناصرہ شرما
  • کوثر مظہری کوثر مظہری