ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے

ادا جعفری

ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے

    آئے تو سہی بر سر الزام ہی آئے

    حیران ہیں لب بستہ ہیں دلگیر ہیں غنچے

    خوشبو کی زبانی ترا پیغام ہی آئے

    لمحات مسرت ہیں تصور سے گریزاں

    یاد آئے ہیں جب بھی غم و آلام ہی آئے

    تاروں سے سجا لیں گے رہ شہر تمنا

    مقدور نہیں صبح چلو شام ہی آئے

    کیا راہ بدلنے کا گلہ ہم سفروں سے

    جس رہ سے چلے تیرے در و بام ہی آئے

    تھک ہار کے بیٹھے ہیں سر کوئے تمنا

    کام آئے تو پھر جذبۂ ناکام ہی آئے

    باقی نہ رہے ساکھ اداؔ دشت جنوں کی

    دل میں اگر اندیشۂ انجام ہی آئے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    حامد علی خان

    حامد علی خان

    اسد امانت علی

    اسد امانت علی

    امانت علی خان

    امانت علی خان

    RECITATIONS

    امانت علی خان

    امانت علی خان

    امانت علی خان

    ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے امانت علی خان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY