فصاحت جنگ جلیل مانکپوری

علی احمد جلیلی

ترقی اردو بورڈ، نئی دہلی
1993 | مزید

کتاب: تعارف

تعارف

اُردو غزل اپنی پیدائش سے لے کر مختلف ادوار سے گزرتی اور مختلف حالات و رحجانات سے دوچار ہوتے ہوئے ہم تک پہنچتی ہے۔ اس دور تک غزل کی کلاسیکی روایات کے جو محافظ نئی تحریکات کے مقابلہ میں غزل کو اس کا مقام دلانے میں سامنے آئے ان میں جلیل مانک پوری کا نام کئی اعتبار سے سر فہرست ہے۔ جلیل بحیثیت شاگرد و جانشین امیر مینائی نہ صرف امیر کی روایات کے پاسدار ہیں بلکہ دبستان لکھنؤ کے نمایاں شاعر بھی ہیں۔ زیر تبصرہ کتاب فصاحت جنگ جلیل مانک پوری حیات شخصیت اور فن جلیل مانک پوری کی حیات ، شخصیت ، ان کے ادبی و علمی، شعری اور لسانی خدمات کا تحقیقی و تنقیدی جائزہ ہے۔ جس کو ڈاکٹر علی احمد جلیلی نے تحریر کیا ہے۔ اس کتاب کی وجہ تصنیف کے بارے میں مصنف کا کہنا ہے کہ جلیل مانک پوری اور ان کے معاصر غزل گو شعر اء کو بیسویں صدی کی تنقید میں کم جگہ دی گئی ہے۔اس کتاب میں جلیل مانک پوری کی شخصیت ،حیات اور فن کے تمام تر پہلووں کا اجاگر کیا گیا ہے۔

.....مزید پڑھئے

مصنف: تعارف

علی احمد جلیلی

علی احمد جلیلی

ممتاز اُستاد سخن حضرت فصاحت جنگ جلیل ؔمانکپوری کے فرزند ڈاکٹر علی احمد جلیلی نہ صرف ایک اچھے شاعر کی حیثیت سے اپنی ایک شناخت رکھتے تھے بلکہ ادبی تنقید سے بھی انھیں خاص لگاؤ تھا۔ ان کی پیدائش 22 جون 1921ء کو حیدرآباد، دکن میں ہوئ تھی۔ انہوں نے ایم اے عثمانیہ یونیورسٹی سے کیا تھا اور بعد میں اردو میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔ اس کے بعد اردو کے لکچرر بنے۔ ڈاکٹر علی احمد جلیلی نے غزل گوئی کی ابتداء قدیم روایتی انداز میں کی، لیکن آہستہ آہستہ ان کی انفرادیت ماضی کی روایات اور اُصول کے تقاضوں کے باہمی اثرات سے نکھرکر سامنے آئی۔ ڈاکٹر علی احمد جلیلی کو قدرت نے شعری علم و حکمت اور تفکر سے سرفراز کیا۔ یہی وجہ تھی کہ وہ اپنی غزلوں میں انسانیت کے دَرد و کرب کا بھرپور احساس رکھتے تھے۔

ان کے تلامذہ کا حلقہ بھی دور دور تک پھیلا ہوا ہے ۔ ڈاکٹر سلیم عابدی ، جگجیون لال ، آستھانہ سحر، صادق فریدی ، شکیب رزمی اور حلیم بابرؔ ، علی احمد جلیلی کے وہ تلامذہ ہیں جو ان کے مکتب کے چراغ کو پوری آب و تاب سے روشن رکھے ہوئے ہیں۔ علی احمد جلیلی نے جہاں شاعری کا قیمتی سرمایہ ادب کو دیا ہے وہیں ان کی نثری و فنی تخلیقات بھی ادب میں اضافہ ثابت ہوئے ہیں۔
ان کی تصانیف کے نام یہ ہیں:’نقش قدم‘ ، ’ شہرتمنا‘، ’اندھیرے اجالے‘(شعری مجموعے)’نئی غزل میں منفی رجحانات‘(تنقید) ’مکاتیب جلیل‘ ’انتخاب کلام جلیل‘ ’کائنات جلیل‘ ’’لہو کی آنچ‘‘ (1969ء)، ’’ذکر حبیب‘‘ (نعتیہ مجموعہ 2000ء)، غالب ایک مطالعہ شامل ہیں۔

ڈاکٹر علی احمد جلیلی کو جامعہ عثمانیہ شاعر ایوارڈ 1940ء میں، ماہنامہ ’نقوش‘ پاکستان کا شاعری ایوارڈ 1989ء میں، جیمس آف حیدرآباد ایوارڈ برائے شاعری و تنقید 1992ء میں، کُل ہند اُردو تعلیمی کمیٹی ایوارڈ 1993ء میں، اندرا گاندھی نیشنل یونیٹی ایوارڈ اردو اکیڈیمی تلنگانہ نے مخدوم ایوارڈ اور کارنامۂ حیات ایوارڈ سے بھی نوازا ہے۔ 13 اپریل 2005ء کو ان کا حیدر آباد میں انتقال ہو گیا۔

.....مزید پڑھئے

مصنف کی مزید کتابیں

مزید

مقبول و معروف

مزید

کتابوں کی تلاش بہ اعتبار

کتابیں : بہ اعتبار موضوع

شاعری کی کتابیں

رسالے

کتاب فہرست

مصنفین کی فہرست

یونیورسٹی اردو نصاب