خود نوید زندگی لائی قضا میرے لیے

میر انیس

خود نوید زندگی لائی قضا میرے لیے

میر انیس

MORE BYمیر انیس

    خود نوید زندگی لائی قضا میرے لیے

    شمع کشتہ ہوں فنا میں ہے بقا میرے لیے

    زندگی میں تو نہ اک دم خوش کیا ہنس بول کر

    آج کیوں روتے ہیں میرے آشنا میرے لیے

    کنج عزلت میں مثال آسیا ہوں گوشہ گیر

    رزق پہنچاتا ہے گھر بیٹھے خدا میرے لیے

    تو سراپا اجر اے زاہد میں سر تا پا گناہ

    باغ جنت تیری خاطر کربلا میرے لیے

    نام روشن کر کے کیونکر بجھ نہ جاتا مثل شمع

    نا موافق تھی زمانہ کی ہوا میرے لیے

    ہر نفس آئینۂ دل سے یہ آتی ہے صدا

    خاک تو ہو جا تو حاصل ہو جلا میرے لیے

    خاک سے ہے خاک کو الفت تڑپتا ہوں انیسؔ

    کربلا کے واسطے میں کربلا میرے لیے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    خود نوید زندگی لائی قضا میرے لیے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے