रतन नाथ सरशार

क़मर रईस

साहित्य अकादमी, दिल्ली
1983 | अन्य
  • उप शीर्षक

    Hindustani Adab Ke Memar

  • सहयोगी

    ग़ालिब अकेडमी, देहली

  • श्रेणियाँ

    विनिबंध

  • पृष्ठ

    82

पुस्तक: परिचय

परिचय

سرشار متعدد کتابوں کے مصنف ہیں جن میں کوہسار، جام سرشار اور فسانہ آزاد جیسی مشہور کتابیں شامل ہیں۔ جب انگریزی اثرات کے زیر اثر اردو ناول کا خاکہ مرتب ہو رہا تھا تو وہ اردو ناول کا بنیادی تصور عطا کرنے والی شخصیات میں نذیر احمد کے دوش بدوش کھڑے تھے اور اس طرح اردو ادب میں اس عظیم ادبی سلسلہ کی داغ بیل ڈالنے والوں میں سرشار برابر کے شریک رہے۔ ان کے ادبی پرتَو کو سامنے لانے کی غرض سے اردو کے نامور محقق اور ترقی پسند ادیب ڈاکٹر قمر رئیس نے زیر نظر کتاب کی ترتیب دی اور اس میں پانچ اہم موضوعات کو شامل کرکے سرشار کی ادبی زندگی سے قارئین کو باخبر کیا ۔ کتاب کا پہلا عنوان ہے "سرشار کا لکھنو" ۔ اس میں لکھنو کی تہذیب، اس کا زوال اور زوال کے اسباب و عوامل پر سیر طلب بحث ہوئی ہیں۔ دوسرا عنوان " لکھنو کا سرشار" میں ان کی پیدائش اور زندگی کے نشیب و فراز کا تفصیلی تذکرہ ہے اور یہ بتایا گیا ہے کہ عنفوان شباب میں وہ لاابالی کیوں ہوگئے تھے اور اس کے محرکات کیا تھے۔ تیسرا عنوان " سرشار ایک تخلیق کار" ہے ۔ اس میں بتایا گیا ہے کہ انہوں نے قدرت کی ودیعت کردہ تخلیقی صلاحیتوں کو کس طرح اور کہاں استعمال کیا ۔ چوتھا عنوان "سرشار کا شاہکار " ہے۔ اس میں بتایا گیا ہے کہ جب لکھنو کی تہذیب کا شیرازہ بکھر رہا تھا اور اس کی جگہ ایک نئے نظام اور نئی تہذیب کو جگہ دی جا رہی تھی تو سرشار نے ایک فنکار کی حیثیت سے کیا محسوس کیا ۔ ٹائیٹل پیج پر سرشار کی تصویر کو دیکھ کر ان کے لئے ذہن و دل میں ایک کشش پیدا ہوتی ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम