بیر دنیا سے قبیلے سے لڑائی لیتے

راحتؔ اندوری

بیر دنیا سے قبیلے سے لڑائی لیتے

راحتؔ اندوری

MORE BY راحتؔ اندوری

    بیر دنیا سے قبیلے سے لڑائی لیتے

    ایک سچ کے لئے کس کس سے برائی لیتے

    آبلے اپنے ہی انگاروں کے تازہ ہیں ابھی

    لوگ کیوں آگ ہتھیلی پہ پرائی لیتے

    برف کی طرح دسمبر کا سفر ہوتا ہے

    ہم اسے ساتھ نہ لیتے تو رضائی لیتے

    کتنا مانوس سا ہمدردوں کا یہ درد رہا

    عشق کچھ روگ نہیں تھا جو دوائی لیتے

    چاند راتوں میں ہمیں ڈستا ہے دن میں سورج

    شرم آتی ہے اندھیروں سے کمائی لیتے

    تم نے جو توڑ دیے خواب ہم ان کے بدلے

    کوئی قیمت کبھی لیتے تو خدائی لیتے

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites