مرا نہیں تو وہ اپنا ہی کچھ خیال کرے

شہزاد نیر

مرا نہیں تو وہ اپنا ہی کچھ خیال کرے

شہزاد نیر

MORE BYشہزاد نیر

    مرا نہیں تو وہ اپنا ہی کچھ خیال کرے

    اسے کہو کہ تعلق کو پھر بحال کرے

    نگاہ یار نہ ہو تو نکھر نہیں پاتا

    کوئی جمال کی جتنی بھی دیکھ بھال کرے

    ملے تو اتنی رعایت عطا کرے مجھ کو

    مرے جواب کو سن کر کوئی سوال کرے

    کلام کر کہ مرے لفظ کو سہولت ہو

    ترا سکوت مری گفتگو محال کرے

    بلندیوں پہ کہاں تک تجھے تلاش کروں

    ہر ایک سانس پہ عمر رواں زوال کرے

    وہ ہونٹ ہوں کہ تبسم سکوت ہو کہ سخن

    ترا جمال ہر اک رنگ میں کمال کرے

    میں اس کا پھول ہوں نیرؔ سو اس پہ چھوڑ دیا

    وہ گیسوؤں میں سجائے کہ پائمال کرے

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 08.08.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY