آرزوؤں نے اچھل کود مچائی ہوئی ہے

منّان بجنوری

آرزوؤں نے اچھل کود مچائی ہوئی ہے

منّان بجنوری

MORE BYمنّان بجنوری

    آرزوؤں نے اچھل کود مچائی ہوئی ہے

    جب سے تجھ تک مری چاہت کی رسائی ہوئی ہے

    مجھ سے اصرار ہے دل کا کہ بنوں صحرائی

    خاک نادان نے سینے میں اڑائی ہوئی ہے

    دور سے تاپنے والے بھی جھلس سکتے ہیں

    تیری رعنائی نے وہ آگ لگائی ہوئی ہے

    رہ کے سینے میں مرے تیرا طرفدار ہے دل

    ساری پٹی تری آنکھوں کی پڑھائی ہوئی ہے

    خوش نما منظرو اتراؤ نہ اتنا خود پر

    یار نے زلف حسیں رخ پہ گرائی ہوئی ہے

    اہل‌ تخئیل تصور میں جسے چھو نہ سکیں

    میں نے وہ شکل نگاہوں میں بسائی ہوئی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے