اب وہ طوفاں ہے نہ وہ شور ہواؤں جیسا

محسن نقوی

اب وہ طوفاں ہے نہ وہ شور ہواؤں جیسا

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    اب وہ طوفاں ہے نہ وہ شور ہواؤں جیسا

    دل کا عالم ہے ترے بعد خلاؤں جیسا

    کاش دنیا مرے احساس کو واپس کر دے

    خامشی کا وہی انداز صداؤں جیسا

    پاس رہ کر بھی ہمیشہ وہ بہت دور ملا

    اس کا انداز تغافل تھا خداؤں جیسا

    کتنی شدت سے بہاروں کو تھا احساس‌ مآل

    پھول کھل کر بھی رہا زرد خزاؤں جیسا

    کیا قیامت ہے کہ دنیا اسے سردار کہے

    جس کا انداز سخن بھی ہو گداؤں جیسا

    پھر تری یاد کے موسم نے جگائے محشر

    پھر مرے دل میں اٹھا شور ہواؤں جیسا

    بارہا خواب میں پا کر مجھے پیاسا محسنؔ

    اس کی زلفوں نے کیا رقص گھٹاؤں جیسا

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-mohsin (Pg. 122)
    • Author : Mohsin Naqvi
    • مطبع : Mavra Publishers (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY