badan dareeda

फ़हमीदा रियाज़

मक्त्बा दीन-ओ-अदब, लखनऊ
1978 | अन्य
  • सहयोगी

    गवर्नमेंट उर्दू लाइब्रेरी, पटना

  • श्रेणियाँ

    शाइरी

  • पृष्ठ

    121

पुस्तक: परिचय

परिचय

دنیا کے ہر ادب میں کچھ نہ کچھ نیوڈٹی ضرور پائی جاتی ہے۔ لیکن دنیا نے اپنے ادب پر اچانک ایروٹک ہونے کا الزام بہت کم ہی لگایا۔جب تک ممکن ہوا اس نے اسے ادب کی اعلی معیار کی کسوٹی پر پہلے پرکھا اس کے بعد ہی کوئی الزام عایدکیا۔ ہر سماج کے الگ الگ مزاج کی وجہ سے ادب میں فحاشی کو جانچا اور پرکھا گیا۔ عربی کی کلاسیکی شاعری میں عورت کے جسم کے کسی بھی حصے کے بارے میں کتنا ہی کھل کر بات کی جائے اسے ایروٹک نہیں کہا گیا بلکہ ادب کے اعلی نمونہ ہونے کا اعجاز ہوا۔ اسی طرح فارسی شاعری میں اغلام بازی سے لیکر دیگر تمام طرح کی شاعری مل جائے گی اور یہ شاعری نہ صرف عام شاعروں نے کی بلکہ صوفی شعرا نے بھی اس طرح کی شاعری کی ہے اور اسے مجاز سے حقیقت کی طرف مراجعت کا پہلا زینہ قرار دیا ۔ اسی طرح دنیا کی دیگر زبانوں کے ادب کے بارے میں قیاس لگایا جا سکتاہے اور یوروپ و امیرکہ کے ادب پر تو کوئی سوال ہی نہیں۔ ویسے فرائڈ کی مانیں تو اصل ادب اسی طرح کا لٹریچر قرار پاتا ہے۔اسی طرح سے ہمارے ہندوستانی شاعری میں اجنتا کی مجسمہ سازی کو دیکھ کر نہ کوئی اسے نیوڈٹی کہتا ہے اور نہ ہی ایروٹسم کی فہرست میں ڈالتا ہے بلکہ اس کو فنون لطیفہ کے اعلی معیار کے روپ میں دیکھا جاتا ہے۔مگر جب بات آتی ہے ہمارے اردو ادب کی تو اگر کوئی سعادت حسن منٹو لکھنے بیٹھتا ہے تو اس کے قلم کی آزادی اور پرواز چھین لینے کی کوشش کی جاتی ہے۔ اور اگر مرد کی جگہ کوئی عورت اس طرح کی بات کرے تو اس کو بدچلن سے لیکر بے شرم و بے حیا اور نہ جانے کیا کیا اور کس کس طرح کے الزام سہنے پڑتے ہیں ۔ اور اگر کوئی عصمت چغتائی پھر بھی ہمت جٹا کر کسی لحاف کی سرگرمیاں بیان کرے چاہے وہ افسانہ ہی کیوں نہ ہو تو اس پر فحاشی کا مقدمہ چلایا جاتا ہے اور اس کو دیکھتے وقت لوگوں کی نگاہیں اس سے وہی طلب کرتی ہوئی محسوس ہوتی ہیں جیسے وہ افسانہ اسی کے جسم اور اعضائے بدن پر لکھا گیا ہو۔ فہمیدہ ریاض کا یہ شعری مجموعہ جب منظر عام پر آیا تو اس کی نظمیں دیکھ کر لوگوں نے وہی رونا رونا شروع کر دیا اور ان کی نظموں کو کسی نے یوروٹک کہا تو کسی نے اس پر فحش و نیوڈ ہونے کا الزام لگایا۔ کیوں کہ انہوں نے اپنے اس مجموعہ کلام میں اس دبی کچلی عورت کو جو رات کے اندھرے اور پردے کے پیچھے رونے تک نہ پاتی تھی اور جسے زور سے ہنسنے پر بھی بے حیا کہہ دیا جاتا تھا آزادانہ لکھنے کی کوشش کی ہے اگرچہ اس سے ان کا مقصد نہ ہی عورت کے جسم کی نمائش مقصود تھی اور نہ ہی نیلامی۔ مگر پھر بھی ان کی لاکھ صفائی دینے کے باوجود لوگوں نے ان پر اعتراضات کی لمبی فہرست تیار کر دی۔ ان کا یہ مجموعہ کلام نہایت ہی خوبصورت نظموں اور چند غزلوں کا مرقع ہے جسے اردو ادب کی دنیا میں ایک نیا باب سمجھ کر مطالعہ کیا جانا چاہئے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम