عجیب شے ہے کہ صورت بدلتی جاتی ہے

عبد الحمید

عجیب شے ہے کہ صورت بدلتی جاتی ہے

عبد الحمید

MORE BYعبد الحمید

    عجیب شے ہے کہ صورت بدلتی جاتی ہے

    یہ شام جیسے مقابر میں ڈھلتی جاتی ہے

    چہار سمت سے تیشہ زنی ہوا کی ہے

    یہ شاخ سبز کہ ہر آن پھلتی جاتی ہے

    پہنچ سکوں گا فصیل بلند تک کیسے

    کہ میرے ہاتھ سے رسی پھسلتی جاتی ہے

    کہیں سے آتی ہی جاتی ہے نیند آنکھوں میں

    کسی کے آنے کی ساعت نکلتی جاتی ہے

    نگہ کو ذائقۂ خاک ملنے والا ہے

    کہ ساحلوں کی طرف ناؤ چلتی جاتی ہے

    RECITATIONS

    عبد الحمید

    عبد الحمید,

    عبد الحمید

    عجیب شے ہے کہ صورت بدلتی جاتی ہے عبد الحمید

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے