aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

روح و بدن کی ناہمواری بڑھتی جاتی ہے

امان عباس

روح و بدن کی ناہمواری بڑھتی جاتی ہے

امان عباس

MORE BYامان عباس

    روح و بدن کی ناہمواری بڑھتی جاتی ہے

    دنیا میں آ کر دشواری بڑھتی جاتی ہے

    وقت سے صرف اتنا ہی ہوتا ہے کہ وقت کے ساتھ

    نسل آدم کی مکاری بڑھتی جاتی ہے

    جھگڑا کم نہیں ہوتا ہے کفر و اسلام کے بیچ

    اللہ اور ابلیس کی یاری بڑھتی جاتی ہے

    جتنا زیادہ بڑھتا ہے باہر تعمیری کام

    اندر اتنی ہی مسماری بڑھتی جاتی ہے

    ختم ہوا جاتا ہے دخل دل سب کاموں سے

    اور دنیا کی حصہ داری بڑھتی جاتی ہے

    بندر سے انسان بنے تھے اب انسان سے کیا

    روزانہ یہ فکر ہماری بڑھتی جاتی ہے

    آدمی ہوتے جاتے ہیں سب پاگل پن کا شکار

    اور مشینوں کی ہشیاری بڑھتی جاتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے