اس شعلہ رو سے جب سے مری آنکھ جا لگی

غمگین دہلوی

اس شعلہ رو سے جب سے مری آنکھ جا لگی

غمگین دہلوی

MORE BYغمگین دہلوی

    اس شعلہ رو سے جب سے مری آنکھ جا لگی

    کیا جانے تب سے سینہ میں کیا آگ آ لگی

    کعبہ میں وہ ظہور ہے جو بت کدہ میں ہے

    اے شیخ منصفی سے تو کہیو خدا لگی

    پا تک بھی دسترس نہ ہو مجھ کو یہ رشک ہے

    اور تیرے ہاتھ میں رہے قاتل حنا لگی

    دشنام تم نے مجھ کو جو دی تو میں خوش ہوا

    اور میں نے دی دعا تو تجھے بد دعا لگی

    وہ غنچہ لب جو خندہ زناں ہے چمن میں آج

    شاید گلوں کے کھلنے کی اس کو ہوا لگی

    خوابیدہ بخت نے وہیں بیدار کر دیا

    تیرے خیال میں جو یہ آنکھ اک ذرا لگی

    غمگیںؔ جو ایک آن پہ تیرے ادا ہوا

    کیا خوش ادا اسے تری اے خوش ادا لگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے