دھوتا ہوں جب میں پینے کو اس سیم تن کے پاؤں

مرزا غالب

دھوتا ہوں جب میں پینے کو اس سیم تن کے پاؤں

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    دھوتا ہوں جب میں پینے کو اس سیم تن کے پاؤں

    رکھتا ہے ضد سے کھینچ کے باہر لگن کے پاؤں

    دی سادگی سے جان پڑوں کوہ کن کے پاؤں

    ہیہات کیوں نہ ٹوٹ گئے پیرزن کے پاؤں

    بھاگے تھے ہم بہت سو اسی کی سزا ہے یہ

    ہو کر اسیر دابتے ہیں راہزن کے پاؤں

    مرہم کی جستجو میں پھرا ہوں جو دور دور

    تن سے سوا فگار ہیں اس خستہ تن کے پاؤں

    اللہ رے ذوق دشت نوردی کہ بعد مرگ

    ہلتے ہیں خود بہ خود مرے اندر کفن کے پاؤں

    ہے جوش گل بہار میں یاں تک کہ ہر طرف

    اڑتے ہوئے الجھتے ہیں مرغ چمن کے پاؤں

    شب کو کسی کے خواب میں آیا نہ ہو کہیں

    دکھتے ہیں آج اس بت نازک بدن کے پاؤں

    غالبؔ مرے کلام میں کیوں کر مزا نہ ہو

    پیتا ہوں دھوکے خسرو شیریں سخن کے پاؤں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ذوالفقار علی بخاری

    ذوالفقار علی بخاری

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 295)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے