آرزو کو دل ہی دل میں گھٹ کے رہنا آ گیا

آنند نرائن ملا

آرزو کو دل ہی دل میں گھٹ کے رہنا آ گیا

آنند نرائن ملا

MORE BYآنند نرائن ملا

    INTERESTING FACT

    (فروری 1945ء ؁)

    آرزو کو دل ہی دل میں گھٹ کے رہنا آ گیا

    اور وہ یہ سمجھے کہ مجھ کو رنج سہنا آ گیا

    پونچھتا کوئی نہیں اب مجھ سے میرا حال دل

    شاید اپنا حال دل اب مجھ کو کہنا آ گیا

    سب کی سنتا جا رہا ہوں اور کچھ کہتا نہیں

    وہ زباں ہوں اب جسے دانتوں میں رہنا آ گیا

    زندگی سے کیا لڑیں جب کوئی بھی اپنا نہیں

    ہو کے شل دھارے کے رخ پر ہم کو بہنا آ گیا

    لاکھ پردے اضطراب شوق پر ڈالے مگر

    پھر وہ اک مچلا ہوا آنسو برہنا آ گیا

    تجھ کو اپنا ہی لیا آخر نگار عشق نے

    اے عروس چشم لے موتی کا گہنا آ گیا

    پی کے آنسو سی کے لب بیٹھا ہوں یوں اس بزم میں

    در حقیقت جیسے مجھ کو رنج سہنا آ گیا

    ایک نا شکرے چمن کو رنگ و بو دیتا رہا

    آ گیا ہاں آ گیا کانٹوں میں رہنا آ گیا

    لب پہ نغمہ اور رخ پر اک تبسم کی نقاب

    اپنے دل کا درد اب ملاؔ کو کہنا آ گیا

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Anand Narayan Mulla (Pg. 281)
    • Author : Khaliq Anjum
    • مطبع : National Council for Promotion of Urdu Language-NCPUL (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY