مولا کسی کو ایسا مقدر نہ دیجیو

جواد شیخ

مولا کسی کو ایسا مقدر نہ دیجیو

جواد شیخ

MORE BYجواد شیخ

    مولا کسی کو ایسا مقدر نہ دیجیو

    دلبر نہیں تو پھر کوئی دیگر نہ دیجیو

    اپنے سوال سہل نہ لگنے لگیں اسے

    آتے بھی ہوں جواب تو فر فر نہ دیجیو

    چادر وہ دیجیو اسے جس پر شکن نہ آئے

    جس پر شکن نہ آئے وہ بستر نہ دیجیو

    آئے نہ کار شکر گزاری پہ کوئی حرف

    جب دیجیو تو ظرف سے بڑھ کر نہ دیجیو

    بکھراؤ کچھ نہیں بھی سمٹتے مرے عزیز

    اپنے کسی خیال کو پیکر نہ دیجیو

    تفریق رہنے دیجیو تعریف و طنز میں

    اب کے شراب زہر ملا کر نہ دیجیو

    یا دل سے ترک کیجیو دستار کا خیال

    یا اس معاملے میں کبھی سر نہ دیجیو

    کہیو کہ تو نے خوب بنائی ہے کائنات

    لیکن اسے لکھائی کے نمبر نہ دیجیو

    معیار سے سوا یہاں رفتار چاہیے

    جوادؔ اس کو آخری اوور نہ دیجیو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY