गोरी हो गोरी

रफ़ीक़ हुसैन

उर्दू अकेडमी सिंध, कराची
1952 | अन्य

पुस्तक: परिचय

परिचय

حیوانات ہمیشہ سے انسان کے ہمدم اور ساتھی رہے ہیں لیکن جنگل سے نکل آنے کے بعد انسان نے ان کی طرف شاید ہی مڑ کے دیکھا ہے۔ بہت کم لکھنے والوں نے ان کے جذبات و احساسات کو محسوس کرنے کی کوشش کی ہے۔ اردو افسانے میں اگر اسی قسم کی کوئی باضابطہ کوشش کسی نے کی ہے تو وہ سید رفیق حسین ہیں۔ انہوں نے اردو افسانے میں نئے باب کا اضافہ کیا۔ سید رفیق حسین نے پہلی مرتبہ حیوانات کو افسانے میں مرکزی کرداروں کی صورت میں پیش کر کے ان کے جذبات، محسوسات کو سمجھنے اور سمجھانے کی سعی کی ۔سید رفیق حسین کا یہ مجموعہ "گوری ہو گوری" ایسے نادر افسانوں پر مشتمل ہے جو جانوروں کی نفسیات سے گہرا تعلق رکھتے ہیں۔اس کے علاوہ اس مجموعہ میں شامل افسانوں میں ایک اور خصوصیت یہ ہے کہ ان میں انسانی سرشت کو کہانی کے پیرائے میں تحلیل کیا گیا ہے۔اس وجہ سے ان کے اس مجموعہ میں شامل افسانے جواہر پارے کی حیثیت رکھتے ہیں ۔

.....और पढ़िए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम