atthara sau sattawan ki kahani mirza ghalib ki zabani

मख़मूर सईदी

नेशनल बुक ट्रस्ट, नई दिल्ली
2007 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

انگریزی سامراج کے خلاف مئی ۱۸۵۷ء میں جب میرٹھ سے قومی بغاوت کا آغاز ہوا اور یہ بغاوت تیزی سے پورے ملک میں پھیل گئی، اس وقت مرزا غالب بڑھاپے کی سرحدوں میں داخل ہوچکے تھے۔ سن رسیدگی کے پیدا کردہ جسمانی اضمحلال کی وجہ سے بھی اور ان کی ان مزاجی کیفیات کی وجہ سے بھی جو امن و اماں کے ماحول کی متقاضی رہتی تھیں، ان سے یہ توقع نہی کی جاسکتی تھی کہ وہ اس بغاوت میں عملی طور پر شریک ہوسکیں، لیکن جو واقعات ان کے گردو پیش رونما ہورہے تھے، ان سے چشم پوشی انھوں نے نہیں کی۔ وہ خود گھر کی چار دیواری سے باہر نہیں نکلے لیکن شہر کے حالات سے انھوں نے خود کو بے خبر نہیں رکھا اور کسی نہ کسی طرح تمام اہم اطلاعات حاصل کرتے رہے۔ انھوں نے صرف اطلاعات کے حصول پر ہی اکتفا نہیں کیا بلکہ وہ انھیں تاریخ وار قلم بند بھی کرتے رہے۔ یہ سب روداد غالب کے روزنامچہ "دستنبو" اور غالب کے اس دنوں لکھے ہوئے خطوط میں موجود ہے۔ زیر نظر کتاب میں "دستنبو" کا اردو ترجمہ اور کچھ خطوط کو سامنے رکھ کر ۱۸۵۷ کی کہانی بیان کی گئی ہے، جس میں تاریخ کے علاوہ حسن بیان بھی ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम