یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا

مرزا غالب

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    دلچسپ معلومات

    Film: Mirza Ghalib (1954)

    یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا

    اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا

    ترے وعدے پر جیے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا

    کہ خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا

    تری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا

    کبھی تو نہ توڑ سکتا اگر استوار ہوتا

    کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیر نیم کش کو

    یہ خلش کہاں سے ہوتی جو جگر کے پار ہوتا

    یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح

    کوئی چارہ ساز ہوتا کوئی غم گسار ہوتا

    رگ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا

    جسے غم سمجھ رہے ہو یہ اگر شرار ہوتا

    غم اگرچہ جاں گسل ہے پہ کہاں بچیں کہ دل ہے

    غم عشق گر نہ ہوتا غم روزگار ہوتا

    کہوں کس سے میں کہ کیا ہے شب غم بری بلا ہے

    مجھے کیا برا تھا مرنا اگر ایک بار ہوتا

    ہوئے مر کے ہم جو رسوا ہوئے کیوں نہ غرق دریا

    نہ کبھی جنازہ اٹھتا نہ کہیں مزار ہوتا

    اسے کون دیکھ سکتا کہ یگانہ ہے وہ یکتا

    جو دوئی کی بو بھی ہوتی تو کہیں دو چار ہوتا

    یہ مسائل تصوف یہ ترا بیان غالبؔ

    تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ بادہ خوار ہوتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فریحہ پرویز

    فریحہ پرویز

    ثریا

    ثریا

    حبیب ولی محمد

    حبیب ولی محمد

    نامعلوم

    نامعلوم

    چترا سنگھ

    چترا سنگھ

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    امانت علی خان

    امانت علی خان

    بھارتی وشواناتھن

    بھارتی وشواناتھن

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شمس الرحمن فاروقی

    شمس الرحمن فاروقی

    نعمان شوق

    یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا نعمان شوق

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 191)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY