برگشتہ اور وہ بت بے پیر ہو نہ جائے

یگانہ چنگیزی

برگشتہ اور وہ بت بے پیر ہو نہ جائے

یگانہ چنگیزی

MORE BYیگانہ چنگیزی

    دلچسپ معلومات

    (1912ء)

    برگشتہ اور وہ بت بے پیر ہو نہ جائے

    الٹی کہیں دعاؤں کی تاثیر ہو نہ جائے

    دل جل کے خاک ہو تو پھر اکسیر ہو نہ جائے

    جاں سوز ہوں جو نالے تو تاثیر ہو نہ جائے

    کس سادگی سے مجرموں نے سر جھکا لیا

    محجوب کیوں وہ مالک تقدیر ہو نہ جائے

    دست دعا تک اٹھ نہ سکے فرط شرم سے

    یا رب کسی سے ایسی بھی تقصیر ہو نہ جائے

    مستوں کی ٹھوکر اور مرا سر ہے ساقیا

    دشمن کسی کا یوں فلک پیر ہو نہ جائے

    اٹھنے ہی کو ہے بیچ سے پردہ حجاب کا

    محفل تمام عالم تصویر ہو نہ جائے

    غفلت نہ کیجیو کبھی قاتل کی یاد میں

    اے دل کوئی کمی تہ شمشیر ہو نہ جائے

    بیٹھا ہے لو لگائے کوئی تیغ ناز سے

    قاتل کسی کے کام میں تاخیر ہو نہ جائے

    جلدی سبو کو توڑ کے ساغر بنا لے اب

    ساقی اس امر خیر میں تاخیر ہو نہ جائے

    نالوں نے زور باندھا ہے پھر پچھلی رات سے

    اے چرخ چلتے چلتے کوئی تیر ہو نہ جائے

    دل سے بہت شکایتیں کرتے ہو یار کی

    دیکھو قلم سے کچھ کبھی تحریر ہو نہ جائے

    سیر چمن سے دل نہ لگاؤ چلے چلو

    فصل بہار پاؤں کی زنجیر ہو نہ جائے

    انجام کار پر نہیں کچھ اختیار یاسؔ

    تقدیر سے خجل مری تدبیر ہو نہ جائے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Yagana (Pg. 161)
    • Author : Meerza Yagana Changezi Lukhnawi
    • مطبع : Farib Book Depot (P) Ltd. (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے