غم عاشقی سے کہہ دو رہ عام تک نہ پہنچے

شکیل بدایونی

غم عاشقی سے کہہ دو رہ عام تک نہ پہنچے

شکیل بدایونی

MORE BY شکیل بدایونی

    غم عاشقی سے کہہ دو رہ عام تک نہ پہنچے

    مجھے خوف ہے یہ تہمت ترے نام تک نہ پہنچے

    میں نظر سے پی رہا تھا تو یہ دل نے بد دعا دی

    ترا ہاتھ زندگی بھر کبھی جام تک نہ پہنچے

    وہ نوائے مضمحل کیا نہ ہو جس میں دل کی دھڑکن

    وہ صدائے اہل دل کیا جو عوام تک نہ پہنچے

    مرے طائر نفس کو نہیں باغباں سے رنجش

    ملے گھر میں آب و دانہ تو یہ دام تک نہ پہنچے

    نئی صبح پر نظر ہے مگر آہ یہ بھی ڈر ہے

    یہ سحر بھی رفتہ رفتہ کہیں شام تک نہ پہنچے

    یہ ادائے بے نیازی تجھے بے وفا مبارک

    مگر ایسی بے رخی کیا کہ سلام تک نہ پہنچے

    جو نقاب رخ اٹھا دی تو یہ قید بھی لگا دی

    اٹھے ہر نگاہ لیکن کوئی بام تک نہ پہنچے

    انہیں اپنے دل کی خبریں مرے دل سے مل رہی ہیں

    میں جو ان سے روٹھ جاؤں تو پیام تک نہ پہنچے

    وہی اک خموش نغمہ ہے شکیلؔ جان ہستی

    جو زبان پر نہ آئے جو کلام تک نہ پہنچے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    غم عاشقی سے کہہ دو رہ عام تک نہ پہنچے نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites