फ़ोर्ट विलियम कॉलेज की अदबी ख़िदमात

डॉ. उबैदा बेगम

डॉ. उबैदा बेगम
1983 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

انیسویں صدی کی ابتدا فورٹ ولیم کالج سے ہوئی جو اردو زبان و ادب کے لئے یقینا ایک سنگ میل ثابت ہوا۔ اس نے اردو نثر کے لئے ایک ایسی راہ ہموار کی جس نے اردو نثر کو اس قابل بنا دیا کہ وہ دنیا کی دوسری ترقی یافتہ زبانوں کے دوش بدوش چل سکے۔ گورنر جنرل مارکوئس ویلزلی کی سرپرستی میں اس کالج کے شعبہ ہندوستانی کے پہلے پروفیسر ڈاکٹر جان بورتھوک گل کرسٹ کی کوششوں سے اردو نثر نے ایک نئے دور میں قدم رکھا۔ جہا ں مصنفین و مترجمین آتے یا بلائے جاتے اور اپنا کام کرتے، صلہ پاتے اور آگے نکل جاتے، بعض باقاعدہ ملازم بھی تھے مگر اس دور میں اس کالج میں جو کام ہوئے اس کی تعریف جتنی کی جائے کم ہے۔ اس کالج میں عربی ، فارسی، کی کتابیں آتیں ترجمہ ہوکر ایک نئے پیرائے میں لوگوں کے سامنے پیش ہوتیں اور خود کے حسن سے دوسروں کو مسحور کرتیں اور اپنا گرویدہ بنا کر چھوڑتیں۔ اگرچہ اس کی وجہ سے سب سے بڑا نقصان فارسی زبان کو ہوا کہ ہندوستان میں فارسی زبان کی گرفت ماند پڑنے لگی۔ مگر جب کوئی زبان آگے بڑھتی ہے تو کسی نہ کسی زبان کو گرا کر ہی آگے بڑھتی ہے سو اردو نے فارسی کی گردن پر اپنا پیر رکھا اور کچلتی ہوئی آگے نکل گئی۔ اس کتاب کو پانچ ابواب میں منقسم کیا گیا ہے ۔ پہلے باب میں اس کے اغراض مقاصد پر بحث کی گئی ہے اور دوسرے باب میں فورٹ ولیم سے وابستہ مصنفین و مترجمین کے حالات زندگی کو بیان کیا گیا ہے ۔ تیسرے باب میں اس کالج میں ترجمہ شدہ کتب کا تحقیقی و انتقادی جائزہ پیش کیا گیا ہے۔ چوتھے باب میں فورٹ ولیم کی نثر کے اسلوب پر بات کی گئی ہے ۔ پانچویں باب میں فورٹ ولیم کالج کے اردو زبان پر اثرات کا مطالعہ پیش کیا گیا ہے ۔ یہ کتاب فورٹ ولیم کالج کی خدمات کو سمجھنے کے لئے ایک بہترین کتاب ہے جسے اردو کے طلبہ کو ضرور پڑھنا چاہئے۔

.....और पढ़िए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम