intikhab-e-kalam-e-dagh

Dagh Dehlvi

Hali Publishing House, Delhi
1961 | More Info

About The Book

Description

داغ بنیادی طور پر غزل کے شاعر ہیں۔ غزل ان کی محبوب صنف سخن ہے۔ داغ نے اپنی شاعری میں عاشقانہ زندگی کی بہترین مرقع کشی کی ہے اور ان کی کہی ہوئی غزلیں اس بات کا ثبوت پیش کرتی ہیں۔ اُن کے اشعار میں ترنم ، دلکشی اور سوز و گداز بدرجہ اتم موجود ہے۔ داغ نے غزل جیسی روایتی صنف سخن میں ایک دلکش اور منفرد اسلوب کی بنیاد ڈالی ہے ۔ایک طویل عرصہ گزرنے کے باوجود بھی داغ کی شاعری اپنا خاص اثر رکھتی ہے۔ داغ کو دو لحاظ سے اہمیت حاصل ہے۔ ایک تو بلحاظ زبان، کہ ان کے ساتھ دہلی اور دوسرے لکھنوی شاعری کے آخری اثرات ان کی ذات میں جمع ہو گئے۔ گویا داغ کی غزل میں دہلی اور لکھنو کا امتزاج ہے۔ عشق و عاشقی ان کے لیے ایک سنجیدہ، متین یا مہذب طرز عمل نہیں بلکہ کھیلنے اور چسکے کی چیز ہے۔ انہیں نہ احترام عشق ہے اور نہ پاس ناموس، بس اپنا مطلب نکالنے سے غرض ہے۔ اسی لیے محبوب سے چھیڑ چھاڑ کا سلسلہ جاری رہتا ہے۔ وہ عاشق جو مومن کے یہاں محض ہرجائی تھا وہ داغ کے یہاں ہوس پرست بلکہ رنڈی باز کے روپ میں ظاہر ہوتا ہے۔ اس لیے ابتذال ، عریانی اور فحاشی سبھی کچھ موجود ہے۔ زبان میں صفائی کے ساتھ ساتھ محاورہ بندی کا بھی بہت خیال رکھتے ہیں۔ جو کہ استاد ذوق کا اثر ہے۔زیر نظر کتا ب داغ دہلوی کا منتخب کلام ہے۔ جس کو مسعود الحسن صدیقی نے مرتب کیا ہے۔

.....Read more

About The Author

Dagh Dehlvi

Dagh Dehlvi

 

Nawab Mirza Khan Dagh Dehlavi  (1831-1905), was born and brought up in the red fort of Delhi where his mother was married to prince Mirza Mohammad Sultan, son of Bahadur Shah Zafar. After his father’s death, he had to leave the red fort, and after the fall of Delhi in 1857, he had to move to Rampur where he lived in comfort for more than a decade. Later, his changing conditions, for good or bad, took him to other centres of renown like Lucknow, Patna, Calcutta, and Hyderabad.

As a disciple of Zauq himself, and with a large number of eminent disciples to his own credit, Dagh deliberated upon the aesthetic principles of ghazal as a form of intimate poetic conversation. He charged the common speech and combined the poetic manners of the Lucknow and Delhi schools. In its totality, Dagh’s poetry is idiomatic and appealing, laden with emotions and good humour. He did not take the idea of love to philosophical heights but engaged with the experience of love at a human level, bringing it close to eroticism. Cumulatively, he is playful with language, least Persianised in his diction, witty in turns of phrases, urbane in addressing, and full of gaiety and simplicity in his essential approach to his material. Apart from his four divaans, representing the last hallmarks of classical poetry, he has left behind a bunch of letters and a long narrative poem.

 

.....Read more

More From Author

See More

Popular And Trending Read

See More

EXPLORE BOOKS BY

Book Categories

Books on Poetry

Magazines

Index of Books

Index of Authors

University Urdu Syllabus