سر محشر یہی پوچھوں گا خدا سے پہلے

آنند نرائن ملا

سر محشر یہی پوچھوں گا خدا سے پہلے

آنند نرائن ملا

MORE BYآنند نرائن ملا

    سر محشر یہی پوچھوں گا خدا سے پہلے

    تو نے روکا بھی تھا بندے کو خطا سے پہلے

    اشک آنکھوں میں ہیں ہونٹوں پہ بکا سے پہلے

    قافلہ غم کا چلا بانگ درا سے پہلے

    ہاں یہی دل جو کسی کا ہے اب آئینۂ حسن

    ورق سادہ تھا الفت کی جلا سے پہلے

    ابتدا ہی سے نہ دے زیست مجھے درس اس کا

    اور بھی باب تو ہیں باب رضا سے پہلے

    میں گرا خاک پہ لیکن کبھی تم نے سوچا

    مجھ پہ کیا بیت گئی لغزش پا سے پہلے

    اشک آتے تو تھے لیکن یہ چمک اور تڑپ

    ان میں کب تھی غم الفت کی جلا سے پہلے

    در مے خانہ سے آتی ہے صدائے ساقی

    آج سیراب کئے جائیں گے پیاسے پہلے

    راز مے نوشی ملاؔ ہوا افشا ورنہ

    سمجھا جاتا تھا ولی لغزش پا سے پہلے

    مآخذ:

    • کتاب : Junoon (Pg. 166)
    • Author : Naseem Muqri
    • مطبع : Naseem Muqri (1990)
    • اشاعت : 1990

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY