دم عیسیٰ ید بیضا کے قرینے والے

اختر ضیائی

دم عیسیٰ ید بیضا کے قرینے والے

اختر ضیائی

MORE BYاختر ضیائی

    دم عیسیٰ ید بیضا کے قرینے والے

    اب نہ منصور نہ سقراط سے پینے والے

    وہی کوفی وہی لشکر وہی پیمان وفا

    وہی آثار محرم کے مہینے والے

    دم نکلتا ہے نہ سر جھکتا ہے دیوانوں کا

    جانے کس آس پہ جیتے ہیں یہ جینے والے

    یہ جو ساحل کے مناظر ہیں جو آوازیں ہیں

    جا کے اس پار نہ پائیں گے سفینے والے

    ہم محبت کی علامت ہیں جناب واعظ

    ہم عداوت کے طلب گار نہ کینے والے

    ایک پیغام ہو شاید مری خاموشی بھی

    تجھ کو معلوم نہیں لب مرے سینے والے

    آج کچھ لوگ ہیں صورت گر حالات اخترؔ

    اور کچھ لوگ ہیں ماضی کے دفینے والے

    ان کو تھوڑی سی اخوت بھی عطا ہو جائے

    یہ جو لیتے ہیں ترا نام مدینے والے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY