آئینہ در آئینہ

حمایت علی شاعر

آئینہ در آئینہ

حمایت علی شاعر

MORE BY حمایت علی شاعر

    اس بار وہ ملا تو عجب اس کا رنگ تھا

    الفاظ میں ترنگ نہ لہجہ دبنگ تھا

    اک سوچ تھی کہ بکھری ہوئی خال و خط میں تھی

    اک درد تھا کہ جس کا شہید انگ انگ تھا

    اک آگ تھی کہ راکھ میں پوشیدہ تھی کہیں

    اک جسم تھا کہ روح سے مصروف جنگ تھا

    میں نے کہا کہ یار تمہیں کیا ہوا ہے یہ

    اس نے کہا کہ عمر رواں کی عطا ہے یہ

    میں نے کہا کہ عمر رواں تو سبھی کی ہے

    اس نے کہا کہ فکر و نظر کی سزا ہے یہ

    میں نے کہا کہ سوچتا رہتا تو میں بھی ہوں

    اس نے کہا کہ آئینہ رکھا ہوا ہے

    دیکھا تو میرا اپنا ہی عکس جلی تھا وہ

    وہ شخص میں تھا اور حمایتؔ علی تھا وہ

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    حمایت علی شاعر

    حمایت علی شاعر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY