میں تشنہ تھا مجھے سر چشمۂ سراب دیا

زیب غوری

میں تشنہ تھا مجھے سر چشمۂ سراب دیا

زیب غوری

MORE BYزیب غوری

    میں تشنہ تھا مجھے سر چشمۂ سراب دیا

    تھکے بدن کو مرے پتھروں میں داب دیا

    جو دسترس میں نہ تھا میری وہ ملا مجھ کو

    بساط خاک سے باہر جہان خواب دیا

    عجب کرشمہ دکھایا بہ یک قلم اس نے

    ہوا چلائی سمندر کو نقش آب دیا

    میں راکھ ہو گیا دیوار سنگ تکتے ہوئے

    سنا سوال نہ اس نے کوئی جواب دیا

    تہی خزانہ نفس تھا بچا کے کیا رکھتا

    نہ اس نے پوچھا نہ میں نے کبھی حساب دیا

    پھر ایک نقش کا نیرنگ زیبؔ بکھرے گا

    مرے غبار کو پھر اس نے پیچ و تاب دیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    میں تشنہ تھا مجھے سر چشمۂ سراب دیا نعمان شوق

    نعمان شوق

    میں تشنہ تھا مجھے سر چشمۂ سراب دیا نعمان شوق

    نعمان شوق

    میں تشنہ تھا مجھے سر چشمۂ سراب دیا نعمان شوق

    مأخذ :
    • کتاب : Zard Zarkhez (Pg. 18)
    • Author : Zeb Ghauri
    • مطبع : Shab Khoon Kitab ghar, Alahabad (1976)
    • اشاعت : 1976

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے