Author : Kaifi Azmi

Publisher : Maktaba Jamia Limited, New Delhi

Year of Publication : 1974

Language : Urdu

Categories : Poetry

Sub Categories : Majmua

Pages : 86

Contributor : Anjuman Taraqqi Urdu (Hind), Delhi

aawara sajde

About The Book

آوارہ سجدے کیفی اعظمی کا تیسرا مجموعہ کلام ہے،جو ۱۹۷۴ء میں شائع ہوا۔کیفی اعظمی نے سماج میں ہونے والی تبدیلیوں کو بڑی شدت سے محسوس کیا اور انہیں اپنے مزاج کے مطابق شعر کے سانچے میں ڈھال دیا۔ یہی وجہ ہے ان کی شاعری میں مارکسی نظریات کے ساتھ ساتھ جدیدیت کی آمیزش نظر آتی ہے۔ سماجی مسائل کے ساتھ ساتھ اس میں تنہائی کا احساس، زندگی کی حقیقتوں اور اس کی پیچیدگیوں کا اظہار آزادنہ طور پر دیکھنے کو ملتا ہے۔ اس مجموعے میں فکر کے ساتھ ان کے فن میں بھی کافی تبدیلی رونما نظر آتی ہے،اندازِ بیان میں ایک طرح کی پختگی اور گھن گرج کے بجائے روانی، سلاست اور موسقیت کا احساس ہوتا ہے۔ باتوں کو سیدھے سادے انداز میں کہنے کے بجائے رمز و کنایہ اور علامتوں کا سہارا لے کر پیش کرتے ہیں ۔ زندگی اور اس کے مسائل کی ترجمانی پہلے سے زیادہ وسیع تر شکل میں دکھائی دیتی ہے۔ اب محض سیاست اور انقلاب ان کے لئے کافی نہیں تھا بلکہ شاعری کے فنی محاسن اور اس کی جمالیات کی طرف ان کی توجہ مرکوز ہوتی ہے، جس سے ان کی شاعری میں انداز بیان کے ساتھ ساتھ پر کاری کا بھی احساس ہوتا ہے۔اس مجموعہ میں "دائرہ"،"ابنِ مریم"،"مکان"،"زندگی"،"دھماکہ"،"سومناتھ"،"بہروپنی"،"دعوت"،"نیاحسن"،"چراغاں"، سانپ"اور"دوسرا بن باس" وغیرہ ایسی نظمیں ہیں جو اس بات کا ثبوت مہیا کرتی ہیں کہ کیفی اعظمی کی شاعری میں بھی شعریت کے اعلیٰ ترین نمونے موجود ہیں ،کیفیاعظمی کے اس آخری مجموعہ کو ان کے فن کی معراج تسلیم کیا جاتا ہے۔ اسی مجموعہ پر انہیں متعدد اعزاز و ایوارڈ بھی ملے اور اسی مجموعے کی بنا پر انہیں ادب میں وہ مقام بھی حاصل ہو ا جس کے وہ حقدار تھے۔

.....Read more

About The Author

Kaifi Azmi was a famous Hindi and Urdu poet and lyricist of Hindi film. He was born on Januray 14, 1919 in a landlord family of Mejwan, Azamgarh, Uttar Pradesh. Azmi abandoned his studies of Persian and Urdu during the Quit India agitations in 1942 and shortly thereafter became a full-time Marxist. During this period, Azmi started to win great acclaim as a poet and became a member of Progressive Writers' Movement of India.

Later he went to Bombay and joined Ali Sardar Jafri in writing for the party’s paper, Qaumi Jung. In 1947, he visited Hyderabad to participate in a mushaira. There he met, fell in love and married a woman named Shaukat Azmi. She later became a renowned actress in theatre and films. Azmi's first collection of poems, Jhankar was published in 1943. As a lyricist and songwriter, though he wrote for numerous films, he will always be remembered for Kaagaz Ke Phool (1959), Haqeeqat (1964), Heer Raanjha (1970).

Azmi died on May 10, 2002. He was the recipient of Padma Shri, one of the Indian Government's highest civilian awards. Besides he was awarded the Uttar Pradesh Urdu Academy Award, Maharashtra Urdu Academy Award, Delhi Urdu Academy Award. He has also been honored with a doctorate from Vishva Bharati University. He died in 2002.

.....Read more

More From Author

Read the author's other books here.

See More

What Others Read

Curious what other readers are upto? Check this list of favorite Urdu books of Rekhta readers.

See More

Popular And Trending Read

Find out most popular and trending Urdu books right here.

See More

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
Speak Now