مسئلہ یہ بھی بہ فیض عشق آساں ہو گیا

رام کرشن مضطر

مسئلہ یہ بھی بہ فیض عشق آساں ہو گیا

رام کرشن مضطر

MORE BYرام کرشن مضطر

    مسئلہ یہ بھی بہ فیض عشق آساں ہو گیا

    زیست کو اندازۂ غم‌ ہائے دوراں ہو گیا

    دل میں جب احساس کا شعلہ فروزاں ہو گیا

    نور افشاں ہر چراغ بزم امکاں ہو گیا

    تیرے لہراتے ہی اے جان طرب روح نشاط

    زندگی رقصاں ہوئی عالم غزل خواں ہو گیا

    اس طرح میری بہار زندگی رخصت ہوئی

    دل اجڑ کر رہ گیا آغوش ویراں ہو گیا

    ہو گئی جب زخمہ زن درد محبت کی خلش

    ہر نفس اک نغمۂ ساز رگ جاں ہو گیا

    انجم افشاں ہو گئی جب میری چشم اشکبار

    درد کی تیرہ فضاؤں میں چراغاں ہو گیا

    جس کے آئینے میں لاکھوں رنگ تھے جلوہ فگن

    خواب سا وہ لمحۂ عیش فراواں ہو گیا

    میں نے ہر بت کی پرستش کی کچھ اس انداز سے

    کفر میرا لائق ارباب ایماں ہو گیا

    آہ مضطر اب وہ جلوے ہیں نہ وہ رعنائیاں

    ہر نظارہ سایۂ عمر گریزاں ہو گیا

    مآخذ
    • Raqs-e-bahar

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY