کسی کو اپنے عمل کا حساب کیا دیتے

منیر نیازی

کسی کو اپنے عمل کا حساب کیا دیتے

منیر نیازی

MORE BYمنیر نیازی

    کسی کو اپنے عمل کا حساب کیا دیتے

    سوال سارے غلط تھے جواب کیا دیتے

    خراب صدیوں کی بے خوابیاں تھیں آنکھوں میں

    اب ان بے انت خلاؤں میں خواب کیا دیتے

    ہوا کی طرح مسافر تھے دلبروں کے دل

    انہیں بس ایک ہی گھر کا عذاب کیا دیتے

    شراب دل کی طلب تھی شرع کے پہرے میں

    ہم اتنی تنگی میں اس کو شراب کیا دیتے

    منیرؔ دشت شروع سے سراب آسا تھا

    اس آئنے کو تمنا کی آب کیا دیتے

    مآخذ:

    • کتاب : chhe rangi darwaze (Pg. 69)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY