آوارہ سجدے

کیفی اعظمی

آوارہ سجدے

کیفی اعظمی

MORE BYکیفی اعظمی

    INTERESTING FACT

    (کمیونسٹ اکائی کے ٹوٹنے پر ۔۔۔۔ 1962 میں یہ نظم لکھی گئی )

    اک یہی سوز نہاں کل مرا سرمایہ ہے

    دوستو میں کسے یہ سوز نہاں نذر کروں

    کوئی قاتل سر مقتل نظر آتا ہی نہیں

    کس کو دل نذر کروں اور کسے جاں نذر کروں

    تم بھی محبوب مرے، تم بھی ہو دل دار مرے

    آشنا مجھ سے مگر تم بھی نہیں، تم بھی نہیں

    ختم ہے تم پہ مسیحا نفسی، چارہ گری

    محرم درد جگر تم بھی نہیں تم بھی نہیں

    اپنی لاش آپ اٹھانا کوئی آسان نہیں

    دست و بازو مرے ناکارہ ہوئے جاتے ہیں

    جن سے ہر دور میں چمکی ہے تمہاری دہلیز

    آج سجدے وہی آوارہ ہوئے جاتے ہیں

    درد منزل تھی، مگر ایسی بھی کچھ دور نہ تھی

    لے کے پھرتی رہی رستے ہی میں وحشت مجھ کو

    ایک زخم ایسا نہ کھایا کہ بہار آ جاتی

    دار تک لے کے گیا شوق شہادت مجھ کو

    راہ میں ٹوٹ گئے پاؤں تو معلوم ہوا

    جز مرے اور مرا راہنما کوئی نہیں

    ایک کے بعد خدا ایک چلا آتا تھا

    کہہ دیا عقل نے تنگ آ کے خدا کوئی نہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    Urdu Studio

    Urdu Studio

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY