آؤ کہ کوئی خواب بنیں

ساحر لدھیانوی

آؤ کہ کوئی خواب بنیں

ساحر لدھیانوی

MORE BYساحر لدھیانوی

    آؤ کہ کوئی خواب بنیں کل کے واسطے

    ورنہ یہ رات آج کے سنگین دور کی

    ڈس لے گی جان و دل کو کچھ ایسے کہ جان و دل

    تا عمر پھر نہ کوئی حسیں خواب بن سکیں

    گو ہم سے بھاگتی رہی یہ تیز گام عمر

    خوابوں کے آسرے پہ کٹی ہے تمام عمر

    زلفوں کے خواب ہونٹوں کے خواب اور بدن کے خواب

    معراج فن کے خواب کمال سخن کے خواب

    تہذیب زندگی کے فروغ وطن کے خواب

    زنداں کے خواب کوچۂ دار و رسن کے خواب

    یہ خواب ہی تو اپنی جوانی کے پاس تھے

    یہ خواب ہی تو اپنے عمل کی اساس تھے

    یہ خواب مر گئے ہیں تو بے رنگ ہے حیات

    یوں ہے کہ جیسے دست تہہ سنگ ہے حیات

    آؤ کہ کوئی خواب بنیں کل کے واسطے

    ورنہ یہ رات آج کے سنگین دور کی

    ڈس لے گی جان و دل کو کچھ ایسے کہ جان و دل

    تا عمر پھر نہ کوئی حسیں خواب بن سکیں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Sahir (Pg. 190)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY