دلوں کے زخم بھرتے کیوں نہیں ہیں

عبید حارث

دلوں کے زخم بھرتے کیوں نہیں ہیں

عبید حارث

MORE BYعبید حارث

    دلوں کے زخم بھرتے کیوں نہیں ہیں

    ہم اس پر غور کرتے کیوں نہیں ہیں

    دغا دے کر نکل جاتی ہے آگے

    خوشی سے لوگ ڈرتے کیوں نہیں ہیں

    تجارت کیوں ادھوری ہے ہماری

    ہمارے ناپ بھرتے کیوں نہیں ہیں

    کسی نے بھی نہ پوچھا دشمنوں سے

    محبت آپ کرتے کیوں نہیں ہیں

    ہماری زندگی ہے موت جیسی

    یہی سچ ہے تو مرتے کیوں نہیں ہیں

    نظر اوروں پہ کیوں رہتی ہے حارثؔ

    ہم اپنا کام کرتے کیوں نہیں ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Atraaf (Pg. 83)
    • Author : Obaid Haris
    • مطبع : National Human For Needful Foundation, Nagpur (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے