हयात-ए-शिबली

सय्यद सुलैमान नदवी

दारुल मुसन्निफ़ीन शिबली अकादमी, आज़मगढ़
1993 | अन्य
  • सहयोगी

    रेख़्ता

  • श्रेणियाँ

    जीवनी, शोध एवं समीक्षा

  • पृष्ठ

    925

पुस्तक: परिचय

परिचय

علامہ شبلی کی شخصیت اردو سوانح نگاروں کی صف میں سب سے قدآور ہے۔ مولانا شبلی نے مستقل تصنیفات کے علاوہ مختلف عنوانات پر سیکڑوں علمی و تاریخی و ادبی و سیاسی مضامین لکھے جو اخبارات و رسائل کے صفحات میں منتشر ہیں۔ شبلی نعمانی 1857ء اتر پردیش کے ضلع اعظم گڑھ میں پیدا ہوئے ۔۔ ابتدائی تعلیم اپنے والد شیخ حبیب اللہ سے حاصل کی۔ اس کے بعد مولانا محمد فاروق چڑیا کوٹی سے ریاضی، فلسفہ اور عربی کا مطالعہ کیا۔ علی گڑھ جاکرسرسید احمد خان سے ملاقات ہوئی،اوروہیں فارسی کے پروفیسر مقرر ہوئے۔ یہیں سے علامہ شبلی نے علمی و تحقیقی زندگی کا آغاز کیا۔ پروفیسر آرنلڈ سے فرانسیسی سیکھی۔ 1882 میں"علی گڑھ کالج" سےمنسلک ہوئے اور یہاں عربی کے پروفیسر مقرر ہوئے۔یہاں سر سید سے ملےان کا کتب خانہ ملا،یہاں تصانیف کا وہ سلسلہ شروع ہوا جس نے اردو ادب کے دامن کو تاریخ،سیرت نگاری،فلسفہ ادب تنقید اورشاعری سے مالا مال کردیا،سیرت نگاری،مورخ،محقق کی حیثیت سے کامیابی کے سکے جمائے 1892ءمیں روم اورشام کا سفرکیا۔1898ءمیں ملازمت ترک کرکےاعظم گڑھ چلے گئے۔1913ء میں دارالمصنفین کی بنیاد ڈالی۔ 1914ءمیں انتقال ہوا زیرتبصرہ کتا ب"حیات شبلی"علامہ شبلی نعمانی کے نامور شاگرد اور کی رفاقت میں 8برس گزارنے والے مولانا سید سلیمان ندویؒ کی تصنیف ہے جس میں انہوں نےشمس العلماء علامہ شبلی نعمانی کے سوانح حیات اور ان کےعلمی وعملی کارنوں کو بڑی تفصیل سے پیش کیا ہے۔مولانا شبلی کی حیات وخدمات پر یہ ایک مستند کتاب ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम