ہر طرح کے جذبات کا اعلان ہیں آنکھیں

ساحر لدھیانوی

ہر طرح کے جذبات کا اعلان ہیں آنکھیں

ساحر لدھیانوی

MORE BYساحر لدھیانوی

    ہر طرح کے جذبات کا اعلان ہیں آنکھیں

    شبنم کبھی شعلہ کبھی طوفان ہیں آنکھیں

    آنکھوں سے بڑی کوئی ترازو نہیں ہوتی

    تلتا ہے بشر جس میں وہ میزان ہیں آنکھیں

    آنکھیں ہی ملاتی ہیں زمانے میں دلوں کو

    انجان ہیں ہم تم اگر انجان ہیں آنکھیں

    لب کچھ بھی کہیں اس سے حقیقت نہیں کھلتی

    انسان کے سچ جھوٹ کی پہچان ہیں آنکھیں

    آنکھیں نہ جھکیں تیری کسی غیر کے آگے

    دنیا میں بڑی چیز مری جان! ہیں آنکھیں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir Ludhianvi (Pg. 372)
    • Author : SAHIR LUDHIANVI
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY