آتش تر

خمارؔ بارہ بنکوی

نیشنل بک ڈپو، حیدرآباد
1964 | مزید
  • معاون

    انجمن ترقی اردو (ہند)، دہلی

  • موضوعات

    شاعری

  • صفحات

    153

کتاب: تعارف

تعارف

خمار بارہ بنكوی نے غزل گوئی اور فلمی نغمہ نگاری دونوں میں یكساں مقبولیت حاصل كی۔ "آتش تر"ان كے غزلیہ مجموعہ كلام ہے۔جس میں غزل كی قدیم روایات كی تہذیب اور شائستگی واضح ہے۔ان کا کلام سہل بیانی كا ایك ایسا جادو ہے جوقاری كو اس فریب میں مبتلا كردیتا ہے كہ ایسا آسان شعر تو ہم بھی كہہ سكتے ہیں۔لیكن یہ محض قاری كی خوش فہمی ثابت ہوتی ہے۔كیوں كہ اس میں فكر اور خیال كی سنجیدگی ،تشبیہات و استعاروں كا استعمال ایك سرے سے ہے ہی نہیں ،جس كی نقل كی جائے۔بلكہ یہ شاعر كی اپنی شگفتگی اورشخصیت كی دلنوازی سے مزئین ہے،جس كی نقالی مشكل ہے۔ خمار اپنے طرز كے بالكل منفرد شاعرتھے۔ان كے یہاں كلاسیكی زبان كا جو رچاؤ ملتا ہے اس نے ان كی شاعری كو سہل ممتنع بنادیا ہے۔ان کا مکمل کلام اسی كیفیت کا حامل ہے۔ان كا منفرد لب و لہجہ،داخلی اور خارجی امتزاج كےساتھ بے پناہ نغمگی قاری كی تو جہ اپنی جانب مبذول كروانے میں كامیاب ہے۔ زیر نظر مجموعہ جتنا مختصر ہے اتنا ہی دلفریب ہے۔جو اہل علم و ادب كے لیے كسی سوغات سے كم نہیں ہے۔

.....مزید پڑھئے

مصنف: تعارف

خمارؔ بارہ بنکوی

نام محمد حیدرخاں اور تخلص خمار تھا۔۱۹؍ستمبر۱۹۱۹ء کو بارہ بنکی(اودھ) میں پیدا ہوئے۔ اردو اور فارسی کی تعلیم گھر پر حاصل کی۔اس کے بعد انگریزی اسکول میں داخلہ لیا۔ انٹرمیڈیٹ میں تھے کہ ایک نہایت لطیف حادثے سے دوچار ہوگئے اور سلسلہ تعلیم ترک کردیا۔ تقریباً پندرہ سولہ برس کی عمر سے شعر موزوں کرنے لگے۔ ابتدا میں کچھ دنوں قرار بارہ بنکوی کو کلام دکھایا، لیکن بعد میں اپنے ذوق سلیم کو رہبر بنایا۔ ۱۹؍ فروری ۱۹۹۹ء کو بارہ بنکی میں انتقال کرگئے۔ ان کا ترنم بہت اچھا تھا۔ ان کی تصانیف کے نام یہ ہیں:’حدیث دیگراں‘، ’آتش تر‘، ’رقص مے‘۔ بحوالۂ:پیمانۂ غزل(جلد دوم)،محمد شمس الحق،صفحہ:103

.....مزید پڑھئے

مصنف کی مزید کتابیں

مزید

مقبول و معروف

مزید

کتابوں کی تلاش بہ اعتبار

کتابیں : بہ اعتبار موضوع

شاعری کی کتابیں

رسالے

کتاب فہرست

مصنفین کی فہرست

یونیورسٹی اردو نصاب